اپنا ضلع منتخب کریں۔

    چھتیس گڑھ کے بستر میں سیکورٹی فورسز کے ساتھ تصادم، 4 ماؤنواز ہلاک، پولیس کی بروقت کاروائی

    جنگلوں میں تلاشی مہم جاری ہے

    جنگلوں میں تلاشی مہم جاری ہے

    انہوں نے کہا کہ موقع سے برآمد ہونے والے ہتھیاروں میں ایک 303. رائفل اور ایک 315 بور رائفل شامل ہے۔ آئی جی نے مزید کہا کہ ہمیں ابھی ماؤنوازوں کی شناخت کا پتہ نہیں چل سکا ہے اور آس پاس کے جنگلوں میں تلاشی مہم جاری ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Chhattisgarh | Mumbai | Jammu | Delhi | Hyderabad
    • Share this:
      چھتیس گڑھ پولیس نے بتایا کہ چھتیس گڑھ کے بستر کے ضلع بیجاپور میں ہفتہ کو سیکورٹی فورسز کے ساتھ مسلح تصادم میں دو خواتین کیڈروں سمیت چار ماؤنواز مارے گئے۔ پولیس نے بتایا کہ میرٹور پولیس اسٹیشن حدود کے تحت پومرا گاؤں کے قریب ایک جنگل میں صبح 7:30 بجے کے قریب فائرنگ کا تبادلہ ہوا، پولیس نے مزید کہا کہ علاقے میں تلاشی مہم ابھی بھی جاری ہے۔

      ہندوستان ٹائمز کے مطابق انسپکٹر جنرل آف پولیس (بستر رینج) سندرراج پی نے ایک بیان میں کہا کہ جنگل میں ماؤنوازوں کے جمع ہونے کے بارے میں ہمیں مخصوص اطلاعات ملنے کے بعد سیکورٹی فورسز کی مشترکہ ٹیمیں ماؤنواز مخالف آپریشن پر نکل رہی تھیں۔ اس ٹیم میں ڈسٹرکٹ ریزرو گارڈ (DRG)، اسپیشل ٹاسک فورس (STF) اور سینٹرل ریزرو پولیس فورس (CRPF) کے اہلکار شامل تھے۔

      آئی جی نے کہا کہ پولیس کو کمیونسٹ پارٹی آف انڈیا (ماؤسٹ) کی ڈویژنل کمیٹی کے ارکان موہن کدتی اور سمترا کے ساتھ پومرا-ہلور جنگل کے قریب 30 تا 40 ساتھیوں کے چھپے ہونے کی اطلاع تھی۔

      آئی جی نے کہا کہ جب ڈی آر جی کی ایک ٹیم ماؤنوازوں پر گھس گئی، تو انہوں نے فائرنگ شروع کر دی اور فائرنگ کا تبادلہ رک جانے کے بعد چار ماؤنوازوں کی لاشیں تین ہتھیاروں کے ساتھ برآمد کی گئیں، جن میں دو خواتین بھی شامل تھے۔

      یہ بھی پڑھیں: 

      انہوں نے کہا کہ موقع سے برآمد ہونے والے ہتھیاروں میں ایک 303. رائفل اور ایک 315 بور رائفل شامل ہے۔ آئی جی نے مزید کہا کہ ہمیں ابھی ماؤنوازوں کی شناخت کا پتہ نہیں چل سکا ہے اور آس پاس کے جنگلوں میں تلاشی مہم جاری ہے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: