ہوم » نیوز » وسطی ہندوستان

فرانس میں گستاخانہ خاکوں کا معاملہ، علمائے کرام کی مسلمانوں سے صبر و تحمل کی اپیل

کرناٹک کے نمائندہ علمائے کرام نے اپنے مشترکہ بیان میں کہا ہے کہ پچھلے کچھ عرصے سے پورے عالم میں خاص طور پر مغربی دنیا میں مسلسل رہبر انسانیت پیغمبر اسلام حضرت محمد صلی اللہ علیہ و سلم کی پاکیزہ شبیہ کو بگاڑنے اور آپ کی توہین کرتے ہوئے مسلمانوں کو مشتعل کرنے، مسلمانوں کو بھڑکانے کی ناپاک و ناکام کوششیں جاری ہیں۔

  • Share this:
فرانس میں گستاخانہ خاکوں کا معاملہ، علمائے کرام کی مسلمانوں سے صبر و تحمل کی اپیل
فرانس میں گستاخانہ خاکوں کا معاملہ، علمائے کرام کی مسلمانوں سے صبر و تحمل کی اپیل

بنگلورو: فرانس میں پیغمبر اسلام حضرت محمد صلی اللہ علیہ و سلم کی شان میں گستاخانہ خاکوں کی ریاست کرناٹک کے علمائے کرام اور ملی تنظیموں نے سخت مذمت کی ہے۔ بنگلورو میں کرناٹک کے امیر شریعت مولانا صغیر احمد رشادی کی صدارت میں اہم اجلاس منعقد ہوا۔ اجلاس میں جمعیۃعلماء ہند، جماعت اسلامی ہند، جماعت اہل سنت، جمعیت اہل حدیث کے نمائندہ علمائے کرام نے حصہ لیا۔ اجلاس کے بعد امیر شریعت مولانا صغیر احمد رشادی نے میڈیا سے خطاب کیا۔ انہوں نے کہا کہ تمام علمائے کرام فرانس میں گستاخانہ خاکوں کی سخت الفاظ میں مذمت کرتے ہیں۔ کوئی بھی مسلمان حضرت محمد صلی اللہ علیہ و سلم کی شان میں توہین ہرگز برداشت نہیں کرسکتا۔


مولانا صغیر احمد رشادی نے کہا کہ فرانس کے صدر ایمانویل میکرون نے نہ صرف پیغمبر اسلام کے گستاخانہ خاکوں کی حمایت کی بلکہ اسلام اور مسلمانوں پر نامناسب حملہ کرتے ہوئے نازیبا ریمارکس پیش کئے ہیں اور مسلمانان عالم کی سخت دل آزاری کی ہے۔ امیر شریعت نے کہا کہ مسلمانان ہند بالخصوص اہلیان کرناٹک فرانس میں ہونے والے بے جا تشدد اور معصوم و بے گناہ جانوں کے ضائع ہونے کی پرزور مذمت کرتے ہیں۔


اجلاس میں جمعیۃعلماء ہند، جماعت اسلامی ہند، جماعت اہل سنت، جمعیت اہل حدیث کے نمائندہ علمائے کرام نے حصہ لیا۔ اجلاس کے بعد امیر شریعت مولانا صغیر احمد رشادی نے میڈیا سے خطاب کیا۔
اجلاس میں جمعیۃعلماء ہند، جماعت اسلامی ہند، جماعت اہل سنت، جمعیت اہل حدیث کے نمائندہ علمائے کرام نے حصہ لیا۔ اجلاس کے بعد امیر شریعت مولانا صغیر احمد رشادی نے میڈیا سے خطاب کیا۔


کرناٹک کے امیر شریعت مولانا صغیر احمد رشادی نے کہا کہ فرانس کے صدر ایمانویل میکرون کو چاہئے کہ وہ فوری طور پر مسلمانان عالم سے غیر مشروط معافی مانگیں۔ امیر شریعت مولانا صغیر احمد رشادی نے مسلمانوں سے اپیل کی ہے کہ وہ ملک کے قانون کے دائرے میں رہ کر فرانس میں بنائے گئے گستاخانہ خاکوں کی مذمت کریں۔ موجودہ حالات کو دیکھتے ہوئے احتجاجی مظاہرے منعقد نہ کریں۔ امیر شریعت، کرناٹک نے کہا کہ اس پورے معاملے میں مسلمان کسی بھی قسم کے اشتعال کا شکار نہ ہوں،  صبر و تحمل کا مظاہرہ کریں، حالات کی نزاکت کے پیش نظر کسی بھی قسم کے احتجاجی پہلو کو اختیار کرنے سے گریز کریں۔

اس اہم اجلاس میں بنگلورو سٹی جامع مسجد کے خطیب و امام مولانا مقصود عمران رشادی، جمعیت علماء ہند، کرناٹک کے سکریٹری مولانا مفتی شمس الدین بجلی قاسمی، جماعت اسلامی ہند کے امیر حلقہ ڈاکٹر محمد سعد بلگامی، مجلس العلماء کے ناظم اعلی مولانا وحید الدین خان عمری، جمعیت علماء کرناٹک کے صدر مولانا عبدالرحیم رشیدی قاسمی، مسجد اہل حدیث چار مینار، بنگلورو کے خطیب و امام مولانا اعجاز احمد ندوی اور دیگر علمائے نے شرکت کی۔ ان علماء نے اپنے مشترکہ پیغام میں کہا کہ پیغمبر اسلام حضرت محمد صلی اللہ علیہ و سلم صرف مسلمانوں کے نہیں بلکہ پوری انسانیت کے ہمدرد و رہبر ہیں۔ خالق کائنات نے آپ کو تمام عالموں کیلئے رحمت بنا کر بھیجا ہے۔ جنہوں نے آپ کو دیکھا وہ آپ صلی اللہ علیہ و سلم کے گرویدہ بن گئے۔ سبھی آپ کے حسن اخلاق اور اعلی کردار کے معترف تھے اور آپ کو الصادق الامین کہکر پکارتے تھے۔ علماء نے کہا کہ موجودہ حالات میں مسلمان توہین رسالت کے رد عمل میں خود کو سچا محب رسول اور متبع سنت بنائیں۔ اپنوں اور پرائیوں کو سیرت النبی صلی اللہ علیہ و سلم واقف کرائیں۔

کرناٹک کے نمائندہ علمائے کرام نے اپنے مشترکہ بیان میں کہا ہے کہ پچھلے کچھ عرصے سے پورے عالم میں خاص طور پر مغربی دنیا میں مسلسل رہبر انسانیت پیغمبر اسلام حضرت محمد صلی اللہ علیہ و سلم کی پاکیزہ شبیہ کو بگاڑنے اور آپ کی توہین کرتے ہوئے مسلمانوں کو مشتعل کرنے، مسلمانوں کو بھڑکانے کی ناپاک و ناکام کوششیں جاری ہیں۔ وقفہ وقفہ سے یہ عمل دہرایا جارہا ہے۔ علماء نے کہا کہ اس کا واضح مقصد مسلمانوں کو مشتعل کرتے ہوئے پوری دنیا کے سامنے اسلام اور مسلمانوں کی شبیہ کو مسخ کرنا ہے۔ مسلمانوں کو متشدد ثابت کرتے ہوئے، اسلام اور مسلمانوں کے سلسلے میں منفی سوچ کو مضبوط بنانا ہے۔ علماء نے کہا کہ مسلمان اسطرح کی سازشوں کو سمجھیں اور ان سازشوں کو ناکام بنانے کیلئے آپ صلی اللہ علیہ و سلم کے پاکیزہ اخلاق، سیرت اور کردار کو دنیا کے سامنے موثر طریقے سے پیش کریں۔ کیونکہ عالم انسانیت کو نفرتوں اور رنجشوں کی نہیں بلکہ رہبر انسانیت محمد عربی صلی اللہ علیہ و سلم کے پاکیزہ اخلاق، رواداری اور بردباری کی ضرورت ہے۔
Published by: Nisar Ahmad
First published: Nov 04, 2020 07:49 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading