உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    جموں وکشمیر میں حکومت سازی کا دعویٰ پیش ، ریاست کی پہلی خاتون وزیر اعلیٰ بنیں گی محبوبہ

    جموں وکشمیر کی وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی: فائل فوٹو

    جموں وکشمیر کی وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی: فائل فوٹو

    جموں : پیپلز ڈیموکریٹک پارٹی (پی ڈی پی) کی صدر محبوبہ مفتی نے ہفتہ کے روز جموں وکشمیر کے گورنر این این ووہرا سے ملاقات کرکے ریاست میں نئی حکومت بنانے کا دعویٰ پیش کیا۔ اس کے ساتھ ہی ریاست جموں وکشمیر میں حکومت سازی پر گذشتہ دو ماہ اور 19 دن سے جاری تعطل ختم ہوگیا ہے اور امکانی طور پر آنے والے چند دنوں میں پی ڈی پی اور بی جے پی کے اتحاد پر مبنی مخلوط حکومت تشکیل پائے گی۔

    • Pradesh18
    • Last Updated :
    • Share this:

      جموں : پیپلز ڈیموکریٹک پارٹی (پی ڈی پی) کی صدر محبوبہ مفتی نے ہفتہ کے روز جموں وکشمیر کے گورنر این این ووہرا سے ملاقات کرکے ریاست میں نئی حکومت بنانے کا دعویٰ پیش کیا۔ اس کے ساتھ ہی ریاست جموں وکشمیر میں حکومت سازی پر گذشتہ دو ماہ اور 19 دن سے جاری تعطل ختم ہوگیا ہے اور امکانی طور پر آنے والے چند دنوں میں پی ڈی پی اور بی جے پی کے اتحاد پر مبنی مخلوط حکومت تشکیل پائے گی۔
      یہاں راج بھون میں ہوئی اس ملاقات کے دوران پی ڈی پی کی صدر کے ہمراہ بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کے سینئر لیڈر ڈاکٹر نرمل سنگھ اور پی ڈی پی کے سینئر لیڈران و اراکین پارلیمنٹ مظفر حسین بیگ اور طارق حمید قرہ بھی تھے۔ محترمہ محبوبہ جموں وکشمیر کی13 ویں مگر پہلی خاتون وزیر اعلیٰ ہوں گی جبکہ بی جے پی لیڈر ڈاکٹر نرمل سنگھ اُن کے نائب ہوں گے۔
      دریں اثنا راج بھون کی طرف ہفتہ کی شام جاری ایک بیان میں کہا گیا کہ پی ڈی پی لیجسلیچر پارٹی کی لیڈر محبوبہ مفتی نے ارکارن پارلیمنٹ مظفر حسین بیگ ، طارق حمید قرہ اور بی جے پی لیجسلیچر پارٹی کے لیڈر ڈاکٹر نرمل سنگھ کے ہمراہ آج یہاں راج بھون میں گورنر مسٹر ووہرا کے ساتھ ملاقات کی۔


      بیان میں کہا گیا ’لیڈروں نے اپنی اپنی پارٹیو ں کی جانب سے گورنر کو خطوط پیش کئے ۔پی ڈی پی کے خط میں پارٹی کے لیڈران کی جانب سے محبوبہ مفتی کو لیجسلیچر پارٹی کی سربراہ منتخب کرنے اور ریاست کی وزیرا علیٰ کی حیثیت سے نامز د کرنے کے بارے میں کہا گیا ہے‘ ۔ بیان میں کہا گیا کہ بی جے پی کی ریاستی شاخ کے صدر ست شرما نے گورنر کے نام اپنے مکتوب میں ریاست میں پی ڈی پی بی جے پی مخلوط سرکار کی تشکیل کے لئے اپنی پارٹی کے ممبران کی حمایت کے بارے میں لکھا ہے ۔
      بیان میں مزید کہا گیا ’محبوبہ مفتی اور ڈاکٹر نرمل سنگھ نے گورنر کو بتایا کہ دونوں پارٹیوں کے مابین مفاہمت اور مشاورت جاری ہے اور سرکار کی تشکیل کے لئے موزوں تاریخ کے بارے میں انہیں آگاہ کیا جائے گا‘۔ پی ڈی پی صدر نے نئی حکومت کی تشکیل میں بی جے پی کی غیر مشروط حمایت کے لئے اس جماعت (بی جے پی) کا شکریہ ادا کیا ۔

      گورنر مسٹر ووہرا سے ملاقات کرنے کے بعد محبوبہ مفتی نے نامہ نگاروں کو بتایا ’پی ڈی پی کو حمایت کرنے پر میں بی جے پی کا شکریہ ادا کرتی ہوں۔ میں ایک بار پھر دہرانا چاہوں گی کہ یہ اتحاد لوگوں کی طرف سے دونوں جماعتوں کو دیے گئے منڈیٹ کے احترام میں قائم کیا گیا ہے‘۔
      انہوں نے کہا کہ جموں وکشمیر ملک کی دوسری ریاستوں جیسی نہیں ہے اور یہاں پائے جانے والے مسائل کو اقتصادی اور سیاسی طور پر حل کرنا ہوگا۔ محترمہ محبوبہ نے کہا کہ اُن کی قیادت والی نئی حکومت کا واحد ایجنڈا ’امن، مصلحت اور ترقی‘ ہوگا۔ انہوں نے نئی حکومت کی تشکیل کے سلسلے میں انہیں وزیراعظم مودی کی طرف سے کرائی گئی یقین دہانیوں پر اطمیان کا اظہار کیا۔
      انہوں نے کہا ’میں وزیراعظم نریندر مودی سے ہمیں ملیں یقین دہانیوں سے بے حد مطمئن ہوں‘ ۔ پی ڈی پی صدر نے کہا کہ مرحوم مفتی سعید نے ریاستی کی مجموعی ترقی کے لئے بی جے پی کے ساتھ اتحاد کیا تھا اور ایسا کرکے انہوں نے نہ صرف وزیراعظم نریندر مودی بلکہ پورے ملک کے کروڑ ہا عوام سے ہاتھ ملایا تھا۔
      انہوں نے کہا کہ سابقہ مخلوط حکومت نے جموں وکشمیر کے تینوں خطوں کے لوگوں کو نذدیک لانے کے لئے ’ایجنڈا آف الائنس‘ ترتیب دیا تھا۔ قابل ذکر ہے کہ ریاست میں نئی حکومت بھی پہلے سے طے شدہ ایجنڈا آف الائنس کے مطابق ہی کام کرے گی۔محترمہ محبوبہ نے کہا کہ جموں وکشمیر پوری دنیا میں ایک ’شوکیس ونڈو‘ ہے اور ہم اسے ترقی یافتہ اور پرامن خطہ بناکر ایک مثال قائم کریں گے۔ پی ڈی پی صدر نے کہا کہ وزیر اعلیٰ اور کابینی وزراء کی حلف برداری کی تقریب کی تاریخ کو عنقریب حتمی شکل دی جائے گی۔


      بی جے پی لیڈر نرمل سنگھ نے نامہ نگاروں کو بتایا کہ دونوں جماعتیں مل بیٹھ کر نئی حکومت تشکیل دینے کے سلسلے میں لوازمات پر بات چیت کریں گی۔ انہوں نے کہا کہ انہوں نے گورنر کو ایک خط پیش کیا ہے جس میں بی جے پی لیجسلیچروں نے متفقہ طور پر نئی حکومت کی تشکیل کے سلسلے میں پی ڈی پی کو حمایت دینے کا اعلان کیا ہے۔
      مسٹر سنگھ نے کہا کہ دونوں جماعتوں کے درمیان میں کوئی اختلافات نہیں تھے اور نئی حکومت عنقریب تشکیل پائے گی۔ انہوں نے کہا ’طرفین کے مابین معمولی نوعیت کے مسائل ہیں جن کو نپٹایا جارہا ہے۔ بی جے پی کے پی ڈی پی کے ساتھ کوئی اختلافات نہیں ہیں‘۔
      محبوبہ مفتی نے 22 مارچ کی صبح نئی دہلی میں وزیر اعظم نریندر مودی کے ساتھ اُن کی سرکاری رہائش گاہ واقع 7 ریس کورس روڑ پر ملاقات کی تھی جس کے ساتھ ہی ریاست میں حکومت سازی کی راہ ہموار ہوگئی تھی۔ اگرچہ انہوں نے اس میٹنگ کی تفصیلات کو صیغہ راز ہی رکھا، تاہم بی جے پی جنرل سکریٹری رام مادھو کے مطابق ملاقات کے دوران مسٹر مودی نے محبوبہ مفتی کو آشرواد دینے کے ساتھ ساتھ ہر ممکن تعاون، حمایت اور مدد کی یقین دہانی کرائی۔


