ہوم » نیوز » مشرقی ہندوستان

مغربی بنگال: مکل رائے کے رکن اسمبلی بیٹے سبھرانشو رائے نےسیاست سے کنارہ کشی اختیار کرنے کا کیا اعلان

مغربی بنگال کی سیاست میں چانکیہ سمجھے جانے والے مُکل رائے کے ایم ایل اے بیٹے سبھرانشو رائے نے سیاست سے رضاکارانہ طور پر کنارہ کشی اختیار کرنے کا اعلان کیا ہے۔ تاہم سیاسی لیڈران کے اس طرح کے بیانات میں کیا کچھ راز پوشیدہ ہے یہ کہنا تو مشکل ہے، لیکن قیاس آرائیوں کا سلسلہ شروع ہو چکا ہے۔

  • Share this:
مغربی بنگال: مکل رائے کے رکن اسمبلی بیٹے سبھرانشو رائے نےسیاست سے کنارہ کشی اختیار کرنے کا کیا اعلان
مکل رائے کے ایم ایل اے بیٹے سبھرانشو نے سیاست سے دور ہونے کا کیا اعلان

کولکاتا: مغربی بنگال کی سیاست میں چانکیہ سمجھے جانے والے مُکل رائے کے ایم ایل اے بیٹے سبھرانشو رائے نے سیاست سے رضاکارانہ طور پر کنارہ کشی اختیار کرنے کا اعلان کیا ہے۔ تاہم سیاسی لیڈران کے اس طرح کے بیانات میں کیا کچھ راز پوشیدہ ہے یہ کہنا تو مشکل ہے، لیکن قیاس آرائیوں کا سلسلہ شروع ہو چکا ہے۔ بی جے پی کے قومی نائب صدر مکل رائے کے بیٹے اور ممبر اسمبلی سوبھرانشو رائے نے آج اچانک سیاست سے رضاکارانہ طور پر دور رہنے کا اعلان کرکے ہنگامہ مچادیا ہے۔


سو بھرانشو رائے نے 2016 کا اسمبلی الیکشن ترنمول کانگریس کی ٹکٹ پر جیتا تھا وہ گرچہ ترنمول چھوڑ کر بی جے پی میں شامل ہوچکے ہیں، لیکن آج انہوں نے اپنے فیس بک اکاونٹ پر سیاست سے کنارہ کشی کا اعلان کیا ہے۔ جبکہ کچھ دنوں پہلے ہی بیج پور کے ایم ایل اے سوبھرانشو رائے کو بی جے پی کی ریاستی کمیٹی میں جگہ ملی ہے اور ان کے والد مکل رائے کو بی جے پی کا قومی نائب صدر بنایا گیا ہے۔ ایسے وقت میں جب والد کے ساتھ سبھرانشو کو بھی پارٹی میں اہمیت دی گئی ہے تو سبھرانشور رائے نے سیاست سے ہی الگ ہونے کا اعلان کردیا۔ جبکہ گزشتہ دنوں بی جے پی کے ایک اجلاس میں انہوں نے کہا تھا کہ ’’سب سے پہلے بدلہ، پھر تبدیلی‘‘ ہوگی۔


ایم ایل اے سوبھرانشو رائے کو بی جے پی کی ریاستی کمیٹی میں جگہ ملی ہے اور ان کے والد مکل رائے کو بی جے پی کا قومی نائب صدر بنایا گیا ہے۔


ایم ایل اے سوبھرانشو رائے کو بی جے پی کی ریاستی کمیٹی میں جگہ ملی ہے اور ان کے والد مکل رائے کو بی جے پی کا قومی نائب صدر بنایا گیا ہے۔انہوں نے یہ بھی کہا تھا کہ وہ اپنے والد کی توہین کا جواب دینا چاہتے ہیں اور اپنے والد کو غدار کہنے والوں کو ہٹانے کے لئے ہی بی جے پی میں شامل ہوئے ہیں۔ سبھرانشو رائے کے اچانک سیاست سے کنارہ کش ہونے کے اعلان کے بعد پارٹی کی جانب سے کچھ  نہیں کہا گیا ہے۔ مگر سوال یہ ہے کہ اچانک ان کے ساتھ کیا ہوا ہے؟ انہوں نے ایسا پوسٹ کیوں کیا؟  خود سبھرانشو نے بھی اس کی وضاحت نہیں کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ وہ جلد ہی ایک پریس کانفرنس کریں گے۔ سبھرانشو رائے 2011 میں ممبر اسمبلی منتخب ہوئے تھے۔ اس وقت ان کے والد مکل رائے ترنمول کانگریس کے راجیہ سبھا کے رکن پارلیمنٹ تھے اور پارٹی میں ان کی بہت ہی زیادہ اہمیت تھی۔

مکل رائے کو ممتا بنرجی کے بعد دوسری پوزیشن مکل رائے کی تھی۔ 2016 میں بھی سبھرانشور ارئے بیج پور سے ممبر اسمبلی منتخب ہوئے۔ والد مكل رائے کے بی جے پی میں شامل ہونے کے بعد وہ بھی 2019 میں بی جے پی میں شامل ہوگئے، لیکن یہ بھی کہا جاتا رہا کہ انہیں بی جے پی میں عزت نہیں ملنے کی وجہ سے برہم تھے۔ یہ قیاس آرائی بھی تھی کہ وہ ترنمول کانگریس میں دوبارہ لوٹ سکتے ہیں، مگر حال میں ہی انہیں بی جے پی کی  ریاستی کمیٹی میں شامل کرلیا گیا اور ان کے والد کو بی جے پی کا قومی نائب صدر منتخب کیا گیا، لیکن سبھرانشو کی جانب سے سياست دور ہونےکی خبر سے یہ بات بھی سامنے آرہی ہے کہ بی جے پی پارٹی میں باپ اور بیٹے دونوں کے ساتھ کچھ تو گڑبڑ ہے، جس کی پردہ داری کی جارہی ہے۔ بہر حال اب سبھرانشو کے سامنے آنے کا انتظار ہے۔
Published by: Nisar Ahmad
First published: Oct 15, 2020 11:56 PM IST