ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

دہلی فسادات پر دہلی پولیس نے درج کئے 123 ایف آئی آر، 630 گرفتار

شمال مشرقی دہلی کے موجپور، چاند باغ، گوکلپوری، کھجوری سمیت اوردیگرکئی علاقوں میں اس ہفتہ کےشروع میں شہریت ترمیمی قانون (سی اے اے) پرفساد ہوئے تھے، جس میں اب تک 42 افرادکی موت ہوچکی ہے جبکہ تقریباً 200 زخمیوں کو مختلف اسپتالوں میں داخل کرایا گیا ہے۔

  • Share this:
دہلی فسادات پر دہلی پولیس نے درج کئے 123 ایف آئی آر، 630 گرفتار
دہلی فسادات پر دہلی پولیس نے درج کئے 123 ایف آئی آر، 630 گرفتار

نئی دہلی: شمال مشرقی دہلی کےفسادات سے متاثرہ علاقوں میں بتدریج معمول کی زندگی میں واپس لوٹ رہی ہے۔ اس کے ساتھ ہی پولیس نے فسادیوں کے خلاف کارروائی شروع کردی ہے اور اب تک 123 ایف آئی آر درج کرکے630 افراد کو پوچھ گچھ کےلئے حراست میں لیا ہے یا گرفتارکیا ہے۔ اس ہفتے کے شروع میں شمال مشرقی دہلی کے موجپور، چاند باغ، گوکلپوری، کھجوری سمیت اور دیگر کئی علاقوں میں اس ہفتہ کے شروع میں شہریت ترمیمی قانون (سی اے اے) پرفساد ہوئے تھے، جس میں اب تک 42 افراد کی موت ہوچکی ہے جبکہ تقریباً 200 زخمیوں کو مختلف اسپتالوں میں داخل کرایا گیا ہے۔ جہاں علاج جاری ہے۔ جاں بحق ہونے والوں میں دہلی پولیس کے ہیڈ کانسٹیبل رتن لال اور انٹیلی جنس بیورو کا جوان انکت شرما شامل بھی ہیں۔

دہلی پولیس کے ترجمان مندیپ سنگھ رندھاوا نے جمعہ کے روز کہا کہ فسادات کے سلسلے میں 123 ایف آئی آر درج کی گئیں ہیں، جن میں سے 23 فائرنگ کے واقعات ہیں۔ انہوں نےکہاکہ فسادیوں کی شناخت کرنےاور انہیں تحویل میں لینےکا کام تیزی سے جاری ہے۔ اب تک 630 افراد کو حراست میں لیا گیا ہے یا انہیں گرفتارکیا گیا ہے۔


پُرتشدد بھیڑ نے بی ایس ایف جوان محمدانیس کےگھر میں بھی آگ لگا دی تھی۔
پُرتشدد بھیڑ نے بی ایس ایف جوان محمدانیس کےگھر میں بھی آگ لگا دی تھی۔


فسادات کی تحقیقات کےلئےجمعرات کو خصوصی ٹاسک فورس (ایس آئی ٹی) تشکیل دی گئی۔ ایس آئی ٹی کی ایک ٹیم کی سربراہی ڈپٹی کمشنر جواے ٹرکی کر رہے ہیں جبکہ دوسری ٹیم کی سربراہی ڈپٹی کمشنر راجیش دیو کر رہے ہیں۔ ایس آئی ٹی کی دونوں ٹیموں میں چار چار اسسٹنٹ کمشنر پولیس (اے سی پی) کے علاوہ تین تین، چار چار سب انسپکٹرز اور پولیس اہلکاروں پر مشتمل ہیں۔ ایس آئی ٹی کی سربراہی کرائم برانچ کے ایڈیشنل کمشنر بی کے سنگھ کررہے ہیں۔

شمال مشرقی دہلی میں ہوئے فساد نے انسانیت کو شرمسار کردیا اور لوگوں کی گاڑیوں کو بے دردی سے نذرآتش کیا گیا۔
شمال مشرقی دہلی میں ہوئے فساد نے انسانیت کو شرمسار کردیا اور لوگوں کی گاڑیوں کو بے دردی سے نذرآتش کیا گیا۔


دونوں ٹیموں نے تشدد اور اشتعال سے متعلق مقدمات کی تفتیش فوری طور پرسنبھال لی ہے۔ اس کے بعد اب دہلی تشدد سے متعلق تمام ایف آئی آرایس آئی ٹی کے حوالے کردیئےجارہے ہیں۔ زمینی حقیقت جاننےکےلئےلیفٹیننٹ گورنر انیل بیجل نے آج فساد زدہ علاقوں کا دورہ کیا اور لوگوں سے ملاقات کی اور انہیں کسی بھی طرح سے ڈرنے اور تحمل کی تلقین کی۔ دہلی پولیس کےخصوصی کمشنر برائے امن و قانون ایس این شریواستو خود ہی فسادزدہ علاقوں کا دورہ کررہے ہیں۔  ایس این شریواستو کو آج دہلی پولیس کمشنرکا اضافی چارج بھی سونپا گیا ہے۔ پولیس کمشنر امولیا پٹنائک کل ریٹائر ہو رہے ہیں۔ امولیا پٹنائک کی میعاد 31 جنوری کو ختم ہوگئی تھی، لیکن دہلی میں قانون ساز اسمبلی کے انتخابات کی وجہ سے اس میعاد میں ایک ماہ کی توسیع کردی گئی تھی۔

فساد متاثرہ علاقوں میں پولیس کی ٹیمیں گشت کرکے علاقے میں امن وامان قائم کرنا چاہتی ہیں۔
فساد متاثرہ علاقوں میں پولیس کی ٹیمیں گشت کرکے علاقے میں امن وامان قائم کرنا چاہتی ہیں۔


فسادات میں، عام آدمی پارٹی (آپ) کےنہرو وہار سےتعلق رکھنے والےکونسلر طاہرحسین کا نام آیا ہے۔ پولیس نےگذشتہ روز چاند باغ میں واقع ان کے گھر اور فیکٹری سیل کردی تھی۔ طاہرحسین کےگھر سے بڑی مقدار میں تیزاب، بوتل بم بنانے والی اشیاء اور پتھر وغیرہ برآمد ہوئے ہیں۔ طاہر حسین اور ان کے حامیوں پر انٹیلی جنس بیورو کے جوان انکیت شرما کو قتل کرنےاور نعش کو قریبی نالے میں پھینکنےکا الزام ہے۔ پولیس طاہر حسین پرقتل اور فسادکا مقدمہ درج کرکےاس کی تلاش میں ہے۔ محکمہ فارنسک کی ٹیم بھی آج تفتیش کےلئے طاہر حسین کےگھر پہنچی۔

نیوز ایجنسی یو این آئی اردو کی رپورٹ
First published: Feb 28, 2020 08:45 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading