کشمیر پر مودی حکومت کو پھر ملا مایاوتی کا ساتھ، راہل گاندھی کے وادی جانے پر اٹھائے سوال

بی ایس پی صدر مایاوتی نے پیر کے روز ٹویٹ کر کے اپوزیشن لیڈروں کو نصیحت دی کہ کشمیر میں حالات معمول ہونے میں کچھ وقت لگے گا۔

Aug 26, 2019 11:46 AM IST | Updated on: Aug 26, 2019 12:01 PM IST
کشمیر پر مودی حکومت کو پھر ملا مایاوتی کا ساتھ، راہل گاندھی کے وادی جانے پر اٹھائے سوال

بی ایس پی صدر مایاوتی: فائل فوٹو

بی ایس پی سربراہ مایاوتی ایک بار پھر جموں وکشمیر معاملہ پر وزیر اعظم نریندر مودی کی حمایت میں آ گئی ہیں۔ انہوں نے کانگریس کے سابق صدر راہل گاندھی سمیت اپوزیشن پارٹیوں کے دیگر لیڈروں کے بغیر اجازت جموں وکشمیر دورے پر جانے کے قدم پر سوال اٹھائے ہیں۔ مایاوتی نے پیر کے روز ٹویٹ کر کے اپوزیشن لیڈروں کو نصیحت دی کہ کشمیر میں حالات معمول ہونے میں کچھ وقت لگے گا۔

مایاوتی نے ٹویٹ کیا ، 'جیسا کہ سبھی جانتے ہیں کہ باباصاحب ڈاکٹر بھیم راؤ امبیڈکر ہمیشہ ہی ملک میں مساوات ، اتحاد اور سالمیت کے حق میں رہے ہیں ، لہذا وہ ریاست جموں و کشمیر میں الگ سے آرٹیکل 370 کا التزام کرنے کے قطعی بھی حق میں نہیں تھے۔ اسی خاص وجہ سے بی ایس پی نے پارلیمنٹ میں اس آرٹیکل کو ہٹائے جانے کی حمایت کی‘‘۔

Loading...

مایاوتی کا جموں وکشمیر معاملہ پر ٹویٹ مایاوتی کا جموں وکشمیر معاملہ پر ٹویٹ

بی ایس پی سربراہ  نے مزید لکھا ، ' ملک میں آئین کے نفاذ کے تقریبا 69 سال بعد اس آرٹیکل 370 کے خاتمے کے بعد اب وہاں حالات کے معمول پر آنے میں کچھ وقت لگے گا۔ اس کے لئے تھوڑا سا انتظار کیا جائے تو بہتر ہے۔ اس کو قابل احترام عدالت نے بھی مانا ہے‘‘۔

مایاوتی نے ایک اور ٹویٹ میں لکھا’’ ایسے میں ابھی حال ہی میں بغیر اجازت کے کانگریس اور دیگر پارٹیوں کا کشمیر جانا کیا مرکز اور وہاں کے گورنر کو سیاست کرنے کا موقع دینے جیسا قدم نہیں ہے؟ وہاں پر جانے سے پہلے اس پر بھی تھوڑا غور کر لیا جاتا تو یہ مناسب ہوتا‘‘۔

Loading...