اترپردیش میں ہجومی تشدد: بجرنگ دل کے کارکنوں مدرسے کے معصوم طلبا کو بنایا نشانہ- دیکھیں ویڈیو

اتر پردیش کے انّاؤ میں مدرسے کے بچوں کے ساتھ مارپیٹ۔ جے شری رام کے نعرے نہیں لگانے پرہاتھ توڑدیا

Jul 12, 2019 11:02 AM IST | Updated on: Jul 12, 2019 12:34 PM IST
اترپردیش میں ہجومی تشدد: بجرنگ دل کے کارکنوں مدرسے کے معصوم طلبا کو بنایا نشانہ- دیکھیں ویڈیو

اترپردیش میں ہجومی تشدد: بجرنگ دل کے کارکنوں مدرسے کے معصوم طلبا کو بنایا نشانہ

یوپی میں ہجومی تشدد کے واقعات تھمنے کا نام نہیں لے رہے ہیں ۔ ایسا لگتا ہے کہ شرپسند عناصر کو قانون کا کوئی ڈر نہیں ہے ۔ اور کچھ واقعات ایسے بھی پیش آئے جہاں پولیس خاموش تماشائی بنی رہی اور غنڈے قانون کی دھجیاں اڑاتے رہے۔ یوپی کے وزیراعلیٰ اور اُن کے وزراء ریاست میں قانون کا راج بتاتے ہیں لیکن یہاں تو ہجومی تشدد کی جیسے باڑھ آگئی ہے۔تازہ واقعہ انّاؤ پیش آیاہے۔ جہاں ایک مدرسے کے بچوں کو جے شری رام کے نعرے لگانے پر مجبور کیا گیا ۔جب بچوں نے نعرے لگانے سے انکار کیا تو ان کے ساتھ مارپیٹ کی گئی۔بچوں کے کپڑے پھاڑدیے گئے۔اور انکی سائیکلیں توڑ دی گئیں۔

مسجد کے امام کاالزام ہے کہ اس معاملے میں ہندو شدت پسند تنظیم بجرنگ دل کا ہاتھ ہے۔ ملزمین کی پہچان فیس بک اکاؤنٹ کے ذریعے کی گئی ہے۔فیس بک پر بھی ملزموں نے خودکو بجرنگ دل کا رکن بتایا ہے۔ خبر کے مطابق 12۔13 سال کے کچھ بچے گراؤنڈ میں کھیل رہے تھے ۔ تبھی وہاں آئے بجرنگ دل کے کارکنوں نے بچوں سے جے شری رام کے نعرے لگانے کو کہا۔ انکار کرنے پر بچوں کو کرکٹ بیٹ سے پیٹا گیا۔ اس پورے معاملے میں اب پولیس نے ایک مقدمہ درج کرکے جانچ کررہی ہے۔

Loading...

سوال یہ ہے کہ آخر شرپسند عناصر کو کیوں قانون کا ڈر نہیں ہے اور پولیس کیوں تماشائی بنی ہو ئی ہے ۔ہجومی تشدد کے بڑھتے واقعات سے بھی یوپی حکومت کی پیشانی پر شکن نہیں ہے۔اس واقعہ کے انّاؤ کے مقامی مسلمانوں میں برہمی دیکھی جارہی ہے۔ مقامی لوگوں نے مدرسے بچوں کو نشانہ بنانے والے شرپسندوں کے خلاف سخت سے سخت کارروائی کرنے کا مطالبہ کررہے ہیں۔

 

Loading...