مہاراشٹر میں سیاسی ہلچل: شیوسینا سپریم کورٹ میں پیچھے ہٹی

قابل غور ہے کہ شیوسینا نے مہاراشٹر میں حکومت بنانے کے بارے میں فیصلہ کو لے کر کچھ اضافی مہلت نہیں دئیے جانے کے گورنر کے فیصلے کے خلاف کل عدالت کا دروازہ کھٹکھٹایا تھا۔

Nov 13, 2019 12:14 PM IST | Updated on: Nov 13, 2019 12:14 PM IST
مہاراشٹر میں سیاسی ہلچل: شیوسینا سپریم کورٹ میں پیچھے ہٹی

مہاراشٹر میں سیاسی ہلچل: شیوسینا سپریم کورٹ میں پیچھے ہٹی

نئی دہلی۔ مہاراشٹر میں حالیہ سیاسی واقعات کے درمیان شیوسینا نے بدھ کو سپریم کورٹ میں معاملہ کا خاص طور سے ذکر نہیں کیا۔ مہاراشٹر میں حکومت بنانے کے بارے میں فیصلہ کو لے کر کچھ اضافی مہلت نہ دیئے جانے کے گورنر کے فیصلہ کے خلاف شیوسینا کو آج صبح عدالت میں معاملہ پیش کر کے خاص طور سے ذکر کرنا تھا، لیکن ریاست میں صدر راج لگائے جانے کے بعد پارٹی معاملہ کا خاص طور سے ذکر کرنے سے پیچھے ہٹ گئی۔

شیوسینا کے وکیل سنیل فرنانڈیز نے یہاں بتایا کہ کل رات ریاست میں لگائے گئے صدر راج کے پیش نظر یہ فیصلہ کیا گیا ہے۔ قابل غور ہے کہ شیوسینا نے مہاراشٹر میں حکومت بنانے کے بارے میں فیصلہ کو لے کر کچھ اضافی مہلت نہیں دئیے جانے کے گورنر کے فیصلے کے خلاف کل عدالت کا دروازہ کھٹکھٹایا تھا۔ شیوسینا نے معاملہ کی فوری سماعت کی بھی کورٹ سے درخواست کی تھی۔عرضی میں مہاراشٹر حکومت کے علاوہ کانگریس اور نیشنلسٹ کانگریس پارٹی (این سی پی) کو بھی پارٹی بنایا گیا تھا۔

Loading...

شیوسینا نے مانگ کی تھی کہ اسے این سی پی اور کانگریس سے حمایت کا خط لینے کے لئے تین دن کا وقت دیا جائے۔ درخواست میں الزام لگایا ہے کہ گورنر بھگت سنگھ کوشیاری بھارتیہ جنتا پارٹی کے اشاروں پر کام کر رہے ہیں۔ وہیں، این سی پی نے الزام لگایا ہے کہ اسے حکومت بنانے کے لئے ضروری وقت نہیں دیا گیا۔ گورنر نے جہاں بی جے پی کو حمایت حاصل کرنے کے لئے 48 گھنٹے کا وقت دیا، وہیں شیوسینا کو محض 24 گھنٹے ملے۔

Loading...