உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Cyber Crime:نوئیڈامیں پہلی مرتبہ سامنے آیا ایسا کرائم، کیس کے بارے میں جان کر پولیس کے اُڑے ہوش

    ایس ایچ او سنگھ نے کہا کہ پولیس واقعہ کی رپورٹ درج کرکے معاملے کی تحقیقات کر رہی ہے۔ یہ نوئیڈا میں اس طرح کا پہلا جرم بتایا جا رہا ہے، جس میں مجرموں نے انگوٹھے کو کلون کرکے اکاؤنٹ سے رقم نکالی ہے۔

    ایس ایچ او سنگھ نے کہا کہ پولیس واقعہ کی رپورٹ درج کرکے معاملے کی تحقیقات کر رہی ہے۔ یہ نوئیڈا میں اس طرح کا پہلا جرم بتایا جا رہا ہے، جس میں مجرموں نے انگوٹھے کو کلون کرکے اکاؤنٹ سے رقم نکالی ہے۔

    ایس ایچ او سنگھ نے کہا کہ پولیس واقعہ کی رپورٹ درج کرکے معاملے کی تحقیقات کر رہی ہے۔ یہ نوئیڈا میں اس طرح کا پہلا جرم بتایا جا رہا ہے، جس میں مجرموں نے انگوٹھے کو کلون کرکے اکاؤنٹ سے رقم نکالی ہے۔

    • Share this:
      نوئیڈا: نوئیڈا پولس(Noida Police) کے سامنے ایسا معاملہ آیا کہ پولیس کو بھی یہ جان کر چکرا گئے۔ پولیس کے مطابق سیکٹر 11 میں رہنے والی خاتون کے انگوٹھے کا کلون (Clone of Woman Thumb in Noida)بنا کر بدمعاشوں نے بینک کسٹمر سروس سینٹر(Bank Grahak Seva Kendra) کے ذریعے خاتون کا اکاؤنٹ ( Empty Account) کھول کر 30 ہزار روپے نکال لیے۔ ایک پولیس افسر نے یہ اطلاع دی۔ انہوں نے بتایا کہ پولیس واقعہ کی رپورٹ درج کرکے معاملے کی تحقیقات کررہی ہے۔

      یہ بھی پڑھیں:
      بیوی دس سال سے شوہر سے جسمانی تعلقات بنانے سے کررہی تھی انکار، اب HC نے سنایا یہ بڑا فیصلہ

      پولیس اسٹیشن سیکٹر 24 کے انچارج انسپکٹر گیان سنگھ نے بتایا کہ سیکٹر 11 میں رہنے والے راجیش سنہا نے رپورٹ درج کرائی ہے کہ ان کی بیوی مادھوری سنہا نے بینک کسٹمر سروس سینٹر کے ذریعے ایک اکاؤنٹ کھولا تھا۔ انہوں نے بتایا کہ متاثرہ کا الزام ہے کہ 1 سے 3 مارچ کے درمیان نامعلوم بدمعاشوں نے اس کی بیوی کے انگوٹھے کے نشان کو کلون کیا اور کسٹمر سروس سینٹر کے ذریعے تین بار میں 30 ہزار روپے لے گئے۔

      یہ بھی پڑھیں:
      تھانے: سیکس ریکٹ کے چنگل سے 2 خواتین چھڑائی گئیں، ملزم گرفتار

      نوئیڈا میں اپنی طرح کا پہلا کرائم
      ایس ایچ او سنگھ نے کہا کہ پولیس واقعہ کی رپورٹ درج کرکے معاملے کی تحقیقات کر رہی ہے۔ یہ نوئیڈا میں اس طرح کا پہلا جرم بتایا جا رہا ہے، جس میں مجرموں نے انگوٹھے کو کلون کرکے اکاؤنٹ سے رقم نکالی ہے۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: