ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

نیشنل کانفرنس نے شوپیاں میں مبینہ فرضی جھڑپ سے متعلق کیا یہ بڑا مطالبہ

جموں و کشمیر نیشنل کانفرنس نے شوپیاں میں 18 جولائی کو بظاہر ایک فرضی تصادم آرائی میں تین مزدوروں کی ہلاکت پر گہرے صدمے اور تشویش کا اظہار کرتے ہوئے واقعہ کی معیاد بند اعلیٰ سطحی تحقیقات کا مطالبہ کیا ہے اور حقائق کو عوام کے سامنے لانے کی مانگ کی ہے۔

  • UNI
  • Last Updated: Aug 11, 2020 10:07 PM IST
  • Share this:
نیشنل کانفرنس نے شوپیاں میں مبینہ فرضی جھڑپ سے متعلق کیا یہ بڑا مطالبہ
نیشنل کانفرنس نے شوپیاں میں مبینہ فرضی جھڑپ سے متعلق کیا یہ بڑا مطالبہ۔ فائل فوٹو

سری نگر: جموں و کشمیر نیشنل کانفرنس نے شوپیاں میں 18 جولائی کو بظاہر ایک فرضی تصادم آرائی میں تین مزدوروں کی ہلاکت پر گہرے صدمے اور تشویش کا اظہار کرتے ہوئے واقعہ کی معیاد بند اعلیٰ سطحی تحقیقات کا مطالبہ کیا ہے اور حقائق کو عوام کے سامنے لانے کی مانگ کی ہے۔ پارٹی کے اراکین پارلیمان محمد اکبر لون اور جسٹس (ر) حسنین مسعودی نے اپنے ایک بیان میں مبینہ طور پر ہونے والے فرضی انکائونٹر میں راجوری سے 3 بے گناہ نوجوانوں کو انسانی حقوق کی بدترین مثال قرار دیتے ہوئےکہا ہے کہ سیکورٹی فورسز کے دعووں کے بعد مہلوکین کے لواحقین کی طرف سے سامنے آرہے بیانات سے سارا واقعہ پُراسرار ہوگیا ہے اور اس سے ایک ڈراونے اور گھناونے جرم کے ارتکاب کی بو آرہی ہے۔


انہوں نے کہا کہ افسوسناک اور تشویشناک امر ہے کہ طریقے سے بے گناہوں کا خون بہایا جارہا ہے۔ اس طرح کے واقعات یقینی طور پر صورتحال کو بہتر بنانے کیلئے موثر ثابت نہیں ہوسکے اور اس قسم کے واقعات عوامی غم وغصے اور اشتعال انگیزی کا سبب بنتے ہیں۔ اراکین پارلیمان نے کہا کہ راجوری کے ان تین بدنصیب نوجوانوں کے لاپتہ ہونے اور شوپیان میں تصادم آرائی میں جاں بحق ہونے کے پیچھے کی حقیقت اور عوامل کو لوگوں سامنے لانا ضروری ہے اور اس کے لئے ایک اعلیٰ سطحی، غیر جانبدارانہ اور معیاد بند تحقیقات ضروری ہے تاکہ خاطیوں کو قرار واقعی سزا دی جائے۔



دونوں لیڈران محمد اکبر لون اور جسٹس (ر) حسنین مسعودی نے کہا کہ اس واقعہ نے جموں وکشمیر میں بڑے پیمانے پر لوگوں میں پریشانیوں کو جنم دیا ہے۔ انہوں نے امید ظاہر کی کہ واقعہ کی انکوائری میں میں افسپا کو حائل آنے نہیں دیا جائیگا اور خاطیوں کا پتہ لگانے کے لئے ایک غیرجانبدارانہ، معیاد بند اور آزادانہ تحقیقات ہونے دی جائے گی۔
Published by: Nisar Ahmad
First published: Aug 11, 2020 10:07 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading