உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Mukhtar Abbas Naqvi Resigns:نقوی کے استعفے کے بعد مودی کیبنٹ میں ایک مسلم وزیر نہیں، پارلیمنٹ میں بھی بی جے پی کا کوئی مسلم رکن نہیں

    مختار عباس نقوی کے استعفے کے بعد مودی کابینہ میں ختم ہوئی مسلمانوں کی نمائندگی۔

    مختار عباس نقوی کے استعفے کے بعد مودی کابینہ میں ختم ہوئی مسلمانوں کی نمائندگی۔

    Mukhtar Abbas Naqvi Resigns: بی جے پی اقلیتی محاذ کے صدر جمال صدیقی سے بات کی گئی تو انہوں نے کہا کہ سیاست کو مذہب کی نظر سے نہیں دیکھا جانا چاہئے اور ویسے بھی ممبران پارلیمنٹ عوام کے نمائندے ہوتے ہیں کسی خاص مذہب کے نہیں۔

    • Share this:
      Mukhtar Abbas Naqvi Resigns:نئی دہلی:بھارتیہ جنتا پارٹی (BJP) کے سینئر لیڈر مختار عباس نقوی کے بدھ کو مرکزی کابینہ سے استعفیٰ دینے کے بعد، وزیر اعظم نریندر مودی کے اب تک کے آٹھ سالہ دور اقتدار میں یہ پہلا موقع ہے کہ مسلم کمیونٹی کا ایک بھی رکن ان کی کابینہ کا حصہ نہیں ہے۔ نقوی فی الحال راجیہ سبھا کے رکن ہیں۔ ان کی مدت ملازمت آج جمعرات کو ختم ہو رہی ہے۔ نقوی کی میعاد ختم ہونے کے بعد پارلیمنٹ میں بھی یہی صورتحال ہونے والی ہے۔ دونوں ایوانوں میں بی جے پی کے 395 ارکان میں سے ایک بھی رکن مسلم کمیونٹی سے نہیں ہوگا۔

      پچھلے مہینے، 15 ریاستوں میں راجیہ سبھا کی 57 سیٹوں کے لیے انتخابات ہوئے کیونکہ ان سیٹوں کی نمائندگی کرنے والے ممبران کی میعاد 21 جون اور یکم اگست کے درمیان ختم ہو رہی تھی۔ نقوی کے علاوہ بی جے پی کے ایم جے اکبر اور سید ظفر اسلام بھی شامل تھے۔ تاہم ان میں سے کسی کو بھی پارٹی نے راجیہ سبھا کا امیدوار نہیں بنایا۔ بی جے پی اکثر اپوزیشن کی طرف سے مسلمانوں کو مناسب نمائندگی نہ دینے کا الزام سہتی آئی ہے۔ تاہم، بی جے پی کا دعویٰ ہے کہ اس کے ارکان پارلیمنٹ تمام برادریوں کے لیے کام کرتے ہیں اور وہ کسی خاص مذہب کی نمائندگی نہیں کرتے ہیں۔

      نجمہ ہپت اللہ کے بعد نقوی کو بنایا تھا وزیر
      2014 کے لوک سبھا انتخابات میں کامیابی کے بعد جب مودی پہلی بار وزیر اعظم بنے تو نجمہ ہپت اللہ کو مسلم کمیونٹی کی واحد نمائندہ کے طور پر ان کی وزراء کونسل میں شامل کیا گیا۔ انہیں اقلیتی امور کی وزارت کی ذمہ داری سونپی گئی تھی۔ سال 2016 میں جب ہپت اللہ کو منی پور کا گورنر بنایا گیا تو یہ ذمہ داری نقوی کو دی گئی جو اقلیتی امور کی وزارت میں وزیر مملکت تھے۔ سال 2016 میں مدھیہ پردیش سے راجیہ سبھا کے رکن ایم جے اکبر کو وزارت خارجہ میں وزیر مملکت بنایا گیا تھا۔ تاہم، ایک خاتون صحافی کی طرف سے لگائے گئے جنسی ہراسانی کے الزامات کے بعد انہیں وزراء کی کونسل سے استعفیٰ دینا پڑا۔ وہ مودی کی قیادت والی حکومت میں پہلے وزیر تھے جنہوں نے اس طریقے سے استعفیٰ دیا۔

      یہ بھی پڑھیں:
      مختار عباس نقوی کیPM Modiنے کی تعریف، جے پی نڈا سے ملاقات، کیا ہے اشارہ؟

      یہ بھی پڑھیں:
      Breaking: مرکزی وزیر مختار عباس نقوی نے اپنے عہدے سے دیا استعفیٰ

      کیا کہنا ہے بی جے پی کا؟
      جب اس بارے میں بی جے پی اقلیتی محاذ کے صدر جمال صدیقی سے بات کی گئی تو انہوں نے کہا کہ سیاست کو مذہب کی نظر سے نہیں دیکھا جانا چاہئے اور ویسے بھی ممبران پارلیمنٹ عوام کے نمائندے ہوتے ہیں کسی خاص مذہب کے نہیں۔ یہاں تک کہ اگر وہاں (پارلیمنٹ) ہمارے مذہب سے ہماری ذات کا کوئی رکن نہیں ہے، تو ہمیں سمجھنا چاہئے کہ ہمارے ملک کے لوگ وہاں ہیں۔ بی جے پی میں ذمہ داریاں بدلتی رہتی ہیں اور مجھے یقین ہے کہ پارٹی تمام برادریوں کی نمائندگی کو یقینی بنائے گی۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: