உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    1993 ممبئی دھماکوں کا موسٹ وانٹیڈ دہشت گرد ابوبکر UAE میں گرفتار، جلد لایا جائے گا ہندوستان

    1993 کے سلسلہ وار بم دھماکے،۔ (فائل فوٹو)

    1993 کے سلسلہ وار بم دھماکے،۔ (فائل فوٹو)

    ہندوستانی ایجنسیاں ابوبکر کی حوالگی کے عمل میں ہیں۔ ہندوستان کی انتہائی مطلوب فہرست میں شامل ہونے کے تقریباً 29 سال بعد، ابوبکر کو متحدہ عرب امارات سے واپس لانے کے بعد بالآخر ہندوستان میں قانون کا سامنا کرنا پڑے گا۔

    • Share this:
      ممبئی:کئی ممالک میں جاری سرچ آپریشن کے درمیان ہندوستانی تحقیقاتی ایجنسیوں(Indian Investigative Agencies)کو بڑی کامیابی ملی ہے۔ ہندوستانی تحقیقاتی ایجنسیوں نے 1993 کے ممبئی سلسلہ وار دھماکوں (1993 Mumbai Blasts)میں ملوث ہندوستان کے انتہائی مطلوب دہشت گرد کو متحدہ عرب امارات(UAE) سے گرفتار کیا ہے۔ معلومات کے مطابق گرفتار دہشت گرد کا نام ابوبکر ہے جسے بہت جلد یو اے ای سے ہندوستان لایا جائے گا۔ آپ کو بتادیں کہ 1993 میں ممبئی میں مختلف مقامات پر 12 دھماکے ہوئے تھے، جن میں 257 افراد ہلاک اور 713 افراد زخمی ہوئے تھے۔

      رپورٹ کے مطابق گرفتار دہشت گرد کا نام ابوبکر ہے۔ تحقیقاتی ادارے کے مطابق ابوبکر نے پاکستان میں ہتھیاروں اور دھماکہ خیز مواد کی تیاری کی تربیت حاصل کی تھی اور ممبئی میں مختلف مقامات پر سلسلہ وار دھماکوں میں استعمال ہونے والے آر ڈی ایکس کو نصب کرنے کا کام کیا تھا۔ اس واقعے کو انجام دینے کے پورے منصوبے کو دبئی میں داؤد ابراہیم کی رہائش گاہ پر عمل میں لایا گیا۔ بتا دیں کہ ابوبکر گزشتہ 29 سال سے متحدہ عرب امارات اور پاکستان میں مقیم تھے۔

      بتادیں کہ ابوبکر کو سال 2019 میں گرفتار کیا گیا تھا تاہم اس وقت اس نے کچھ دستاویزات اس طرح پیش کی تھیں جس کے بعد یو اے ای حکام کو انہیں رہا کرنا پڑا تھا۔ ذرائع سے موصول ہونے والی معلومات کے مطابق ہندوستانی ایجنسیاں ابوبکر کی حوالگی کے عمل میں ہیں۔ ہندوستان کی انتہائی مطلوب فہرست میں شامل ہونے کے تقریباً 29 سال بعد، ابوبکر کو متحدہ عرب امارات سے واپس لانے کے بعد بالآخر ہندوستان میں قانون کا سامنا کرنا پڑے گا۔

      ممبئی دھماکوں کے مطلوب سلیم غازی کی ہوئی تھی موت
      1993 کے انتہائی مطلوب سلسلہ وار دھماکوں کے ملزم سلیم غازی کی چند روز قبل پاکستان کے شہر کراچی میں موت واقع ہوگئی تھی۔ آپ کو بتادیں کہ سلیم غازی داؤد گینگ کا رکن تھا اور چھوٹا شکیل کا قریبی سمجھا جاتا تھا۔ اس کا داؤد سے بھی خاص تعلق تھا۔ میڈیا میں چل رہی رپورٹس کے مطابق سلیم گزشتہ کئی دنوں سے بیمار تھا۔ اسے ہائی بلڈ پریشر اور دیگر بیماریاں تھیں۔ بتایا جا رہا ہے کہ ہفتہ کو دل کا دورہ پڑنے سے اس کی موت ہو گئی۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: