اترپردیش : جے شری رام کا نعرہ نہیں لگانے پر مولانا کی جم کر پٹائی ، داڑھی کٹوا لینے کی دھمکی

میرٹھ – مظفر نگر ہائی وے سے مولانا اپنے گھر جارہے تھے ۔ تبھی لڑکوں کے ایک گروپ نے انہیں گھیر لیا اور ان کے ساتھ بدسلوکی کی ۔

Jul 14, 2019 06:40 PM IST | Updated on: Jul 14, 2019 06:40 PM IST
اترپردیش : جے شری رام کا نعرہ نہیں لگانے پر مولانا کی جم کر پٹائی ، داڑھی کٹوا لینے کی دھمکی

اترپردیش : جے شری رام کا نعرہ نہیں لگانے پر مولانا کی جم کر پٹائی ، داڑھی کٹوا لینے کی دھمکی

اترپردیش کے باغپت ضلع کے دوگھٹ علاقہ میں جے شری رام نہ بولنے پر ایک مولانا کی پٹائی کا معاملہ سامنے آیا ہے ۔ الزام ہے کہ میرٹھ – مظفر نگر ہائی وے سے مولانا اپنے گھر جارہے تھے ۔ تبھی لڑکوں کے ایک گروپ نے انہیں گھیر لیا اور ان کے ساتھ بدسلوکی کی ۔

مولانا نے بتایا کہ وہ دوگھاٹ علاقہ کے سرورا مندر اور کوٹی پولیس چوکی کے درمیان پہنچے تو ہائی وے پر کھڑے تقریبا 10 لڑکوں کے گروپ نے انہیں روک لیا اور ان کے ساتھ مار پیٹ کی ۔ الزام ہے کہ مولانا سے کہا گیا کہ اگر ہندوستان میں رہنا ہے تو جے شری رام کہنا ہوگا ۔

Loading...

جے شری رام نہیں کہنے پر نوجوانوں نے مولانا کی جم کر پٹائی کی ۔ متاثرہ مولانا کا نام املاق الرحمان ہے ، جو سردھنا سے پڑھا کر واپس اپنے گھر جارہے تھے ۔ مولانا مظفر نگر کے بوڈھانا تھانہ حلقہ کے جولا گاوں کے رہنے والے ہیں ۔

الزامات کے مطابق پٹائی کرتے ہوئے نوجوانوں نے مولانا کی داڑھی کو کھینچا اور ان کی ٹوپی اتار کر پھینک دی ۔ ملزم نوجوانوں نے پٹائی کرتے ہوئے مولانا سے جے شری رام کے نعرے لگانے کیلئے کہا ۔ مولانا نے مخالفت کی اور جے شری رام کے نعرے نہیں لگائے ۔ مولانا نے نعرے نہیں لگائے تو نوجوانوں نے داڑھی کھینچ کر ان کی جم کر پٹائی کی اور اگلی مرتبہ داڑھی کٹوا کر ہائی وے سے گزر نے کیلئے کہا ۔ مولانا نے جان بچانے کیلئے شور مچایا ۔ مولانا کی آواز سن کر راستے سے گزر رہے راہگیر موقع پر پہنچے اور ان کی جان بچائی ۔

مولانا نے دوگھاٹ تھانہ میں نامعلوم نوجوانوں کے خلاف تحریر دی ہے ۔ ابھی تک ملزمین کی گرفتاری نہیں کی گئی ہے ۔ ہمارے نامہ نگار نے اس معاملہ میں بات کرنے کیلئے پولیس انسپکٹر باغپت کو فون کیا تو انہوں نے فون نہیں اٹھایا ۔ اے ایس پی اور سی او نے بھی معاملہ میں کچھ بولنے سے انکار کردیا ۔

Loading...