نیشنل کانفرنس کے رکن پارلیمنٹ اکبرلون نے مسئلہ کشمیرکے حل کے لئے پیش کیا فارمولہ

نیشنل کانفرنس کے رکن پارلیمنٹ اکبرلون کوزندہ پکڑنےاوران سے بات کرنے کی بھی وکالت کی۔ انہوں نے کہا کہ کوشش کی جانی چاہئے کہ جموں وکشمیرمیں انکاونٹربند ہوجائے۔

Jun 19, 2019 05:15 PM IST | Updated on: Jun 19, 2019 05:31 PM IST
نیشنل کانفرنس کے رکن پارلیمنٹ اکبرلون نے مسئلہ کشمیرکے حل کے لئے پیش کیا فارمولہ

نیشنل کانفرنس کے رکن پارلیمنٹ محمد اکبر لون نے پھر جموں وکشمیر کولےکر پاکستان سے بات چیت کرنے کی وکالت کی ہے۔ فائل فوٹو

بارہمولہ سے نیشنل کانفرنس کے رکن پارلیمنٹ اکبرلون نے پھرجموں وکشمیرکولے کر پاکستان سے بات چیت کرنے کی وکالت کی ہے۔ مرکزی حکومت پہلے ہی کہہ چکی ہے کہ جب تک پاکستان دہشت گردی پرلگام نہیں لگائے گا، جب تک بات چیت نہیں ہوگی، لیکن رکن پارلیمنٹ اکبرلون نے مطالبہ کیا ہے کہ کشمیرمیں سیکورٹی اہلکاروں کے آپریشن آل آوٹ میں نرمی برتی جانی چاہئے۔

اکبرلون نےکہا 'اس کا ایک حل ہےجموں وکشمیر۔ ہندوستان اورپاکستان تینوں ایک ٹیبل پربیٹھ جائیں اوراس کا حل نکالیں۔ میں آپ کویہ واضح طورپرکہہ دیتا ہوں، کوئی کشمیریوں کو ہندوستان سےالگ نہیں کرسکتا۔ کشمیرمطلب ہندوستان، لیکن پاکستان کےجوحکمراں ہیں، چاہے جوپہلے والے ہوں یا آج کے ہوں، وہ جوپیارکشمیرسےکرتے ہیں، اسے صحیح طرح سے لینا چاہئے'۔

Loading...

اکبرلون نے دہشت گردوں کو زندہ پکڑنےاوران سے بات کرنے کی بھی وکالت کی۔ انہوں نے کہا کہ کوشش کی جانی چاہئے کہ جموں وکشمیرمیں انکاونٹربند ہوجائے۔ اکبرلون نےکہا کہ جموں وکشمیرمیں سیکورٹی اہلکاروں کے جوان مریں یا پھردہشت گرد، سبھی ہمارے بچے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ آل آوٹ اچھا نہیں ہے، انہیں اپنانا چاہئے۔ وہیں بی جے پی لیڈرستیہ پال سنگھ نے محمد اکبرلون کے بیان کا جواب دیتے ہوئے کہا کہ دہشت گردی کے تئیں زیرو ٹولرینس کی حکمت عملی جاری رہنی چاہئے۔

Loading...