ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

وزیر اعظم مودی کا اپوزیشن پر نشانہ ، کہا : مخالفت کرنے کیلئے بہت سارے ایشوز، مگر ملک کا حوصلہ پست نہ کریں

وزیر اعظم مودی نے اپوزیشن پر نشانہ سادھتے ہوئے کہا کہ مخالفت کرنے کیلئے بہت سارے ایشوز ہیں ، مخالفت کرنی بھی چاہئے، لیکن ایسی باتوں میں نہیں الجھنا چاہئے جس سے ملک کا حوصلہ پست ہوتا ہو ۔ اس سے کسی کو فائدہ نہیں ہوگا ۔

  • Share this:
وزیر اعظم مودی کا اپوزیشن پر نشانہ ، کہا : مخالفت کرنے کیلئے بہت سارے ایشوز، مگر ملک کا حوصلہ پست نہ کریں
وزیر اعظم مودی کا اپوزیشن پر نشانہ ، کہا : مخالفت کرنے کیلئے بہت سارے ایشوز، مگر ملک کا حوصلہ پست نہ کریں

راجیہ سبھا میں موشن آف تھینکس پر جواب کے وران وزیر اعظم مودی نے کہا کہ میں صدر جمہوریہ کا تہہ دل سے شکریہ ادا کرنے کیلئے آپ کے درمیان کھڑا ہوں ۔ اراکین نے اپنے بیش قیمتی خیالات پیش کئے ہیں ، میں ان کا شکریہ ادا کرتا ہوں ۔ اچھا ہوتا کہ صدر جمہوریہ کا خطاب سننے کیلئے سب ہوتے تو جمہوریت کا وقار بڑھ جاتا ۔ انہوں نے کہا کہ راجیہ سبھا میں تقریبا تیرہ چودہ گھنٹوں تک 50 سے زیادہ اراکین نے اپنے خیالات ظاہر کئے ، اس لئے میں سبھی اراکین کا شکریہ ادا کرتا ہوں ۔


وزیر اعظم نے کہا کہ پوری دنیا سخت چیلنجز سے جوجھ رہی ہے ۔ شاید ہی کسی نے سوچا ہوگا کہ انسانیت کو ایسے مشکل دور سے گزرنا ہوگا ۔ ایسے مشکل چیلنجز کے درمیان اس دہائی کے آغاز میں صدر جمہوریہ کا خطاب اپنے آپ میں نئی امید ، امنگ اور خود اعتمادی پیدا کرنے والا ہے ۔


وزیر اعظم مودی نے کہا کہ ملک اب آزادی کے 75 ویں سال میں داخل ہورہا ہے ۔ ایسے میں ہر کسی کی توجہ ملک کی جانب کچھ کرنے کیلئے ہونی چاہئے ۔ وزیر اعظم مودی نے کہا کہ بحران کے وقت میں دنیا کی نظر ہندوستان پر ٹکی ہوئی ہے ۔ وزیر اعظم مودی نے اس دوران میتھلی شرن گپت کی کویتا 'اوسر تیرے لئے کھڑا ہے ، پھر بھی تو چپ چاپ پڑا ہے' بھی ایوان میں پڑھی ۔


وزیر اعظم مودی نے اپوزیشن پر نشانہ سادھتے ہوئے کہا کہ مخالفت کرنے کیلئے بہت سارے ایشوز ہیں ، مخالفت کرنی بھی چاہئے، لیکن ایسی باتوں میں نہیں الجھنا چاہئے جس سے ملک کا حوصلہ پست ہوتا ہو ۔ اس سے کسی کو فائدہ نہیں ہوگا ۔

وزیر اعظم مودی نے کہا کہ اس ایوان میں جمہوریت کو لے کر کئی باتیں کہی گئیں ۔ ہندوستان کی جمہوریت ایسی نہیں ہے کہ جس کی اس طرح کھال ادھیڑی جاسکے ۔ وزیر اعظم مودی نے اپنے خطاب کے دوران ٹی ایم سی کے رکن ڈیریک او براین پر بڑا حملہ کرتے ہوئے کہا کہ جن الفاظ کا وہ استعمال کررہے ہیں اس کو سننے کے بعد ایسا لگا کہ وہ بنگال کی بات کررہے ہیں یا ملک کی ۔

وزیر اعظم مودی نے زرعی قوانین کو لے کر کہا کہ کھیتی کی بنیادی ضرورت کیا ہے ۔ انہوں نے چودھری چرن سنگھ کی بات بتاتے ہوئے کہا کہ 33 فیصدی کسان ایسے ہیں جن کے پاس زمین دو بیگھے سے کم ہے ، 18 فیصدی جو کسان کہلاتے ہیں ان کے پاس دو سے چار بیگھے زمین ہے ۔ یہ کتنی بھی محنت کرلیں ، اپنی زمین پر ان کا گزر نہیں ہوسکتا ہے ۔ موجودہ وقت میں جن کے پاس ایک ہیکٹیئر سے کم زمین ہے وہ 68 فیصدی کسان ہیں ۔ 86 فیصدی کسانوں کے پاس دو ہیکٹیئر سے بھی کم زمین ہے ۔ ہمارا فرض ہے کہ ہم ایسے کسانوں کے بارے میں سوچیں ۔

وزیر اعظم مودی نے کہا کہ ایوان میں صرف کسان آندولن پر گفتگو ہورہی ہے ۔ چھوٹے کسانوں کو سینچائی کی سہولیات تک نہیں ہے ۔ وزیر اعظم مودی نے کہا کہ سرکار نے 10 کروڑ کسانوں کے کھاتے میں پیسے ڈالے ۔ وزیر اعظم مودی نے کہا کہ سرکار غریبوں کیلئے وقف ہے ۔ وزیر اعظم مودی نے کہا کہ چھوٹے کسانوں کی پریشانیوں کو بھی دیکھنے کی ضرورت ہے ۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Feb 08, 2021 12:27 PM IST