உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    سیکس ریکٹ میں ممبئی کی ٹاپ ماڈل اور اداکارہ گرفتار، 2 گھنٹے کا چارج جان کر رہ جائیں گے حیران

    سیکس ریکٹ میں ممبئی کی ٹاپ ماڈل اور اداکارہ گرفتار، 2 گھنٹے کا چارج جان کر رہ جائیں گے حیران

    سیکس ریکٹ میں ممبئی کی ٹاپ ماڈل اور اداکارہ گرفتار، 2 گھنٹے کا چارج جان کر رہ جائیں گے حیران

    ممبئی کی کرائم برانچ (Mumbai Crime Branch) جوہو کے ایک ہوٹل سے سیکس ریکٹ (Sex Racket) کا پردہ فاش کیا ہے۔ کرائم برانچ نے جوہو کے ایک پانچ ستارہ ہوٹل سے ممبئی کی ایک ٹاپ ماڈل (Model) اور مشہور ٹی وی اداکارہ (TV Actress) کو پکڑا ہے۔ سیکس ریکٹ چلانے والی ایشا خان نامی خاتون کو بھی گرفتار کیا گیا ہے۔

    • Share this:
      ممبئی: فحش فلمیں (Porn Movies) بنانے میں شامل ہونے کے الزام میں گرفتار چل رہے راج کندرا (Raj Kundra) کے بعد اب ممبئی کی کرائم برانچ (Mumbai Crime Branch) جوہو کے ایک ہوٹل سے سیکس ریکٹ (Sex Racket) کا پردہ فاش کیا ہے۔ کرائم برانچ نے جوہو کے ایک پانچ ستارہ ہوٹل سے ممبئی کی ایک ٹاپ ماڈل اور مشہور ٹی وی اداکارہ کو پکڑا ہے۔ حالانکہ اس معاملے میں جانچ ٹیم نے گرفتاری نہ دکھاتے ہوئے اسے ریسکیو بتایا ہے۔ جانچ ٹیم نے اس پورے معاملے ایشا خان نام کی ایک خاتون کو گرفتار کیا ہے، جو اس سیکس ریکٹ کو چلایا کرتی تھی۔

      ممبئی پولیس کو اطلاع ملی تھی کہ ایشا خان کافی وقت سے ممبئی کے بڑے ہوٹل میں سیکس ریکٹ چلا رہی ہے۔ اطلاع کی بنیاد پر کرائم برانچ نے ایک ٹیم تیار کی۔ کرائم برانچ کے افسران نے فرضی گراہک بن کر پہلے ایشا خان سے رابطہ کیا۔ اس کے بعد ایشا خان نے کئی تصاویر بھیجی۔ کرائم برانچ کے افسر نے دو لڑکیوں کی تصویر منتخب کی۔ اس میں سے ایک کئی اشتہار میں کام کرتی ہے اور دوسری کئی ٹی وی سیریل میں کام کرچکی ہے۔

      رپورٹ کے مطابق، ایشا خان نے بتایا کہ ہر لڑکی دو گھنٹے کے دو لاکھ روپئے لے گی۔ دو لاکھ میں سے 50 ہزار ایشا خان کو ملنے تھے۔ کرائم برانچ کے افسران نے تینوں کو جوہو کے ایک ہوٹل میں ملنے کو کہا۔ جمعرات کی شب جیسے ہی ایشا خان، ماڈل اور اداکارہ اس ہوٹل کے باہر پہنچے، کرائم برانچ کی ٹیم نے انہیں گرفتار کرلیا۔

      لاک ڈاون نے چھینا کام تو کرنے لگی جسم فروشی

      ماڈل اور ٹی وی اداکارہ نے بتایا کہ کورونا کی وجہ سے جب سے لاک ڈاون لگا ہے، تب سے کام نہیں مل رہا ہے۔ لاک ڈاون کے سبب جو سیریل وہ کر رہی تھیں، وہ بھی بند ہے۔ ایسے میں انہیں ممبئی میں رہنے کے لئے پیسوں کی ضرورت تھی۔ یہی سبب ہے کہ وہ اس جسم فروشی کے کاروبار میں آگئیں۔

       
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: