உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Maharashtra political crisis: کیا باغی ممبران اسمبلی کی ختم ہوگی رکنیت؟ شیوسینا کے وکیل نے دی یہ وارننگ

    Maharashtra political crisis: کیا باغی ممبران اسمبلی کی ختم ہوگی رکنیت؟ شیوسینا کے وکیل نے دی یہ وارننگ ۔ تصویر : اے این آئی ۔

    Maharashtra political crisis: کیا باغی ممبران اسمبلی کی ختم ہوگی رکنیت؟ شیوسینا کے وکیل نے دی یہ وارننگ ۔ تصویر : اے این آئی ۔

    Maharashtra political crisis: شیوسینا کے سینئر وکیل دیودت کامت نے خبردار کیا ہے کہ 16 باغی ایم ایل ایز کی رکنیت منسوخ کرنے کے خلاف کارروائی شروع کر دی گئی ہے۔ ایسے میں سب سے بڑا سوال یہی ہے کہ کیا باغی ممبران اسمبلی کی رکنیت حقیقت میں چلی جائے گی ۔

    • Share this:
      ممبئی : مہاراشٹر میں پچھلے ایک ہفتہ سے جاری سیاسی بحران کس کروٹ لے گا، اس کا کچھ پتہ نہیں چل رہا ہے ۔ حالانکہ باغی شیوسینا ممبران اسمبلی کا کیمپ بڑھتا جارہا ہے اور وزیر اعلی ادھو ٹھاکرے کی سیاسی طاقت کمزور ہوتی جارہی ہے ۔ اس درمیان دونوں قانون داو پیچ پر بھی زور آزمائش کررہے ہیں ۔ شیوسینا کے سینئر وکیل دیودت کامت نے خبردار کیا ہے کہ 16 باغی ایم ایل ایز کی رکنیت منسوخ کرنے کے خلاف کارروائی شروع کر دی گئی ہے۔ ایسے میں سب سے بڑا سوال یہی ہے کہ کیا باغی ممبران اسمبلی کی رکنیت حقیقت میں چلی جائے گی ۔

       

      یہ بھی پڑھئے: سپریم کورٹ پہنچا Shiv Sena کا تنازع، ایکناتھ شندے نے ڈپٹی اسپیکر کے اس فیصلہ کو کیا چیلنج


      شیوسینا کے وکیل دیودت کامت نے کہا کہ "آئین میں کہا گیا ہے کہ اگر قانون ساز اسمبلی کا کوئی رکن پارٹی چھوڑ دیتا ہے، تو اس نے اسمبلی کی رکنیت سے نااہلی کی طرف اپنا قدم آگے بڑھا دیا ہے۔" انہوں نے کہا کہ شیو سینا نے 16 باغی ایم ایل ایز کے خلاف کارروائی شروع کر دی ہے۔ انہوں نے کہا کہ باغی ایم ایل ایز نے شیو سینا کی طرف سے بلائی گئی کئی میٹنگوں میں شرکت نہیں کی ہے، جبکہ بی جے پی کی حکومت والی ریاستوں میں وہ بی جے پی کے ساتھ میٹنگیں کر رہے ہیں۔ اتنا ہی نہیں وہ مندروں میں بھی جا رہے ہیں۔ اس کا مطلب ہے کہ ان ایم ایل ایز نے شیوسینا چھوڑ دی ہے۔ ان کے خلاف قوانین کی خلاف ورزی کے کئی معاملات ہیں۔

       

      یہ بھی پڑھئے: سنجے راوت نے کہا : 24 گھنٹے میں اپنا عہدہ گنوادیں گے باغی وزرا


      سینئر وکیل دیودت کامت نے کہا کہ دل بدل قانون سے بچنے کے لئے دو تہائی اکثریت کا اصول اس وقت لاگو ہوتا ہے، جب ممبران خود کو کسی دوسری پارٹی میں ضم کر لیتے ہیں، لیکن باغی ایم ایل ایز نے خود کو دوسری پارٹیوں میں ضم نہیں کیا ہے۔ ابھی تک ایم ایل ایز کسی اور پارٹی میں شامل نہیں ہوئے ہیں ۔ آج تک وہ کسی اور پارٹی میں نہیں گئے۔ انہوں نے اپنی مرضی سے شیوسینا کی رکنیت چھوڑ دی ہے۔ اس لئے ان پر دل بدل قانون لاگو ہوگا۔

      دیودت کامت نے کہا کہ آئین کے تحت اسپیکر کی غیر موجودگی میں ڈپٹی اسپیکر اسمبلی کے اسپیکر کے مکمل اختیارات کا استعمال کرسکتے ہیں ۔ باغی ایم ایل ایز نے ڈپٹی اسپیکر کے خلاف غیر مجاز ای میل کے ذریعہ تحریک عدم اعتماد بھیجی ہے ۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: