ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال نظربند؟ عام آدمی پارٹی کے دعوے کو دلی پولیس نے بتایا جھوٹا

عآپ نے ٹویٹ کر کے کہا '' پیر کے روز سنگھو بارڈر پر کسانوں سے ملاقات کر لوٹنے کے بعد بی جے پی کی دلی پولیس نے وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال کو نظربند کر لیا۔ کسی کو بھی ان کے گھر میں جانے یا باہر آنے کی اجازت نہیں ہے''۔

  • Share this:
وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال نظربند؟ عام آدمی پارٹی کے دعوے کو دلی پولیس نے بتایا جھوٹا
دہلی کے وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال کی فائل فوٹو

نئی دہلی۔ کسانوں کی تحریک کے ساتھ ہی ملک کی سیاست بھی گرم ہو گئی ہے۔ دہلی کے وزیر اعلی اروند کیجریوال (Arvind kejriwal) نے پیر کے روز سنگھو بارڈر (Singhu Border) جا کر احتجاج کار کسانوں سے ملاقات کی تھی۔ انہوں نے ایک سیوادار کی طرح ان کی سیوا کرنے کی بات کہی تھی۔ وزیر اعلیٰ کیجریوال نے کسانوں کے مظاہرے کو کھلے طور پر اپنی حمایت دینے کا بھی اعلان کیا تھا۔ اب عام آدمی پارٹی (AAP) نے دلی پولیس پر وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال کو نظربند (House Arrest) کرنے کا الزام لگایا ہے۔ عآپ نے ٹویٹ کر کے کہا کہ پیر کے روز سنگھو بارڈر سے لوٹنے کے بعد دلی پولیس نے وزیر اعلیٰ کیجریوال کو نظربند کر دیا ہے۔



عآپ نے ٹویٹ کر کے کہا '' پیر کے روز سنگھو بارڈر پر کسانوں سے ملاقات کر لوٹنے کے بعد بی جے پی کی دلی پولیس نے وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال کو نظربند کر لیا۔ کسی کو بھی ان کے گھر میں جانے یا باہر آنے کی اجازت نہیں ہے''۔



حالانکہ، اب دلی پولیس نے عآپ کے اس الزام کو یکسر مسترد کر دیا ہے۔ ڈی سی پی (نارتھ) اینٹو الفونس نے عام آدمی پارٹی کے دعوے کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ دلی کے وزیر اعلیٰ ہونے کے ناطے اروند کیجریوال جہاں بھی چاہیں جا سکتے ہیں۔ انہوں نے عآپ کے بیان کو غلط بتایا ہے۔


عآپ لیڈر سوربھ بھاردواج نے مرکزی حکومت پر سنگین الزام لگایا ہے۔ انہوں نے کہا '' وزیر اعلیٰ کیجریوال نے پیر کو سنگھو بارڈر پر کسانوں سے ملاقات کی تھی۔ انہوں نے کہا تھا کہ وہ ایک سیوادار کی طرح ان کی سیوا اور حمایت کریں گے۔ ان کے واپس لوٹنے پر دلی پولیس نے ان کے گھر کے چاروں طرف سے بیریکیڈنگ کر دی اور انہیں نظربندی جیسی حالت میں ڈال دیا۔ یہ سب وزارت داخلہ کے اشارے پر کیا گیا''۔ مرکزی حکومت پر حملہ آور سوربھ بھاردواج نے کہا کہ نہ تو کسی کو اندر جانے دیا جا رہا ہے اور نہ ہی وزیر اعلیٰ کیجریوال کو باہر آنے دیا جا رہا ہے۔
Published by: Nadeem Ahmad
First published: Dec 08, 2020 01:50 PM IST