حرم شریف کے حادثہ میں آندھرا پردیش کے دو عازمین کا انتقال

حیدرآباد۔ آندھراپردیش کے ضلع کرشنا کے مچھلی پٹنم سے تعلق رکھنے والے دو عازمین حج محمد عبدالقادر اور ان کی اہلیہ محترمہ فاطمہ بیگم جمعہ کے دن حرم شریف میں پیش آئے حادثہ میں جاں بحق ہوگئے۔

Sep 13, 2015 10:46 PM IST | Updated on: Sep 13, 2015 10:46 PM IST
حرم شریف کے حادثہ میں آندھرا پردیش کے دو عازمین کا انتقال

حیدرآباد۔ آندھراپردیش کے ضلع کرشنا کے مچھلی پٹنم سے تعلق رکھنے والے دو عازمین حج محمد عبدالقادر اور ان کی اہلیہ محترمہ فاطمہ بیگم جمعہ کے دن حرم شریف میں پیش آئے حادثہ میں جاں بحق ہوگئے۔

اسپیشل افسرتلنگانہ اسٹیٹ حج کمیٹی پروفیسر ایس اے شکور نے یہ اعلان کرتے ہوئے بتایا کہ انہوں نے قونصل جنرل جدہ بی ایس مبارک اور چیف ایکزیکٹیو افسر مرکزی حج کمیٹی عطا ائرحمٰن سے بات کی جس پر قونصل جنرل جدہ نے ان کی موت کی توثیق کی اور بتایاکہ ان کے ایک رشتہ دار عبدالمقیت بھی مکہ میں تھے۔ ان کو بلوا کر لاشوں کی شناخت کروالی گئی۔اس واقعہ سے انہو ں نے تلنگانہ کے نائب وزیراعلی محمد محمود علی‘ وزیر اقلیتی بہبود آندھرا پردیش پلے رگھوناتھ ریڈی کے علاوہ آندھرا پردیش کے سکریٹری محکمہ اقلیتی بہبود شیخ محمد اقبال اور سکریٹری محکمہ اقلیتی بہبود حکومت تلنگانہ سید عمر جلیل کو  واقف کروادیا  ۔

یہ دونوں عازمین کور نمبر اے پی ایف   478-4- 0کے تحت اپنے دیگر دو خاتون رشتہ داروں کے ہمراہ 6ستمبر کو حیدرآباد سے مکہ معظمہ کے لئے روانہ ہوئے تھے۔ جمعہ کی شام یہ دونوں اپنے دیگر رشتہ داروں کو روم میں چھوڑ کر عمرہ کی نیت سے حرم شریف پہنچے اور طواف کے بعد سعی کے لئے گئے تھے کہ یہ المناک حادثہ پیش آیا اور اس میں دونوں جاں بحق ہوگئے۔

قبل ازیں ان دونوں کی گمشدگی کی اطلاع درج کروائی گئی تھی اور انکی تلاش جاری تھی کہ ان کے انتقال کی اطلاع ملی۔ پروفیسر ایس اے شکور نے مچھلی پٹنم میں ان کے رشتہ داروں سے بات کرتے ہوئے ان سے اظہار تعزیت کیا اور مرحومین کی مغفرت اور ان کو جنت میں اعلیٰ درجات عطا کر نے کی اللہ سے دعا کی ہے۔بتایا گیا ہے کہ ان کے دو کمسن بچے چھہ سال اور تین سال کے ہیں اور وہ ان بچوں کو اپنے رشتہ داروں کے پاس چھوڑ کر فریضہ حج کے لیے گئے تھے۔ جس وقت حرم شریف میں یہ المناک حادثہ پیش آیا اس وقت وہ اسی علاقہ میں تھے اور ان کو شدید زخمی حالت میں اسپتال منتقل کیا گیا۔ آج صبح ان کی لاشوں کی شناخت ہوئی ۔

Loading...

مکہ مکرمہ میں حرم شریف میں پیش آئے کرین حادثہ میں ہندوستان کے جاں بحق ہونے والے عازمین کی تعداد 4تک پہنچ گئی ہے۔ ریاستی حج کمیٹی کے اسپیشل افسر پروفیسر ایس اے شکور ان عازمین کی تلاش کے سلسلہ میں قونصل حج جدہ اور مرکزی حج کمیٹی کے حکام سے مسلسل رابطہ میں تھے ۔

انہوں نے دفتر ریاستی حج کمیٹی حج ہوز نامپلی حیدرآباد میں کرین حادثہ کے بعد سے ایک کنٹرول روم قائم کیا ہے جس کے ذریعہ دونوں ریاستوں تلنگانہ اور اے پی کے عازمین کے رشتہ دار حج کمیٹی سے تفصیلات حاصل کررہے ہیں۔ اسپیشل افسر حج کمیٹی نے بتایا کہ دونوں عازمین کی تدفین مکہ مکرمہ میں عمل میں آئے گی۔تلنگانہ اور آندھراپردیش کے جاں بحق ہونے والے اور زخمی عازمین کی تمام تفصیلات اسپیشل افسرریاستی حج کمیٹی نے دونوں حکومتوں کے حوالے کردی ہیں۔ اسی دوران مکہ مکرمہ میں کرین حادثہ میں زخمی بھوانی نگر تالاب کٹہ کے شیخ مجیب کے آپریشن کے بعد انہیں آئی سی یو سے جنرل وارڈمیں شفٹ کردیا گیا ہے۔

آپریشن کے بعد 12گھنٹے راست نگہداشت صحت کے ساتھ انہیں عام وارڈ میں منتقل کیاگیا۔ حادثہ کے بعد شیخ مجیب کو زخمیوں کے ساتھ اسپتال منتقل کردیا گیا تھا۔ بھوانی نگر تالاب کٹہ کے شیخ مجیب چو ک میں پلاسٹک کے سامان کا کاروبار کرتے ہیں۔ حادثہ کے بعد سے ان کی والدہ اور اہلیہ پریشان تھیں۔ جناب محمود حسین انجینئر سابق رکن ریاستی حج کمیٹی نے حج کونسل سے رابطہ کرکے جناب شیخ مجیب کا پتہ لگایا جو مکہ کے الزہر میں کنگ عبدالعزیز اسپتال کے وارڈ نمبر 313میں زیر علاج ہیں۔ انہوں نے شیخ مجیب کی والدہ اور اہلیہ کو لے جاکر ان سے ملاقات کروائی۔ انہوں نے شیخ مجیب کی عیادت کی اور انہیں تسلی دی۔

شیخ مجیب نے بتایا کہ حادثہ کے بعد بھگدڑ میں وہ زخمی ہوگئے۔ ان کی پسلیاں دب جانے سے جگر زخمی ہوگیاتھا۔ آپریشن کے بعد ان کی حالت مستحکم ہے جس پر ان کے افراد خاندان نے اطمینان کا اظہار کیا۔ حکومت سعودی عرب کی جانب سے حادثہ میں زخمیوں کے مکمل علاج کا بندوبست کیا گیا ہے۔دیگر زخمیوں کو علاج کے بعد چھٹی دے دی گئی ہے۔

Loading...