ہوم » نیوز » مشرقی ہندوستان

اسکولوں کی فیس کو لے کر کلکتہ ہائی کورٹ کا بڑا فیصلہ، غیر سرکاری اسکولوں کے لئے خاص ہدایات

کورونا بحران کے دوران مالی پریشانیوں کے شکار والدین کو کلکتہ ہائی کورٹ نے بڑی راحت پہنچاتے ہوئے ریاست کے غیر سرکاری اسکولوں کو خاص ہدایات جاری کی ہے۔ یہ وہ ہدایات ہیں، جس کے لئے والدین مہینوں سے جدوجہد کر رہے تھے، سڑکوں پر احتجاج کر رہے تھے، حکومت اور اسکولوں سے ان کے مسائل سمجھنے کی اپیل کر رہے تھے۔

  • Share this:
اسکولوں کی فیس کو لے کر کلکتہ ہائی کورٹ کا بڑا فیصلہ، غیر سرکاری اسکولوں کے لئے خاص ہدایات
اسکولوں کی فیس کو لے کر کلکتہ ہائی کورٹ کا بڑا فیصلہ، غیر سرکاری اسکولوں کے لئے خاص ہدایات

کولکاتا: کورونا بحران کے دوران مالی پریشانیوں کے شکار والدین کو کلکتہ ہائی کورٹ نے بڑی راحت پہنچاتے ہوئے ریاست کے غیر سرکاری اسکولوں کو خاص ہدایات جاری کی ہے۔ یہ وہ ہدایات ہیں، جس کے لئے والدین مہینوں سے جدوجہد کر رہے تھے، سڑکوں پر احتجاج کر رہے تھے، حکومت اور اسکولوں سے ان کے مسائل سمجھنے کی اپیل کر رہے تھے۔ کلکتہ ہائی کورٹ نے آج ریاست بھرکے پرائیوٹ اسکولوں کو کورونا بحران کے پیش نظر 2019-2020 کے تعلیمی سال کی فیس میں غیر اکیڈمک فیس نہیں لینے کی ہدایت دی ہے۔ جسٹس سنجیب بنرجی اور جسٹس موسمی بھٹا چاریہ پر مشتمل ڈویژن بنچ نے اس معاملے کی سماعت کرتے ہوئے کورونا بحران کے دوران پرائیوٹ اسکولوں کے معاملات کو دیکھنے کے لئے تین رکنی کمیٹی بھی تشکیل دی ہے۔


ڈویژن بنچ نے کہا کہ ریاست بھرکے پرائیوٹ اسکولوں کے طلباء کو کووڈ-19 کی وباء کی وجہ سے 2019-2020 کے تعلیمی سال کے دوران اسکولوں کی فیس میں 20 فیصد تک کی چھوٹ دی جائے گی۔ چند ہفتے قبل بھی ہزاروں کی تعداد میں والدین نے کولکاتا کے پارک اسٹریٹ میں ایک پرائیوٹ اسکول کے سامنے جمع ہوکر احتجاج کیا تھا۔ والدین کا مطالبہ تھا کہ چونکہ اسکول بند ہیں، آن لائن تعلیم کا سلسلہ بھی دیر سے شروع کیا گیا ہے، اس لئے جن مہینوں میں تعلیم نہیں ہوئی ہے، ان مہینوں اور دیگر سرگرمیوں کی وہ فیس دینا نہیں چاہتے ہیں۔ جبکہ دو ماہ قبل کلکتہ ہائی کورٹ نے اپنے فیصلہ میں 15 اگست تک والدین کو 80 فیصد فیس جمع کرنے کی ہدایت دی تھی۔ ساتھ ہی اس معاملے میں وزیر اعلی ممتا بنرجی نے بھی غیر سرکاری اسکولوں کو والدین کے مسائل سمجھنے اور بہتر اقدامات کی اپیل کی تھی۔


ریاستی وزیر تعلیم پارتھوچٹرجی نے بھی پرائیوٹ اسکولوں سے کہا تھا کہ اسکولوں کی فیس کو جمع کرنےکے معاملہ میں ہمدردی سے کام لیں۔ تاخیر سے فیس جمع کرنے والوں سے اس پر جرمانہ نہ لی جائے۔ محکمہ تعلیم کے سکریٹری منیش جین نے کہا کہ حکومت نے تعلیمی سیشن 2020-2021 کے لئے ٹیوشن فیس سمیت کسی بھی فیس میں اضافہ نہیں کرنے کی ہدایت دی ہے۔ سرکاری حکم نامے میں کہا گیا ہے کہ اسکولوں کے ذریعہ کوئی نئی فیس  نہیں لی جانی چاہئے اور طلبا کو آن لائن کلاسوں سمیت دیگر خدمات سے فراہم کرنا لازمی ہوگا۔ تاہم حکومت کی مداخلت کے باوجود پرائیوٹ اسکولوں میں پڑھنے والے بچوں کے والدین مسلسل احتجاج کر رہے تھے۔ والدین کے ایک گروپ نے اس معاملے میں عدالت سے رجوع کیا تھا۔

Published by: Nisar Ahmad
First published: Oct 13, 2020 10:32 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading