ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

مشاعروں میں منوررانا کا بائیکاٹ اور سرکاری اعزازات واپس لینے کا مطالبہ

گنگا سینا نے منور رانا کے خلاف سخت موقف اختیار کرتے ہوئے ان کو دیئے گئے تمام سرکاری اعزازات کو واپس لینےکا مطالبہ کیا ہے۔ الہ آباد میں گنگا سینا کے صدر مہنت آنند گری نے بیان جاری کرکے مشاعروں سے منوررانا کا بائیکاٹ کرنےکی اپیل بھی کی ہے۔

  • Share this:
مشاعروں میں منوررانا کا بائیکاٹ اور سرکاری اعزازات واپس لینے کا مطالبہ
مشاعروں میں منوررانا کا بائیکاٹ اور سرکاری اعزازات واپس لینے کا مطالبہ

الہ آباد: فرانس میں توہین رسالت کے معاملے میں منور رانا کے حالیہ بیان اورایف آئی آر درج  ہونےکے بعد اکھل بھارتیہ اکھاڑا پریشد کی ذیلی تنظیم ’’گنگا سینا‘‘ نے منور رانا کے خلاف محاذ کھول دیا ہے۔ گنگا سینا نے منور رانا کے خلاف سخت موقف اختیار کرتے ہوئے ان کو دیئے گئے تمام سرکاری اعزازات کو واپس لینےکا مطالبہ کیا ہے۔ الہ آباد میں گنگا سینا کے صدر مہنت آنند گری نے بیان جاری کرکے مشاعروں سے منوررانا کا بائیکاٹ کرنےکی اپیل بھی  کی ہے۔


گنگا سینا کے صدر مہنت آنند گری نے توہین رسالت کے معاملے میں منور رانا کے حالیہ بیان پر سخت اعتراض ظاہرکیا ہے۔ آنند گری کا کہنا ہےکہ منور رانا ایک ادبی شخصیت ہیں، لیکن انہوں نے اپنے بیان کے ذریعے سماج کے  ایک مخصوص طبقے کو تشدد پر آمادہ کرنے کی کوشش کی ہے۔ واضح رہے کہ اس پہلے اکھل بھارتیہ اکھاڑا پریشد نے بھی بیان جاری کرکے منور رانا کے خلاف اپنے سخت رد عمل کا اظہار کیا تھا۔


اکھاڑا پریشد کے صدر مہنت نریندرگری نے اپنے بیان میں منور رانا کو پاکستانی ایجنٹ تک قرار دے دیا تھا۔ اکھاڑا پریشد نے منور رانا  کے بیان کی اعلیٰ سطحی جانچ کرانے کا مطالبہ کیا تھا۔ اکھاڑا پریشد  اور اس کی ذیلی تنظیم گنگا سینا نے مشاعرے میں منور رانا کا بائیکاٹ کی اپیل کرکے اس معاملے کو اور بھی طول دے دیا ہے۔ اس بارے میں مہنت آنند گری کا کہنا ہے کہ وہ منوررانا کو ایک اچھا شاعر مانتے ہیں، لیکن انہوں نے جس طرح سے اشتعال انگیز بیان دیا ہے، اس سے مسلم نوجوانوں کو  تشدد پر آمادہ ہونےکا حوصلہ مل سکتا ہے۔


 اکھاڑا پریشد کے صدر مہنت نریندرگری نے اپنے بیان میں منور رانا کو پاکستانی ایجنٹ تک قرار دے دیا تھا۔ اکھاڑا پریشد نے منور رانا کے بیان کی اعلیٰ سطحی جانچ کرانے کا مطالبہ کیا تھا۔

اکھاڑا پریشد کے صدر مہنت نریندرگری نے اپنے بیان میں منور رانا کو پاکستانی ایجنٹ تک قرار دے دیا تھا۔ اکھاڑا پریشد نے منور رانا کے بیان کی اعلیٰ سطحی جانچ کرانے کا مطالبہ کیا تھا۔


واضح رہے کہ عالمی شہرت یافتہ شاعر منور رانا نے اپنے حالیہ بیان میں فرانس کے اس ٹیچر کے قتل کو جائز ٹھرانےکی کوشش کی تھی، جس نے اپنے کلاس روم میں رسول اکرم کے اہانت امیز خاکے دکھائے تھے۔ منور رانا نے حملہ آور کا دفاع کرتے ہوئے کہا تھا کہ وہ کسی بھی مذہب کے بانی کی توہین کے خلاف ہیں اور یہ کہ اگر نوجوان کی جگہ  ہوتے تو وہ بھی ایسا ہی کرتے۔ منور رانا کے اس بیان کی کئی حلقوں کی طرف سے نہ صرف مذمت کی گئی، بلکہ یوگی حکومت نے ان کے خلاف  لکھنؤ کے حضرت گنج تھانے میں ایف آئی آر بھی درج کرائی ہے۔
Published by: Nisar Ahmad
First published: Nov 03, 2020 09:04 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading