تین سال پورے ہونے پرگمشدہ نجیب احمد کی ماں نےکہا- 'مجھےان سےکوئی شکایت نہیں'۔

نجیب احمد جےاین یوکے ہاسٹل سے تین سال قبل اچانک غائب ہوگیا تھا۔ تب سےلے کرآج تک ملک کی تین ٹاپ سیکورٹی ایجنسیاں نجیب احمد کوتلاش کرچکی ہیں، لیکن ابھی تک اس کا کچھ پتہ نہیں چلا ہے۔ نجیب احمد کی ماں فاطمہ نفیس بھی اس کی تلاش میں پریشان ہیں۔

Oct 15, 2019 03:52 PM IST | Updated on: Oct 15, 2019 03:52 PM IST
تین سال پورے ہونے پرگمشدہ نجیب احمد کی ماں نےکہا- 'مجھےان سےکوئی شکایت نہیں'۔

نجیب احمد کی ماں آج بھی جنتر منتر پراس کی تلاش کئے جانے کو لے کراحتجاج کررہی ہیں۔ فائل فوٹو

نئی دہلی: تین سال قبل آج ہی کےدن اترپردیش کے بدایوں کا رہنے والا نجیب احمد دہلی کے جواہرلال نہرو یونیورسٹی (جے این یو) کے ہاسٹل سےاچانک غائب ہوگیا تھا۔ تب سےلے کر آج تک ملک کی تین ٹاپ سیکورٹی ایجنسیاں نجیب احمد کوتلاش کرچکی ہیں، لیکن ابھی تک اس کا کچھ پتہ نہیں چلا ہے۔ نجیب احمد کی ماں فاطمہ نفیس بھی اس کی تلاش میں پریشان ہیں۔ تمام طرح کی افواہوں اورقیاس آرائیوں کےدرمیان ان کا کہنا ہےکہ نجیب احمد کی تلاش میں مصروف لوگوں سےانہیں کوئی شکایت نہیں ہے۔

 اس لئے دہلی پولیس پولیس اورسی بی آئی نہیں کرتی پریشان

Loading...

اےبی وی پی کےکارکنان سے تنازعہ کے بعد غائب ہوا نجیب

نجیب کےبھائی حسیب احمد کا الزام ہےکہ نجیب بھائی جےاین یوکے ماہی مانڈوی ہاسٹل کے روم نمبر106 میں رہتےتھے۔ اس وقت ہاسٹل میں الیکشن چل رہے تھے۔ کچھ لوگ کمرے میں تشہیرکرنےکےلئےآئےتھے۔ تبھی کچھ کہا سنی ہوگئی۔ یہ لوگ اکھل بھارتیہ ودیارتھی پریشد (اے بی وی پی) سے منسلک تھے۔ بات کافی آگے تک بڑھ گئی، بھائی کوطرح طرح سے پریشان کیا گیا۔ اسی کے بعد انہیں غائب کردیا گیا۔ا

Loading...