ہوم » نیوز » مشرقی ہندوستان

شہریت ترمیمی قانون،این پی آر،این آرسی کے خلاف خانقاہوں کی جانب سے چلائی جائےگی مہم

بہار کے خانقاہوں نے اب سی اے اے کے خلاف چل رہے تحریک کو مزید تقویت پہنچانے کا بیڑا اٹھایا ہے۔ سی اے اے، این پی آر اور این آر سی کو ملک کے خلاف قانون مانتے ہوئے مکمل احتجاج کرنے کا اعلان کیا ہے۔

  • Share this:
شہریت ترمیمی قانون،این پی آر،این آرسی کے خلاف خانقاہوں کی جانب سے چلائی جائےگی مہم
بہار کے خانقاہوں نے اب سی اے اے کے خلاف چل رہے تحریک کو مزید تقویت پہنچانے کا بیڑا اٹھایا ہے۔ سی اے اے، این پی آر اور این آر سی کو ملک کے خلاف قانون مانتے ہوئے مکمل احتجاج کرنے کا اعلان کیا ہے۔

یہ پہلا موقع ہے جب بہار اور جھارکھنڈ کے30 سے زیادہ خانقاہوں نے ایک ساتھ میٹنگ کی ہے۔ پٹنہ کے پھلواری شریف میں واقع تاریخی خانقاہ، خانقاہ مجیبیہ میں میٹنگ کی اور میٹنگ کے بعد پریس کانفرنس کر سی اے اے، این پی آر اور این آر سی کو پوری طرح سے رد کرنے کا اعلان کیا۔خانقاہوں کے سجادہ نشین نے بہار اسمبلی میں این پی آر اور این آر سی پر تجویز پاس ہونے کا خیر مقدم کیا ساتھ ہی وزیر اعلیٰ نتیش کمار سے قومی سطح پر اس قانون کے خلاف راستہ ہموار کرانے کا مطالبہ کیا۔ خانقاہوں کے سجادہ نشین کے مطابق یہ معاملا مرکزی حکومت سے جڑا ہے اور ظاہر ہے جب تک مرکزی حکومت اس تعلق سے کوئی فیصلہ نہیں کرتی ہے تب تک اس تعلق سے کچھ بھی نہیں ہوسکتا ہے۔ خانقاہ کے سجادہ نشین نے کہا کی وہ اس قانون کے خلاف ریاست گیر سطح پر احتجاج کریں گے


وہیں قومی سطح پر تمام خانقاہوں کو جوڑنے اور اس کے خلاف کھڑا ہونے کی مہم چلانے کی کوشش کی جارہی ہے۔ خانقاہ منعمیہ میتن گھاٹ پٹنہ سٹی کے سجادہ نشین ڈاکٹر سید شاہ شمیم الدین احمد منعمی نے کہا کی خانقاہوں سے سماج کے ہر طبقہ کا رشتہ ہے۔ خانقاہیں بلا تفریق مزہب و ملت سبھی کو اپنے دامن میں جگہ دیتی ہے۔ ایسے میں خانقاہوں کا سماج پر اپنا ایک گہرا اثر ہے اور آج خانقاہیں سماج کے ہر طبقہ سے اس قانون کے خلاف کھڑا ہونے کی اپیل کرتی ہے۔خانقاہوں کے سجادہ نشین نے اعلان کیا کی سی اے اے، این پی آر اور این آر سی کے خلاف ریاست گیر سطح پر مہم چلائی جائےگی۔


 بہار اور جھارکھنڈ کے30 سے زیادہ خانقاہوں نے ایک ساتھ میٹنگ کی
بہار اور جھارکھنڈ کے30 سے زیادہ خانقاہوں نے ایک ساتھ میٹنگ کی


بہار میں جو لوگ احتجاج کررہے ہیں انکو مزید طاقت فراہم کرانے کی کوشش کی جائےگی۔ خانقاہوں نے احتجاج کررہے لوگوں سے پر امن احتجاج کرنے کی اپیل کے ساتھ ہی احتجاج کو جاری رکھنے کا اعلان کیا۔خانقاہ مجیبیہ کے سجادہ نشین محمد آیت اللہ قادری نے کہا کی مرکزی حکومت اس قانون کو جبرا نافز کرنا چاہتی ہے، یہ تمام ہندوستانیوں پر ظلم ہوگا اور کروڑوں لوگ اپنی شہریت سے محروم ہوجائیں گے، مرکزی حکومت بھارتی شہریوں کو شہریت سے محروم کر کے ان کے لئے ڈٹینشن کیمپ بنارہی ہے اور وہ ایسا قید خانہ ہے جہاں رہنے سے مرنا بہتر ہے۔ آسام اس کی مثال ہے۔محمد آیت اللہ قادری نے حکومت سے مطالبہ کیا کی ہندوستان کے اسی دستور و آئین کو بحال رکھا جائے جو آزادی کے بعد سے آج تک اس جمہوری ملک میں جاری ہے، ساتھ ہی لوگوں سے اس قانون کے خلاف کھڑا ہونے اور احتجاج کرنے کی اپیل کی۔
First published: Mar 05, 2020 09:07 AM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading