உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    ہرش وردھن، بابل سپریو سمیت 11 وزرا نے دیا استعفیٰ، 43 وزرا کی آج ہوگی حلف برداری

    وزیر اعظم نریندر مودی کابینہ میں ردوبدل سے قبل اپنی رہائش گاہ پر وزرا کے ساتھ۔ تصویر: نیوز 18

    مودی سرکار کی مرکزی کابینہ کے بڑے ردوبدل سے پہلے مرکزی وزراء ڈاکٹر ہرش وردھن، سنتوش کمار گنگوار، رمیش پوکھریال نشنک، سدانند گوڑا اور دیبوشری چودھری سمیت 11 وزرا نے بدھ کے روز اپنے اپنے عہدوں سے استعفیٰ دے دیا۔

    • Share this:
    نئی دہلی: مودی سرکار (Modi Government) کی مرکزی کابینہ کے بڑے ردوبدل سے پہلے مرکزی وزراء ڈاکٹر ہرش وردھن (Harsh Vardhan)، سنتوش کمار گنگوار (Santosh Kumar Gangwar)، رمیش پوکھریال نشنک (Ramesh Pokhriyal Nishank)، بابل سپریو، سدانند گوڑا اور دیبوشری چودھری اور رتن لال کٹاریہ سمیت 11 وزرا نے بدھ کے روز اپنے اپنے عہدوں سے استعفیٰ دے دیا۔ استعفیٰ دینے والوں میں سنجے دھوترے، تھاور چند گہلوت اور راو صاحب پاٹل، پرتاپ سارنگی کا نام بھی شامل ہے۔ ذرائع کے مطابق صبح میں وزیر اعظم نریندر مودی کی رہائش گاہ پر منعقدہ میٹنگ کے بعد ان وزرا نے بعد استعفیٰ دیا۔

    مرکزی وزیر داخلہ امت شاہ اور بھارتیہ جنتا پارٹی کے قومی صدر جگت پرکاش نڈا نے بھی اس میٹنگ میں حصہ لیا۔ ڈاکٹر ہرش وردھن وزارت صحت وخاندانی بہبود، کمار گنگوار وزارت محنت وروزگار، رمیش پوکھریال نشنک وزارت تعلیم، سدانند گوڑا وزارت کیمیکل اور مسزدیبو چودھری خواتین و ترقیات اطفال کے قلمدان سنبھال رہے تھے۔

    مودی کابینہ سے ڈاکٹر ہرش وردھن، سنتوش کمار گنگوار اور رمیش پوکھریال نشنک سمیت 11 وزرا نے استعفیٰ دے دیا ہے۔
    مودی کابینہ سے ڈاکٹر ہرش وردھن، سنتوش کمار گنگوار اور رمیش پوکھریال نشنک سمیت 11 وزرا نے استعفیٰ دے دیا ہے۔


    اس درمیان آج صبح وزیر عہدے کے ممکنہ چہرے وزیر اعظم نریدنر مودی سے ملنے ان کی رہائش گاہ پر پہنچے۔ وزیر اعظم سے ملنے پہنچے سبھی لیڈران شام 6 بجے راشٹرپتی بھون کے اشوک ہال میں کووڈ پروٹوکول پر عمل کرتے ہوئے ہونے والی حلف برداری تقریب میں وزیر عہدے اور رازداری کا حلف لیں گے۔ وزیر اعظم کے طور پر مئی 2019 میں 57 وزرا کے ساتھ اپنی دوسری مدت کار شروع کرنے کے بعد وزیر اعظم نریندر مودی پہلی بار مرکزی کابینہ میں ردوبل اور توسیع کرنے جا رہے ہیں۔ موجودہ کابینہ میں 53 وزرا ہیں اور ضوابط کے مطابق کابینہ میں اراکین کی تعداد زیادہ سے زیادہ 81 ہوسکتی ہے۔

    رمیش پوکھریال نے بتائی استعفیٰ کی وجہ

    ایک ذرائع نے بتایا کہ رمیش پوکھریال نشنک نے صحت سے متعلق وجوہات کا حوالہ دیتے ہوئے استعفیٰ دیا ہے۔ نشنک کچھ وقت پہلے ہی کووڈ-19 سے متاثر ہوگئے تھے۔ ٹھیک ہونے کے بعد انہیں دوبارہ صحت سے متعلق پریشانیوں کے مد نظر اسپتال میں داخل ہونا پڑا تھا۔ اسی وجہ سے انہوں نے کابینہ سے استعفیٰ دینے کی پیشکش کی تھی۔

     

     
    Published by:Nisar Ahmad
    First published: