ہوم » نیوز » مشرقی ہندوستان

کولکاتہ کا ملی الامین کالج خستہ حالی کا شکار ، اب طلبہ کی سڑک پر اترنے کی تیاری

کولکاتہ کا ملی الامین کالج حکومت کی سرد مہری و مسلمانوں کی غلط حکمت عملی کے باعث بند ہونے کے دہانے تک پہنچ گیا ہے ۔

  • Share this:
کولکاتہ کا ملی الامین کالج خستہ حالی کا شکار ، اب طلبہ کی سڑک پر اترنے کی تیاری
کولکاتہ کا ملی الامین کالج خستہ حالی کا شکار ، اب طلبہ کی سڑک پر اترنے کی تیاری

سچر کمیٹی نے مغربی بنگال میں اقلیتوں کی تعلیمی صورتحال کو تشویشناک بتایا تھا ، جس کے بعد تعلیمی ترقی کیلئے کوشیشں تو شروع ہوٸیں ، مگر ایسے کٸی تعلیمی ادارے بھی ہیں ، جو سیاست کی نذر ہورہے ہیں ۔ خاص کر کولکاتہ کا ملی الامین کالج حکومت کی سرد مہری و مسلمانوں کی غلط حکمت عملی کے باعث بند ہونے کے دہانے تک پہنچ گیا ہے ۔ کولکاتہ کے ملی الامین کالج کا تنازعہ مزید گہرا ہوتا جارہا ہے ۔


شہر کے بنیا پوکھر علاقہ میں 1992 میں مسلم لڑکیوں کی اعلی تعلیم کیلئے عوامی چندے سے بنایا گیا یہ ادارہ حکومت کی سرد مہری کا شکار ہے ۔ یہ واحد ادارہ ہے ، جو ازادی کے بعد مسلمانوں کی جانب سے بنایا گیا ۔ اسے قومی کمیشن براٸے اقلیتی تعلیمی ادارہ کی جانب سے اقلیتی کردار بھی حاصل ہوا ، لکین کالج کے دو اساتذہ کے درمیان ہوٸے تنازع کے بعد جب معاملہ کورٹ میں پہنچا تو حکومت نے اس کے اقلیتی کردار کو قبول کرنے سے انکار کرتے ہوٸے کالج کی گورننگ باڈی پر سوالیہ نشان لگادیا ۔ حالات ایسے ہیں کہ کالج سے استعفی دے چکیں ٹیچر انچارج بیساکھی بنرجی کو دوبارہ ان کےعہدے پر بحال کیا گیا ۔ ایسے میں گورننگ باڈی ، ملی الامین بچاٶ کمیٹی سمیت اب طلبہ بھی سڑک پر اترنے کی تیاری میں ہیں ۔


ملی الامین بچاو کمیٹی کے رکن فواد حلیم نے کالج کی ترقی کے مطالبہ پر طلبہ کے احتجاج کے فیصلہ کو اہم بتاتے ہوٸے کہا کہ اس تعلق سے گورننگ باڈی کو بھی فیصلہ لینا ہوگا کہ وہ کس کے ساتھ ہیں ۔ کیا کالج کو شادی باڑی بنایا جاٸے گا یا یہ ادارہ بند ہوکر تباہ ہوگا ۔  انہوں نے گورننگ باڈی کو سرکاری دباو کی بجاٸے ایمانداری سے اگے آنے کی ضرورت پر زور دیا ۔


کالج کا حال یہ ہے کہ یہاں صرف 40 طالبات ہیں ، جو بھی اپنے مستقبل کو لے کر پریشان ہیں ۔ ساتھ ہی کالج میں ٹیچر کی کمی ایک بڑا مسئلہ ہے ۔ کالج کی ٹیچر انچارج بیساکھی بنرجی نے بھی جہاں کالج کی کمزورہوتی ساکھ کا اعتراف کیا ، وہیں کالج کی اقلیتی حثیت کو بحال کرنے کیلئے حکومت کے شراٸط کوضروری بتایا ۔ ریاستی اسمبلی میں بھی کانگریس و لیفٹ ممبران اسمبلی نے حکومت سے ملی الامین کے تعلق سے جواب دینے کا مطالبہ کیا ہے ۔
First published: Feb 20, 2020 10:48 PM IST