طلبہ و طالبات کے چہرہ چھپا کر کالج آنے پر میرٹھ کالج انتظامیہ نے لگائی پابندی

موجودہ ماحول میں طالبات کی حفاظت اور تعلیمی ادارے کے وقار کو پیش نظر رکھتے ہوئے یونیورسٹی اور کالج انتظامیہ سخت فیصلے لینے پر مجبور ہوتے ہیں

Jul 18, 2018 07:40 PM IST | Updated on: Jul 18, 2018 07:40 PM IST
طلبہ و طالبات کے چہرہ چھپا کر کالج آنے پر میرٹھ کالج انتظامیہ نے لگائی پابندی

میرٹھ : موجودہ ماحول میں طالبات کی حفاظت اور تعلیمی ادارے کے وقار کو پیش نظر رکھتے ہوئے یونیورسٹی اور کالج انتظامیہ سخت فیصلے لینے پر مجبور ہوتے ہیں ، لیکن کئی مرتبہ ان فیصلوں کو مذہبی معاملات سے جوڑ کر تغلقی فرمان قرار دیتے ہوئے نکتہ چینی بھی کی جاتی ہے ۔ میرٹھ میں میرٹھ ڈگری کالج انتظامیہ کے ایک ایسے ہی ایک فرمان کو لے کر حجاب اور اسکارف پر پابندی کا رنگ دینے کی کوشش کی گئی ۔

میرٹھ شہر کے تاریخی میرٹھ ڈگری کالج کا ماحول کچھ باہری عناصر کی وجہ سے خراب ہو رہا تھا ۔ طالب علم کے بھیس میں چہرہ چھپا کر کچھ باہری لڑکے اور لڑکیاں کالج کیمپس کو پبلک پارک کی طرح استعمال کر رہے تھے اور نازیبا حرکتوں سے یہاں کا ماحول خراب کر رہے تھے ۔ جس کے بعد باہری لڑکے لڑکیوں کی پہچان کرنے اور ماحول کو خراب ہونے سے بچانے کیلئے کالج انتظامیہ نے سبھی طلبہ اور طالبات کے لئے چہرہ چھپا کر آنے پر پابندی لگا دی تھی ۔ تاہم اس معاملہ کو حجاب اور اسکارف پر پابندی سے جوڑ کر جہاں افواہ پھیلائی گئی ، وہیں کالج پراکٹر کو سوشل میڈیا پر ٹرولنگ کا سامنا بھی کرنا پڑا ہے۔

ادھر کالج انتظامیہ کے ذمداران کے مطابق کیمپس کے ماحول اور طلبہ اور طالبات کے بہتر مستقبل کے پیش نظر رکھتے ہوئے سخت فیصلے لینا وقت کی ضرورت ہے۔ وہیں کالج انتظامیہ کے اس فیصلے کو طلبہ اور طالبات بھی کسی تغلقی فرمان کے طور پر نہیں دیکھتے ہیں اور اس فیصلے کو کالج اور طالب علم کے حق میں بہتر قرار دے رہے ہیں ۔

Loading...

Loading...