உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    منی پور: کرنل پر منصوبہ بند تھا دہشت گردانہ حملہ، 15 دہشت گردوں نے بنایا تھا نشانہ

    منی پور: کرنل پر منصوبہ بند تھا دہشت گردانہ حملہ، 15 دہشت گردوں نے بنایا تھا نشانہ

    منی پور: کرنل پر منصوبہ بند تھا دہشت گردانہ حملہ، 15 دہشت گردوں نے بنایا تھا نشانہ

    Manipur Attack: ذرائع نے کہا ہے کہ دہشت گردوں نے اس حملے کی پوری سازش پہلے ہی رچی گئی تھی۔ ان کا کہنا تھا کہ یہ یقین کرنا مشکل ہے کہ دو ممنوعہ شدت پسند تنظیموں پیپلز لبریشن آرمی (پی ایل اے) اور منی پور ناگا پیپلز فرنٹ (ایم این پی ایف) کو قافلے میں کرنل وپلو ترپاٹھی کے بیٹے اور ان کی اہلیہ کے موجود ہونے کی بات نہیں معلوم تھی۔

    • Share this:
      امفال: منی پور (Manipur) میں آسام رائفلس (Assam Rifles) کے کمانڈنگ آفیسر ولپ ترپاٹھی (Viplav Tripathi) کے قافلے پر ہوا دہشت گردانہ حملہ (Terrorist Attack) پوری طرح سے منصوبہ بند تھا۔ ذرائع نے کہا ہے کہ دہشت گردوں نے اس حملے کی پوری سازش پہلے ہی رچی گئی تھی۔ ان کا کہنا تھا کہ یہ یقین کرنا مشکل ہے کہ دو ممنوعہ شدت پسند تنظیموں پیپلز لبریشن آرمی (پی ایل اے) اور منی پور ناگا پیپلز فرنٹ (ایم این پی ایف) کو قافلے میں کرنل وپلو ترپاٹھی کے بیٹے اور ان کی اہلیہ کے موجود ہونے کی بات نہیں معلوم تھی۔

      ذرائع نے مزید کہا کہ حملے میں بھاری ہتھیاروں سے لیس 15 دہشت گرد شامل تھے اور انہوں نے تین آئی ای ڈی دھماکہ کئے، جس کے بعد دونوں طرف سے بھاری گولہ باری ہوئی۔ ذرائع نے پہلے کہا تھا کہ ہندوستانی فوج میانمار سرحد پر سخت نظر رکھ رہی ہے، تاکہ یہ یقینی بنایا جاسکے کہ حملے میں شامل دہشت گرد کہیں بھاگ نہ جائیں۔

      وپلو ترپاٹھی تھے کمانڈنگ آفیسر 

      آسام رائفلس کی کھگا بٹالین کے کمانڈنگ آفیسر وپلو ترپاٹھی کرنل رینک کے افسر تھے۔ ان کی اہلیہ، 6 سال کے بیٹے کے علاوہ نیم فوجی دستوں کے چار جوانوں کی ہفتہ کی صبح ایک حملے میں موت ہوگئی تھی۔ پی ایل اے اور ایم این پی ایف نے شمال مشرقی ریاست کے چراچاند پور ضلع کے سیہکن گاوں میں گھات لگاکر کئے گئے حملے کی ذمہ داری لی ہے۔

      منی پور حملے کی وزیر اعظم مودی نے کی مذمت

      منی پور میں ہوئے اس حملے کی وزیر اعظم نریندر مودی نے مذمت کی تھی۔ انہوں نے کہا تھا، ’میں ان فوجی اور فیملی کے اراکین کو خراج عقیدت پیش کرتا ہوں جو آج شہید ہوئے ہیں۔ ان کی قربانی کو کبھی بھلایا نہیں جاسکے گا۔ دکھ کی اس گھڑی میں میری ہمدردی اور تعزیت متاثرہ فیملی کے ساتھ ہیں۔

      راجناتھ سنگھ نے رنج وغم کا اظہار کیا

      وزیر دفاع راجناتھ سنگھ نے بھی اس حادثہ پر رنج وغم کا اظہار کیا ہے۔ ساتھ ہی انہوں نے انصاف کا وعدہ بھی کیا تھا۔ انہوں نے کہا تھا، ’منی پور میں آسام رائفلس کے قافلے پر کائرانہ حملہ بے حد دردناک اور قابل مذمت ہے۔ ملک نے سی او 46 اے آر اور فیملی کے دو اراکین سمیت پانچ بہادر فوجیوں کو کھو دیا ہے۔ متاثرہ فیملی کے تئیں اظہار تعزیت ہے۔ قصورواروں کو جلد ہی سزا دلوائی جائے گی۔

      یہ بھی پڑھیں۔

      Manipur Terrorist Attack: پہلے آئی ای ڈی بلاسٹ پھر چلائیں تابڑ توڑ گولیاں، کچھ اس طرح ہوا منی پور میں دہشت گردانہ حملہ


      وزیراعلیٰ نے کہا- بڑی سطح پر شروع ہوئی تلاشی مہم

      منی پور  کے وزیر اعلیٰ این بیرین سنگھ نے کہا کہ پورے علاقے میں بڑی سطح پر تلاشی مہم شروع کردیا گیا ہے۔ انہوں نے نیوز 18 کو بتایا کہ حملہ آور میانمار سے سرحد پار سے آئے تھے۔ ہم اس حملے کا جواب دیں گے۔ مرکز کے ساتھ رابطہ قائم کیا گیا ہے۔

       

       
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: