உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کووینCoWINپورٹل کے ذریعہ والدین کو اپنے گمشدہ لڑکے کاپتہ مل گیا، والدین کی خوشی کی انتہا نہ رہی!

    CoWIN پورٹل

    CoWIN پورٹل

    اگر لتیش نے کووڈ ویکسین لی تھی تو CoWIN پورٹل کے ذریعے اس کا پتہ لگایا جا سکتا ہے۔ لتیش کے آدھار کارڈ کی کاپی کے ساتھ سشیل اور وسنت ڈنڈولی میں ایک ویکسین سنٹر گئے۔ یوں انھیں اپنے گمشدہ لڑکے کی رہائش کا پتہ چل گیا۔

    • Share this:
      ہندوستان میں ویکسین کے آن لائن اندراج سے متعلق پورٹل کووین CoWIN کے ذریعے ایک خاندان کو اپنے بیٹے کا پتہ لگانے میں مدد ملی ہے جو 2018 میں لاپتہ ہو گیا تھا۔ سورت سے لاپتہ ہونے والا 23 سالہ شخص بنگلورو میں واقع تھا۔ اس کا پتہ یو چلا کہ اس شخص نے جب ویکسینیشن سینٹر کا اندراج کرایا تو اس کی رہائش کے بارے میں بھی معلومات حاصل ہوئی، جہاں اس نے کووڈ ویکسین لی تھی۔

      اس کے والدین وسنت پٹیل Vasant Patel اور انیتا پٹیل Anita Patel کے مطابق ان کا بیٹا لتیش پٹیل Latesh Patel اُس وقت ناسک کے ایک نجی انجینئرنگ کالج کا 20 سالہ طالب علم تھا، جون 2018 میں اپنے پہلے سال کے امتحانات کے بعد گھر آیا تھا۔ تاہم کچھ دنوں بعد جب اس کے امتحان کا نتیجہ آیا تو اسے معلوم ہوا کہ وہ فیل ہو گیا ہے اور اس خوف سے گھر سے بھاگ گیا ہے کہ شاید اس کی سرزنش نہ ہو جائے۔

      کووین پورٹل (CoWIN Portal)
      کووین پورٹل (CoWIN Portal)


      امتحان میں ناکامی کا خوف

      وسنت سورت کے پانڈیسرا میں ایک کیمیکل فیکٹری میں سپروائزر کے طور پر کام کرتے ہیں۔ انھوں نے انڈین ایکسپریس کو بتایا کہ آن لائن نتائج کی جانچ پڑتال کے بعد پتہ چلا کہ وہ فیل ہو گئے، لتیش نے اسے بتایا کہ وہ مہاراشٹر کے نندربار میں اپنے چچا آشیش پٹیل کے گھر جا رہا ہے۔

      اگلے دن وسنت نے اپنے چھوٹے بھائی آشیش کو فون کیا اور پتہ چلا کہ لتیش وہاں نہیں پہنچا تھا اور اس کا موبائل بند تھا۔ اس کے بعد وسنت نے سورت کے پوناگام پولیس اسٹیشن میں واقعہ کی اطلاع دی۔ وسنت نے کہا کہ ’’ہم نے اس کے انجینئرنگ کالج کے دوستوں سے رابطہ کرتے ہوئے اور سوشل میڈیا اکاؤنٹس پر بھی اسے ہر جگہ تلاش کیا، لیکن ہم اسے نہیں مل سکے‘‘۔

      ویکسین سنٹر بنا مددگار

      حال ہی میں ایک خاندانی دوست اور ایک فوٹوگرافر سشیل بھوشن کو اطلاع ملی کہ اگر لتیش نے کووڈ ویکسین لی تھی تو CoWIN پورٹل کے ذریعے اس کا پتہ لگایا جا سکتا ہے۔ لتیش کے آدھار کارڈ کی کاپی کے ساتھ سشیل اور وسنت ڈنڈولی میں ایک ویکسین سنٹر گئے۔ یوں انھیں اپنے گمشدہ لڑکے کی رہائش کا پتہ چل گیا۔

      ہندوستان میں ویکسین کے آن لائن اندراج سے متعلق پورٹل کووین CoWIN سرگرم ہے۔
      ہندوستان میں ویکسین کے آن لائن اندراج سے متعلق پورٹل کووین CoWIN سرگرم ہے۔


      ویکسین سنٹر کے عملے کی مدد سے انہوں نے پایا کہ لتیش نے دو ماہ قبل بنگلورو کے علاقے ننمنگلم میں ایک سرکاری ویکسینیشن سنٹر سے ویکسین کی پہلی خوراک لی تھی۔

      وسنت نے مزید کہا کہ ’’ہم نے سرکاری ویکسینیشن سینٹر کا مقامی لینڈ لائن نمبر حاصل کیا اور اہلکار سے بات کی۔ جب ہم نے اپنے لاپتہ بیٹے کی کہانی شیئر کی، تو انہوں نے اس کا موجودہ موبائل نمبر شیئر کیا، جو ایکٹیو تھا۔ انہیں ڈر تھا کہ اگر لتیش یا اس کی بیوی انیتا نے اسے فون کیا تو وہ اپنا نمبر بدل دے گا‘‘۔

      لتیش کو فون کرنے کی کوشش کیے بغیر یہ جوڑا بنگلورو چلا گیا اور پیر کی صبح ننمنگلم میں ویکسینیشن سنٹر پہنچا جب انہیں معلوم ہوا کہ لتیش نے 21 اکتوبر کو اپنی ویکسین کی دوسری خوراک لی ہے۔

      وسنت نے کہا کہ ’’ہم نے لیٹش کے لیے چار دن کی چھٹی کی درخواست کی اور سورت واپس آ رہے ہیں۔ یہ فیصلہ کرنا اس پر منحصر ہے کہ آیا وہ ہمارے ساتھ رہنا چاہتا ہے یا بنگلورو واپس جانا چاہتا ہے۔ ہم نے اسے بتایا کہ اگر وہ امتحانات میں ناکام ہو جائے تو بھی پریشان ہونے کی کوئی بات نہیں۔ میرا ایک اور بیٹا دھننجے ہے جو 12ویں جماعت میں ہے‘‘۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: