உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Neemuch Mob Lynching:سلمان سمجھ کر جین کو مارا، قتل کے بعد سیاسی گھمسان، جانیے اس معاملے میں اب تک کیا کیا ہوا؟

    مدھیہ پردیش کے نیمچ میں موب لینچنگ سے مچا سیاسی گھمسان۔

    مدھیہ پردیش کے نیمچ میں موب لینچنگ سے مچا سیاسی گھمسان۔

    Neemuch Mob Lynching: اس واقعے کی ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہو رہی ہے۔ جس میں دیکھا جا سکتا ہے کہ کس طرح ایک شخص بوڑھے کو مسلسل تھپڑ مار رہا ہے۔ ویڈیو میں ملزم بزرگ کی پٹائی کر رہا ہے اور کہہ رہا ہے کہ تیرا نام محمد ہے کیا ؟

    • Share this:
      Neemuch Mob Lynching:نیمچ، مدھیہ پردیش میں، ایک خاص برادری سے تعلق رکھنے کے شک میں ایک بزرگ شخص کی لنچنگ پر سیاست شروع ہوگئی ہے۔ ساتھ ہی اس پر کانگریس نے براہ راست بی جے پی حکومت کو نشانہ بناتے ہوئے اس واقعہ پر سوالات اٹھائے ہیں۔ کانگریس لیڈر جیتو پٹواری نے نیمچ واقعہ پر کہا کہ بی جے پی والے کسی کو بھی مسلمان ہونے کے شبہ میں مار دیں گے۔ اس معاملے کی تحقیقات ہونی چاہیے اور بہت سے لوگوں کے خلاف کیس درج ہونا چاہیے کیونکہ اس ویڈیو میں بہت سے لوگ نظر آ رہے ہیں۔

      آپ کو بتادیں کہ الزام ہے کہ یہ حملہ ایک بزرگ کو مسلمان سمجھ کر کیا گیا، حالانکہ ان کا تعلق جین برادری سے تھا۔ اس واقعے کا ایک ویڈیو سوشل میڈیا پر تیزی سے وائرل ہو رہا ہے جس کے بعد مدھیہ پردیش کی سیاست میں الزامات کا سلسلہ شروع ہو گیا ہے۔ اس معاملے میں مرکزی ملزم دنیش کشواہا کو پولس نے گرفتار کر لیا ہے۔

      کمل ناتھ نے ریاستی بی جے پی پر لگایا نشانہ
      اس سے قبل کانگریس کے ریاستی صدر کمل ناتھ نے مدھیہ پردیش میں ہونے والے واقعات کے بارے میں سلسلہ وار بتایا، جس پر دگ وجے سنگھ نے ملزم کے بی جے پی لیڈر ہونے پر گرفتاری کو لے کر حکومت کو کٹہرے میں کھڑا کیا۔ کانگریس لیڈر ڈگ وجئے سنگھ نے اس واقعہ سے متعلق ٹویٹ کو ری ٹویٹ کرتے ہوئے لکھا کہ مجھے معلوم ہوا ہے کہ بی جے پی لیڈر دنیش کشواہا کے خلاف دفعہ 302 کے تحت مقدمہ درج کیا گیا ہے۔ دیکھتے ہیں گرفتاری ہوتی ہے یا نہیں۔

      مدھیہ پردیش کے سابق وزیر اعلی اور کانگریس لیڈر کمل ناتھ نے ٹویٹر پر لکھا، ’مدھیہ پردیش میں کیا ہو رہا ہے...؟ کمل ناتھ نے کہا کہ سیونی، گنا، مہو، منڈلا میں قبائلیوں کے لنچنگ کے واقعات اور اب ریاست کے نیمچ ضلع کے مانسا میں ایک معمر شخص کی لنچنگ... جس کا نام بھنور لال جین بتایا جا رہا ہے۔


      یہ بھی پڑھیں:
      عدالت میں قانون پر بھاری پڑسکتا ہے آئینی حق، 1991 کے عبادت گاہ قانون پر چھڑی ہے بحث


      نروتم مشرا نے کانگریس پر کیا جوابی حملہ
      دریں اثنا، مدھیہ پردیش کے وزیر داخلہ نروتم مشرا نے ڈگ وجئے سنگھ اور کمل ناتھ پر جوابی حملہ کیا اور کہا کہ ہندو مذہب یا دیوی دیوتاؤں کے خلاف بات کرنے والوں کاساتھ دگ وجے سنگھ کی جانب سے ملے گا۔ کیا کسی نے ان لوگوں کو دوسرے مذاہب کے خلاف بولنے والے کی حمایت کی ہو یا پھر خود کسی اور مذہب کے خلاف بولا ہو۔ یہ کسی دوسرے مذہب کے بارے میں بول ہی نہیں سکتے۔ نروتم مشرا نے کہا کہ دہلی یونیورسٹی کے پروفیسر رتن لال کی حمایت کرنا بھی اس کی ایک مثال ہے۔

      کیا ہے پورا معاملہ؟
      مدھیہ پردیش کے نیمچ ضلع کے مناسا میں جمعہ کے روز ایک 65 سالہ شخص کو اس اندیشے سے مار دیا گیا کہ وہ ایک خاص برادری سے تعلق رکھتا ہے۔ ساتھ ہی بزرگ پر حملہ کرنے والا ملزم بی جے پی لیڈر بتایا جا رہا ہے۔ بزرگ کی شناخت رتلام ضلع کے بھنور لال جین کے طور پر ہوئی ہے۔ اہل خانہ کے مطابق جین معذور تھا اور اسے یادداشت سے متعلق مسائل تھے۔


      یہ بھی پڑھیں:
      Rape Case: ’حیدرآبادریپ کیس انکاؤنٹرجعلی! سپریم کورٹ کےمقررکردہ پینل نےپولیس کیلئےقتل.....

      یہ بھی پڑھیں:
      Honour Killiing: غیرت کے نام پر بیوی کے رشتے داروں نے کیا اس کے شوہر کا سر عام قتل

      اس واقعے کی ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہو رہی ہے۔ جس میں دیکھا جا سکتا ہے کہ کس طرح ایک شخص بوڑھے کو مسلسل تھپڑ مار رہا ہے۔ ویڈیو میں ملزم بزرگ کی پٹائی کر رہا ہے اور کہہ رہا ہے کہ تیرا نام محمد ہے کیا ؟ جاورہ سے آیا ہے؟ چل تیرا آدھار کارڈ بتا۔ ساتھ ہی متاثرہ بزرگ گڑگڑاتے ہوئے بول رہا ہے کہ 200 روپے لے لو۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: