உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    LPGگیس سلینڈر پر سبسڈی پانے والوں کو جھٹکا،اب صرف انہیں ہی ملیں گے سبسبڈی کے 200 روپیے

    رسوئی گیس ایل پی جی سلینڈر۔ (Rasoi Gas LPG Cylinder)

    رسوئی گیس ایل پی جی سلینڈر۔ (Rasoi Gas LPG Cylinder)

    ملک میں تقریباً 30.5 کروڑ ایل پی جی کنکشن ہیں۔ اس میں سے 9 کروڑ پی ایم اجولا یوجنا کے تحت مہیرا کرائے گئے ہیں۔ گزشتہ 6 مہینوں میں ایل پی جی کی قیمتوں میں صرف 7 فیصد اضافہ ہوا ہے۔

    • Share this:
      نئی دہلی:حکومت نے رسوئی گیس ایل پی جی پر ملنے والی سبسڈی کو محدود کر دیا ہے۔ سبسڈی لینے والے لاکھوں صارفین کو اب مارکیٹ کی قیمت ادا کرنی ہوگی۔ اب اجولا اسکیم کے تحت مفت کنکشن پانے والے صرف 9 کروڑ غریب خواتین اور دیگر مستفیدین کو ہی سبسڈی ملے گی۔

      تیل سکریٹری پنکج جین نے ایک بیان میں کہا کہ جون 2020 سے ایل پی جی پر کوئی سبسڈی نہیں دی جاتی ہے اور صرف وہی سبسڈی فراہم کی جائے گی جس کا اعلان وزیر خزانہ نرملا سیتارامن نے 21 مارچ کو کیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ کوویڈ کے ابتدائی دنوں سے ایل پی جی صارفین کے لیے کوئی سبسڈی نہیں تھی۔ انہوں نے کہا کہ تب سے صرف وہی سبسڈی ہے جو اب اجولا سے فائدہ اٹھانے والوں کے لیے پیش کی گئی ہے۔

      مرکزی وزیر خزانہ سیتا رمن نے پٹرول پر ایکسائز ڈیوٹی میں 8 روپے فی لیٹر اور ڈیزل پر 6 روپے کی ریکارڈ کمی کا اعلان کرتے ہوئے کہا تھا کہ اجولا اسکیم سے فائدہ اٹھانے والوں کو ایک سال میں 12 سلینڈرس پر 200 روپے فی سلنڈر کی سبسڈی ملے گی۔

      قومی دارالحکومت میں 14.2 کلوگرام ایل پی جی سلینڈر کی قیمت 1,003 روپے ہے۔ پردھان منتری اجولا یوجنا کے استفادہ کنندگان کو براہ راست ان کے بینک اکاؤنٹ میں 200 روپے کی سبسڈی ملے گی اور ان کے لیے قیمت 803 روپے فی 14.2 کلوگرام سلینڈر رہے گی۔ باقی کے لیے دہلی میں اس کی قیمت 1,003 روپے ہوگی۔ حکومت کو 200 روپے کی سبسڈی پر 6,100 کروڑ روپے خرچ کرنے ہوں گے۔

      یہ بھی پڑھیں:
      وستارا ایئرلائنس پرDGCAکا ایکشن، اس وجہ سے کمپنی پر لگایا10لاکھ کا جرمانہ

      یہ بھی پڑھیں:
      Monsoon Update:اب شمال مشرق پہنچ گیا ہے مانسون، ملک کے ان حصوں میں بارش کا جاری ہوا الرٹ

      ملک میں تقریباً 30.5 کروڑ ایل پی جی کنکشن ہیں۔ اس میں سے 9 کروڑ پی ایم اجولا یوجنا کے تحت مہیرا کرائے گئے ہیں۔ گزشتہ 6 مہینوں میں ایل پی جی کی قیمتوں میں صرف 7 فیصد اضافہ ہوا ہے، جبکہ سعودی سی پی (ایل پی جی کی قیمت کے لیے استعمال ہونے والا بینچ مارک) 43 فیصد بڑھ گیا ہے۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: