உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    دہلی کے ممبران اسمبلی کو 12 ہزار کی جگہ 50 ہزار روپے ملے گی سیلری

    نئی دہلی :دہلی کے ممبران اسمبلی کی تنخواہ جلد ہی چار گنا سے زیادہ بڑھنے والی ہے۔ ممبر اسمبلی کی تنخواہ بڑھائے جانے سے متعلق قائم کمیٹی نے منگل کو اپنی رپورٹ اسمبلی اسپیکرکو پیش کردی ہے ۔

    نئی دہلی :دہلی کے ممبران اسمبلی کی تنخواہ جلد ہی چار گنا سے زیادہ بڑھنے والی ہے۔ ممبر اسمبلی کی تنخواہ بڑھائے جانے سے متعلق قائم کمیٹی نے منگل کو اپنی رپورٹ اسمبلی اسپیکرکو پیش کردی ہے ۔

    نئی دہلی :دہلی کے ممبران اسمبلی کی تنخواہ جلد ہی چار گنا سے زیادہ بڑھنے والی ہے۔ ممبر اسمبلی کی تنخواہ بڑھائے جانے سے متعلق قائم کمیٹی نے منگل کو اپنی رپورٹ اسمبلی اسپیکرکو پیش کردی ہے ۔

    • News18
    • Last Updated :
    • Share this:

      نئی دہلی :دہلی کے ممبران اسمبلی کی تنخواہ جلد ہی چار گنا سے زیادہ بڑھنے والی ہے۔ ممبر اسمبلی کی تنخواہ بڑھائے جانے سے متعلق قائم کمیٹی نے منگل کو اپنی رپورٹ اسمبلی اسپیکرکو پیش کردی ہے ۔ کمیٹی نے ممبران اسمبلی کی تنخواہ میں ترمیم کی سفارش کی ہے۔ اب حکومت کو فیصلہ لینا ہے کہ وہ کمیٹی کی تجویز کے حساب سے ممبران اسمبلی کی تنخواہ میں اضافہ کرتی ہے یا نہیں۔ تاہم حکومت اراکین اسمبلی کی تنخواہ بڑھائے جانے کو لے کر پہلے ہی اپنی حمایت دے چکی ہے۔


      دہلی کے ممبران اسمبلی کی تنخواہ میں اضافہ سے متعلق قائم پی ڈی ٹی اچاري کمیٹی نے منگل کو اپنی رپورٹ اسمبلی اسپیکر رام نواس گوئل کو پیش کی ۔کمیٹی نے اپنی رپورٹ میں ممبران اسمبلی کی سیلری اور ان کو ملنے والی مراعات میں کئی گنا اضافہ کی تجویز پیش کی ہے۔


      کمیٹی نے اپنی رپورٹ میں ممبران اسمبلی کو ماہانہ دو لاکھ 35 ہزار روپے تنخواہ دینے کی تجویز پیش کی ہے۔ اس میں بیسک سیلری 12 ہزار روپے سے بڑھا کر 50 ہزار روپے ، اسمبلی الاؤنس 18 ہزار روپے سے بڑھا کر50 ہزار روپے ، دفتر کے کمپیوٹر آپریٹر، آفس اسسٹنٹ، ریسرچ اور دیگر اخراجات کیلئے 70 ہزار روپے، دفتر کے کرایہ کے کیلئے 25 ہزار روپے، كميونكیشن الائونس 8ہزار روپے سے بڑھا کر دس ہزار روپے ، ٹرانسپورٹ الاؤنس چھ ہزار سے بڑھا کر 30 ہزار روپے ، اسمبلی سیشن کے دوران یومیہ بھتہ ایک ہزار سے بڑھا کر دو ہزار روپے اور دفتر کے فرنشننگ کے لئے یک مشت ایک لاکھ روپے دیئے جانے کی وکالت کی ہے۔


      اب اسمبلی کے اسپیکر یہ رپورٹ حکومت کو سونپیںگے۔ ممبران اسمبلی کی سیلری بڑھانے کا آخری فیصلہ دہلی حکومت ہی لے گی۔تاہم حکومت اراکین اسمبلی کی تنخواہ بڑھانے کا فیصلہ لینے کے بعد حکومت کو یہ تجویز اسمبلی سے منظور کرانی ہوگی ۔ مانا جا رہا ہے کہ موسم سرما کے اجلاس میں حکومت ممبران اسمبلی کے نئے گریڈ کی تجویز لا سکتی ہے۔


      ادھر دہلی اسمبلی میں اپوزیشن پارٹی بی جے پی اس کی مخالفت کر رہی ہے۔ تین ممبران اسمبلی والے اپوزیشن کا الزام ہے کہ حکومت کی ترجیحات بدل گئی ہیں۔ عام آدمی کے بجائے اب حکومت کی پہلی ترجیح ممبران اسمبلی کی سیلری ہو گئی ہے۔ بی جے پی دہلی کے صدر ستیش اپادھیائے کا کہنا ہے کہ دہلی کے عوام کو طے کرنا ہے کہ یہ کیسی حکومت ہے۔ ان کی ترجیحات کیا ہیں اور جو وعدے کئے تھے ان کا کیا ہوا۔ قول و فعل میں زمین آسمان کا تضاد ہے۔


      دریں اثنا دہلی پردیش کانگریس کمیٹی کے صدر اجے ماکن کا کہنا ہے کہ دکھ کی بات ہے کہ یہ عام آدمی کی پارٹی ہے۔ انہوں نے 400 فیصد تنخواہ بڑھا دیا اور 21 پارليمنٹري ممبر بنا دیے۔ ایک صفائی ملازم نے تنخواہ نہ ملنے سے خود کشی کر لی اور یہ لوگ مزے کر رہے ہیں۔

      First published: