ہوم » نیوز » مشرقی ہندوستان

بہار میں لاک ڈاؤن میں کیا گیا اضافہ، 6 ستمبر تک پوری ریاست میں نافذ رہےگا لاک ڈاؤن

بہار میں 6 ستمبر تک پوری طرح سے لاک ڈاؤن رہے گا۔ دراصل بہار میں کورونا مریضوں کی تعداد ایک لاکھ 6 ہزار چھ سو اٹھارہ (106618) ہوگئی ہے۔ آج ہی دو ہزار پانچ سو پچیس (2525) نئے معاملے سامنے آئے ہیں۔

  • Share this:
بہار میں لاک ڈاؤن میں کیا گیا اضافہ، 6 ستمبر تک پوری ریاست میں نافذ رہےگا لاک ڈاؤن
بہار میں لاک ڈاؤن میں کیا گیا اضافہ، اب 6 ستمبر تک پوری ریاست میں رہےگا لاک ڈاؤن

پٹنہ: بہار میں 6 ستمبر تک پوری طرح سے لاک ڈاؤن رہے گا۔ غورطلب ہےکہ بہار میں کورونا مریضوں کی تعداد ایک لاکھ 6 ہزار چھ سو اٹھارہ (106618) ہوگئی ہے۔ آج ہی دو ہزار پانچ سو پچیس (2525) نئے معاملے سامنے آئے ہیں۔ ہر دن کورونا کے مریضوں کی تعداد میں اضافہ ہو رہا ہے۔ خاص بات یہ ہے کہ کورونا مریضوں میں زبردست اضافہ تب ہے، جب ریاست میں لاک ڈاؤن نافذ کیا گیا ہے۔ باوجود اس کے کورونا مریضوں کی تعداد میں کوئی کمی نہیں آئی ہے بلکہ روزانہ دو سے ڈھائی ہزار مریض مل رہے ہیں۔ ایسے میں کئی میٹنگ کرنے کے بعد محکمہ داخلہ نے ایک بار پھر سے صوبہ میں لاک ڈاؤن کرنے کا اعلان کیا ہے۔


بہار میں کورونا مریضوں کی تعداد ایک لاکھ 6 ہزار چھ سو اٹھارہ (106618) ہوگئی ہے۔ آج ہی دو ہزار پانچ سو پچیس (2525) نئے معاملے سامنے آئے ہیں۔


بہار میں کورونا مریضوں کی تعداد ایک لاکھ 6 ہزار چھ سو اٹھارہ (106618) ہوگئی ہے۔ آج ہی دو ہزار پانچ سو پچیس (2525) نئے معاملے سامنے آئے ہیں۔محکمہ داخلہ کے ایڈیشنل چیف سکریٹری عامر سبحانی کے مطابق اس بار لاک ڈاؤن میں مزید سختی برتی جائےگی۔ 6 ستمبر تک بہار میں عبادت گاہیں پہلے کی طرح بند رہیں گی۔ اسکول اور کالج، ٹرانسپورٹ خدمات، مال اور سینما ہال بند رہیں گے۔ رات 10 بجے سے صبح پانچ بجے تک گھر سے باہر نکلنے پر پابندی نافذ رہے گی۔ لاک ڈاون میں اس بار مزید سختی کی گئی ہے۔ کنٹینمنٹ زون میں مکمل طریقہ سے سختی برتی جائے گی۔




دراصل کورونا کو لے کر لوگوں میں دہشت کا ماحول ضرور ہے، لیکن یہ بھی سچ ہے کہ لوگوں نے سماجی دوری (سوشل ڈیسٹنسنگ) کو پوری طرح سے فالو نہیں کیا ہے، نتیجہ کے طور پر سڑکوں پر، بازاروں میں لوگوں کا ہجوم دکھائی دیتا رہا ہے۔ اب ایسی صورتحال میں لاک ڈاؤن کو سختی سے نافذ نہیں کرایا گیا، تو حالات مزید بے قابو ہوسکتے ہیں۔ دوسری جانب صحت کی خدمات کو لے کر موجودہ حکومت کی جم کر تنقید ہو رہی ہے۔ حکومت بار بار بھروسہ دلا رہی ہے کہ اس مسئلہ کو حل کر لیا جائے گا، لیکن کورونا کے بڑھتے معاملے اور اسپتالوں میں کم ہوتی سہولت لوگوں کو کافی کچھ سوچنے پر مجبور کر رہا ہے۔
Published by: Nisar Ahmad
First published: Aug 17, 2020 07:11 PM IST