ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

منیش سسودیا کا الزام ، دہلی آنے والے آکسیجن کے ٹینکروں کو روک رہی ہے یوپی اور ہریانہ پولیس

مرکزی حکومت سے اپیل کرتے ہوئے منیش سسودیا نے کہا کہ دہلی میں ہریانہ اور اترپردیش سے آنے والے آکسیجن کی سپلائی کے لیے ضرورت ہونے پر نیم فوجی دستوں کو تعینات کیا جائے۔ آکسیجن سپلائی کے سلسلے جو جنگل راج چل رہا ہے، اسے ختم کیا جائے ورنہ حالات بہت زیادہ خراب ہوتے چلے جائیں گے۔

  • UNI
  • Last Updated: Apr 22, 2021 09:57 PM IST
  • Share this:
منیش سسودیا کا الزام ، دہلی آنے والے آکسیجن کے ٹینکروں کو روک رہی ہے یوپی اور ہریانہ پولیس
منیش سسودیا کا الزام ، دہلی آنے والے آکسیجن کے ٹینکروں کو روک رہی ہے یوپی اور ہریانہ پولیس

نئی دہلی: دہلی کے نائب وزیراعلیٰ منیش سسودیا نے کہا کہ دارالحکومت کے اسپتالوں میں آکسیجن کی بہت زیادہ کمی ہے اور حالات اتنے خراب ہیں کہ کچھ اسپتالوں میں کچھ گھنٹے کے لیے ہی آکسیجن دستیاب ہے اور زیادہ تر اسپتالوں میں صرف سات-آٹھ گھنٹے کے لیے آکسیجن باقی ہے۔ مسٹر سسودیا نے جمعرات کو پریس کانفرنس میں کہا کہ مرکزی حکومت سے دہلی میں آکسیجن کی بہ ضابطہ سپلائی پر توجہ دینے اور دیگر ریاستوں کی جانب سے دہلی کی آکسیجن سپلائی میں مخل ہونے کو روکنے پر مناسب اقدام کرنے کا مطالبہ کیا۔


مرکزی حکومت سے اپیل کرتے ہوئے کہا کہ دہلی میں ہریانہ اور اترپردیش سے آنے والے آکسیجن کی سپلائی کے لیے ضرورت ہونے پر نیم فوجی دستوں کو تعینات کیا جائے۔ آکسیجن سپلائی کے سلسلے جو جنگل راج چل رہا ہے، اسے ختم کیا جائے ورنہ حالات بہت زیادہ خراب ہوتے چلے جائیں گے۔


نائب وزیراعلیٰ نے کہا کہ کل مرکزی حکومت نے دہلی کے ساتھ ساتھ باقی ریاستوں کے آکسیجن کوٹے میں بھی اضافہ کیا ہے۔ لیکن اس کے باوجود ، وہاں کے حکام ہریانہ اور اتر پردیش کے پلانٹس میں دہلی کی آکسیجن سپلائی روکنے کے لیے کوشاں ہیں۔ انہوں نے کہا کہ کل پانی پت میں ہریانہ حکومت کے کچھ عہدیداروں نے دہلی کے حصے کا آکسیجن روک دیا تھا جو رات کے تین بجے تک نہیں بھیجا جاسکا تھا۔


انہوں نے کہا کہ دہلی کو 378 میٹرک ٹن آکسیجن میں سے صرف 177 میٹرک ٹن آکسیجن ملا کیونکہ دہلی کے آکسیجن ٹینکروں کو پولیس کی مدد سے ہریانہ اور اتر پردیش حکام نے روک لیا۔ انہوں نے کہا کہ دہلی کے اسپتالوں میں آکسیجن کی شدید قلت ہے۔ انہوں نے کہا کہ صورتحال اتنی خراب ہے کہ کچھ اسپتالوں میں اگلے دو سے تین گھنٹوں تک آکسیجن مل جاتی ہے اور بیشتر اسپتالوں میں صرف سات سے آٹھ گھنٹے آکسیجن باقی رہتا ہے۔

انہوں نے مرکزی حکومت سے اپیل کرتے ہوئے کہا کہ مرکزی حکومت نے کل جس دریا دلی کے ساتھ دہلی کے لیے آکسیجن کوٹہ میں اضافہ کیا ہے۔ مرکزی حکومت کو اب اس کی فراہمی کو یقینی بنانے کے لیے سخت اقدامات کرنے چاہئیں کیونکہ اگر ایسا نہ ہوا تو لوگوں کو بچانا مشکل ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ اس بحران کے وقت ریاستوں کو آپس میں لڑنے کی بجائے اس وبا کے ساتھ مل کر لڑنا ہوگا ، لہذا آکسیجن کے ساتھ اس ٹکراو کو ختم کرنا چاہئے۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Apr 22, 2021 09:57 PM IST