مشن پانی: اس طریقے سے بچا سکتے ہیں بارش کا پانی

بارش کا پانی جہاں بھی آسانی سے زیادہ سے زیادہ جمع ہو پاتا ہے، یہ تکنیک وہیں، اپنائی جانی چاہئے۔

Aug 26, 2019 04:07 PM IST | Updated on: Aug 26, 2019 04:10 PM IST
مشن پانی: اس طریقے سے بچا سکتے ہیں بارش کا پانی

علامتی تصویر

بارش کی وجہ سے ملک کے زیادہ تر حصوں میں سیلاب آیا ہوا ہے۔ لیکن موسم گزرتے ہی یہ حصے دوبارہ پانی کی قلت سے پریشان ہوتے نظر آئیں گے۔ آبی بحران سے پورا ملک پریشان ہے۔ ایسے میں پانی بچانے کے لئے بارش کا موسم مفید ہے۔ رین واٹر ہارویسٹنگ ایسی ہی ایک تکنیک ہے۔ جانیں، کیسے کر سکتے ہیں رین واٹر ہارویسٹنگ۔

کیا ہے رین واٹر ہارویسٹنگ

بارش کے پانی کو کچھ خاص طریقوں سے اکٹھا کرنے کے عمل کو رین واٹر ہارویسٹنگ کہتے ہیں۔ اس کی مدد سے زمین کے نیچے کے پانی کی سطح بڑھ جاتی ہے۔اس تکنیک کو پوری دنیا میں اپنایا جارہا ہے۔ یہ نظام ان تمام جگہوں پر استعمال ہوسکتا ہے جہاں ہر سال کم سے کم 200 ملی میٹر بارش ہوتی ہے۔

Loading...

زمینی پانی کے مستقل استعمال کے سبب اس کی سطح نیچے جا رہی ہے۔ اس کی وجہ سے پینے کے پانی کی قلت ہو رہی ہے۔ بارش کا پانی بہہ کر برباد ہو جاتا ہے۔ اگر آپ اسے بچانے کے بعد استعمال کرتے ہیں تو آپ شہروں میں پانی کی پریشانی سے بہت حد تک نجات پاسکتے ہیں۔ ہارویسٹنگ سے بچے پانی کا استعمال جانوروں کے پینے کے لئے ، باغبانی میں ، صفائی ستھرائی یا آبپاشی کے لئے کیا جا سکتا ہے۔ گاڑیوں کو بھی دھویا جا سکتا ہے۔

علامتی تصویر علامتی تصویر

بارش کا پانی جہاں بھی آسانی سے زیادہ سے زیادہ جمع ہو پاتا ہے، یہ تکنیک وہیں، اپنائی جانی چاہئے۔ عام طور پر گھروں یا دفتروں کی چھت پر ہارویسٹنگ ہوتی ہے۔ اس کے تحت دو طرح کے گڈھے بنائے جاتے ہیں۔ ایک میں روزانہ کے استعمال کے لئے پانی جمع ہوتا ہے، وہیں دوسرے میں سینچائی یا جانوروں کے پلانے کے لئے پانی رکھا جاتا ہے۔ روزمرہ کے لئے بنے گڈھے کو پکا بناتے ہیں۔ جبکہ دوسرا گڈھا کچا رکھا جاتا ہے۔ ان دونوں کو ہی نالیوں اور پائپوں کے ذریعہ چھت کی نالیوں اور ٹونٹی سے جوڑا جاتا ہے تاکہ بارش کا پانی سیدھے ان دونوں گڈھوں میں پہنچ سکے۔

ہوسکتا ہے ضروری

پٹ یعنی گڈھے کھدوانے کے بعد اس میں نیچے کی طرف فلٹر میڈیا لگوایا جاتا ہے۔ یہ اینٹ، چارکول یا ایکٹیویٹڈ کاربن اور ریت سے مل کر بنتا ہے۔ کئی شہروں میں رین واٹر ہارویسٹنگ کو لازمی بنائے جانے کی بات ہو رہی ہے۔ خاص طور پر اگر آپ کا گھر 100 مربع فٹ یا اس سے بڑی جگہ میں بنے۔

علامتی تصویر علامتی تصویر

حالانکہ گھریلو مقصد سے اس تکنیک کو اپنانے کے کئی طریقے ہیں، جیسے

اسٹوریج۔ اس کے تحت بارش کا پانی سیدھے جمع کرتے ہیں۔ اس کے لئے رینی فلٹر لگایا جاتا ہے۔ جن جگہوں پر زمین کا پانی خارا ہوتا ہے وہاں یہ طریقے زیادہ اپناتے ہیں۔ یہ پانی باغیچے، کولر یا صفائی ستھرائی کے لئے استعمال کر سکتے ہیں۔ اس میں 5 سے 7 ہزار روپئے کا خرچ آتا ہے۔

ریچارج۔ جن علاقوں میں زمینی پانی میٹھا ہوتا ہے وہاں ہارویسٹنگ کے لئے ریچارج کا طریقہ اپنا سکتے ہیں۔ اس کے تحت رین واٹر ہارویسٹنگ فلٹر کے ذریعہ بارش کے پانی کو سیدھے گڑھے تک پہنچاتے ہیں۔ اس سے صاف پانی کی سطح بڑھتی ہے۔ چھت کی سائز کے حساب سے فلٹر کی قیمت الگ الگ ہوتی ہے  جو 3000 سے لیکر 10000 تک بھی ہوسکتی ہے۔

Loading...