دریا کے کنارے پر نظر آیا مگرمچھ ، لاپتہ لوگوں کے بحیرہ عرب میں بہنے کا خدشہ

ریسکیو ٹیم کو لاشیں اس جگہ سے ملی ہیں ، جہاں سے کچھ ہی فاصلے پر دریا بحیرہ عرب میں شامل ہو جاتا ہے ۔

Aug 05, 2016 09:44 AM IST | Updated on: Aug 05, 2016 09:45 AM IST
دریا کے کنارے پر نظر آیا مگرمچھ ، لاپتہ لوگوں کے بحیرہ عرب میں بہنے کا خدشہ

رائے گڑھ : مہاراشٹر کے رائے گڑھ میں حادثے کے بعد امدادی ٹیموں کو اب تک 16 لاشیں مل چکے ہیں ، جبکہ 40 لاپتہ لوگوں کا اب بھی کوئی پتہ نہیں چل سکا ہے ۔  ریسکیو ٹیم کو لاشیں اس جگہ سے ملی ہیں ، جہاں سے کچھ ہی فاصلے پر دریا بحیرہ عرب میں شامل ہو جاتا ہے ۔ اس طرح حادثے کے شکار لوگوں کے بحیرہ عرب میں بہہ جانے کا خدشہ ظاہر کیا جارہا ہے ۔

وہیں  ریسکیو ٹیم کو دریا کے کنارے مگرمچھ نظر آیا ہے ۔ دریا میں بسوں اور کاروں کا بھی ابھی تک کوئی پتہ نہیں چل پایا ہے ۔ دراصل  جس جگہ یہ حادثہ پیش آیا ، وہاں سے ساویتری دریا صرف 18 کلومیٹر کا فاصلہ  طے کرکے بحیرہ عرب میں مل جاتی ہے ۔ دریا میں جس طرح کی طغیانی ہے ، اس سے اس بات کا اندیشہ پیدا ہوگیا  ہے کہ لوگ اور گاڑیاں بحیرہ عرب میں بہہ گئے ہوں گے ۔

Loading...

موقع پر این ڈی آر ایف اور کوسٹ گارڈ کی ٹیم بچاؤ مہم میں لگی ہوئی ہیں ۔  رائے گڑھ کے مہاڈ میں بنا یہ پل تقریبا 100 سال قدیم  تھا اور کافی خستہ ہو چکا تھا ۔ اس بارے میں مقامی لوگو کا کہنا ہے کہ دریا میں ہونے والے غیر قانونی کان کنی کی وجہ سے پل کی بنیاد کمزور ہوئی ، جس کی وجہ سے یہ پل بہہ گیا ۔ بسوں اور لاپتہ گاڑیوں کی تلاش  کے لئے مقناطیس کا بھی استعمال کیا جارہا ہے ۔

Loading...