ہوم » نیوز » مغربی ہندوستان

مدھیہ پردیش : کانگریس ممبر اسمبلی کا اعلان ، بھوپال سے شروع ہوگی سنودھان بچاؤ تحریک

عارف مسعود نے کہا کہ مردم شماری کو لے کر انہیں کوئی اعتراض نہیں ہے ۔ مردم شماری ہر دس سال میں کی جاتی ہے ، اسے کیا جانا چاہیئے ، لیکن مرکزی حکومت نے مردم شماری کے بہانے اس میں جو چھ نکات الگ سے شامل کئے ہیں ، اس کے تئیں عوام کو بیدار کرنا ضروری ہے۔

  • Share this:
مدھیہ پردیش : کانگریس ممبر اسمبلی کا اعلان ، بھوپال سے شروع ہوگی سنودھان بچاؤ تحریک
مدھیہ پردیش : کانگریس ممبر اسمبلی کا اعلان ، بھوپال سے شروع ہوگی سنودھان بچاؤ تحریک

مدھیہ پردیش میں این پی آر کو لے کر کمل ناتھ حکومت کے ذریعہ جاری گزٹ نوٹیفکیشن پر مچے سیاسی گھمسان کے بعد کمل ناتھ حکومت نے ریاست میں این پی آر نافذ نہیں ہوگا کا اعلان کر کے سیاسی گھمسان کی شدت کو بھلے ہی کم کردیا ہو ، لیکن سماجی تنظیمیں اور خود کانگریس کے ممبران اسمبلی اس کو لے کر عوام کی عدالت میں جانے کا فیصلہ کر چکے ہیں۔ این پی آر کو لے کر کمل ناتھ حکومت کی وضاحت کے بعد کانگریس ایم ایل اے عارف مسعود نے وزیر اعلی کا شکریہ ادا تو کیا ، لیکن این پی آر کو لے کر ملک گیر سطح پر بیداری مہم شروع کرنے کا اعلان بھی کردیا ۔


نیوز 18 اردو سے خاص ملاقات میں عارف مسعود نے کہا کہ مردم شماری کو لے کر انہیں کوئی اعتراض نہیں ہے ۔ مردم شماری ہر دس سال میں کی جاتی ہے ، اسے کیا جانا چاہیئے ، لیکن مرکزی حکومت نے مردم شماری کے بہانے اس میں جو چھ نکات الگ سے شامل کئے ہیں ، اس کے تئیں عوام کو بیدار کرنا ضروری ہے۔


عارف مسعود کے مطابق سی اے اے ، این آرسی اور این پی آر کے بائیکاٹ کو لے کر ملک گیر سطح پر تحریک چلائی جائے گی ۔ یہ تحریک بھوپال سے مارچ کے پہلے ہفتے میں شروع ہوگی اور اس تحریک میں راج رتن امبیڈکر، پرکاش امبیڈکر ، جسٹس کولسے پاٹل ، مولانا ولی رحمانی ، مولانا سجاد نعمانی اور دیگر مذاہب کے رہنما و دانشوران شامل ہوں گے ۔ تحریک کا مقصد ملک گیر سطح پر عوامی بیداری اور سی اے اے ، این آرسی اور این پی آر کا بائیکاٹ ہے۔ کانگریس ایم ایل اے عارف مسعود کی دلیل ہے کہ مرکزی حکومت کے ساتھ ساتھ کچھ صوبائی حکومتیں بھی سی اے اے ، این آرسی اور این پی آر کو لے کر عوام کو گمراہ کر رہی ہیں اور جب تک اس معاملہ میں سبھی قوموں کے لوگوں کو دیہی سطح پر بیدار نہیں کیا جاتا ، اس وقت تک اس کے نقصانات سے ملک کو بچایا نہیں جا سکے گا ۔

First published: Feb 18, 2020 08:38 PM IST