      اس ملاقات کے دو روز بعد یعنی 24 مارچ کو پی ڈی پی نے محبوبہ مفتی کو لیجسلیچر پارٹی کا لیڈر اور وزیر اعلیٰ کے عہدے کا امیدوار نامزد کیا ۔ دونوں جماعتوں کو گورنر مسٹر ووہرا نے گذشتہ شام ملاقات کے لئے مدعو کیا تھا، لیکن دونوں نے یہ کہتے ہوئے ملاقات ملتوی کروائی کہ وہ حکومت تشکیل دینے کا حتمی اعلان کرنے سے قبل آپس میں مشاورت کریں گے۔
      ذرائع کے مطابق دونوں جماعتوں (پی ڈی پی اور بی جے پی) کے درمیان قلمدانوں کی تقسیم پر پیدا ہونے والے بحران کی وجہ سے کل گورنر کے ساتھ طے شدہ میٹنگ ملتوی کرنا پڑی۔ تاہم پی ڈی پی صدر اور بی جے پی لیڈر مسٹر نرمل سنگھ نے دونوں کے درمیان قلمدانوں کی تقسیم پر اختلافات سے انکار کیا۔ اِن ذرائع کے مطابق بی جے پی خزانہ و منصوبہ بندی کے علاوہ داخلہ امور کی وزارت کے قلمدان دینے کا مطالبہ کررہی ہے۔ یہ قلمدان سابقہ مرحوم مفتی محمد سعید کی قیادت والی مخلوط حکومت میں پی ڈی پی کے پاس تھے۔
      مسٹر ووہرا نے 23 مارچ کو پی ڈی پی صدر محبوبہ مفتی اور بی جے پی صدر ست شرما کے نام اپنے علیحدہ علیحدہ مراسلوں میں انہیں 25 مارچ کو ملاقات کے لئے مدعو کیا تھا، تاہم دونوں جماعتوں نے راج بھون کو مطلع کیا تھا کہ دونوں سیاسی جماعتوں کے لیڈران کے درمیان بات چیت جاری ہے اور اس کے اختتام کے بعد گورنر سے ملاقات کے لئے نئی درخواست کی جائے گی۔


      راج بھون کے ایک ترجمان نے جمعہ کی شام کو جاری ایک بیان میں کہا ’پی ڈی پی صدر اور بی جے پی ریاستی صدر کو گورنر این این ووہرا کی جانب سے لکھے گئے مراسلوں کے مطابق مذکورہ سیاسی جماعتوں کے صدور اُن سے آج (25 مارچ کو) راج بھون جموں میں علاحدہ علاحدہ ملاقی ہونے والے تھے‘ ۔
      ترجمان کے مطابق کل بعد دوپہر پی ڈی پی نے راج بھون سے رابطہ قائم کر کے پی ڈی پی اور بی جے پی لیڈران کا گورنر سے مشترکہ طور گذشتہ شام ملاقات کی خواہش ظاہر کی ،جس کا جواب اثبات میں دیا گیا۔ ترجمان نے مزید کہا تھا ’پی ڈی پی اور بی جے پی لیڈران نے بعد میں راج بھون کو مطلع کیا کہ دونوں سیاسی جماعتوں کے لیڈران کے درمیان بات چیت جاری ہے اور اس کے اختتام کے بعد گورنر سے ملاقات کے لئے نئی درخواست کی جائے گی‘۔
      بی جے پی نے کل ایک بار پھر واضح کردیا کہ جموں وکشمیر میں حکومت کی تشکیل کے لئے پہلے سے طے شدہ ایجنڈا آف الائنس میں کوئی تبدیلی نہیں لائی جائے گی۔ پارٹی نے اس کا بھی اعلان کیا کہ صوبہ جموں کے حلقہ انتخاب بلاور سے رکن اسمبلی ڈاکٹر نرمل سنگھ نائب وزیر اعلیٰ ہوں گے۔

      First published: