உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    ابھینندن ورتھمان کا MiG-21 سکواڈرن کی خدمات کو کیا جائے گا ختم، کیا رہی اب تک کی خدمات؟ جانیے مکمل تفصیلات

    اگلے 2 تا 3 سال کے دوران MiG-21 بائیسن کے تمام سکواڈرن ریٹائر ہو جائیں گے۔

    اگلے 2 تا 3 سال کے دوران MiG-21 بائیسن کے تمام سکواڈرن ریٹائر ہو جائیں گے۔

    Abhinandan Varthamans MiG 21: سال 1960 کی دہائی میں ہندوستانی فضائیہ میں شامل ہونے کے بعد سے متعدد حادثات کی وجہ سے مگ 21 کو اڑتا ہوا تابوت جیسے عرفی ناموں سے بھی پکارا جاتا ہے۔ پچھلے 60 سال میں 400 سے زیادہ MiG-21 طیارے گر کر تباہ ہو چکے ہیں، جن میں 200 سے زیادہ پائلٹ اور 60 عام شہری مارے گئے ہیں۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Delhi | Mumbai | Jammalamadugu | Lucknow | Hyderabad
    • Share this:
      ہندوستانی فضائیہ (IAF) میں تین سال بعد سابق ونگ کمانڈر ابھینندن ورتھمان (Wing Commander Abhinandan Varthaman) کے MiG-21 سکواڈرن کی خدمات کو بہت جلد ختم کیا جائے گا۔ اسی MiG-21 نے لائن آف کنٹرول پر ایک پاکستانی F-16 لڑاکا طیارے کو مار گرایا تھا۔ سری نگر میں قائم ہندوستانی فضائیہ کا 51 سکواڈرن اس ماہ کے آخر تک ختم ہو جائے گا۔ اب گروپ کیپٹن ابھینندن ورتھمان کا تعلق مگ 21 بائیسن کے اس سکواڈرن سے ہے۔

      سکواڈرن کے اثاثےہوائی جہاز، سازوسامان اور عملہ دیگر مگ 21 بائیسن اسکواڈرن میں تقسیم کیا جائے گا۔ اگلے 2 تا 3 سال کے دوران MiG-21 بائیسن کے تمام سکواڈرن ریٹائر ہو جائیں گے۔ اس سکواڈرن کے ریٹائر ہونے کے ساتھ ہی ہندوستانی فضائیہ کے پاس مگ 21 کے چار سکواڈرن ہوں گے۔ IAF میں سکواڈرن کے بند ہونے کو نمبر پلیٹنگ کہا جاتا ہے۔ نئے طیاروں کے داخلے کے ساتھ اسکواڈرن کو دوبارہ فعال کر دیا جائے اس طرح کی خدمات حاصل کی جائے گی۔

      51 اسکواڈرن کا گروپ کیپٹن ابھینندن ورتھمان نے فروری میں بالاکوٹ فضائی حملے کے جواب میں پاک فضائیہ کی جانب سے فضائی آپریشن شروع کرنے کے بعد کتوں کی لڑائی میں پاکستانی F16 کو مار گرایا۔ اس وقت کے ونگ کمانڈر ورتھمان کا لڑاکا طیارہ مار گرایا گیا لیکن وہ باہر نکلنے میں کامیاب ہو گیا اور لائن آف کنٹرول کے پار اترتے ہی پاکستانی قید میں تھا۔ بعد میں انہیں ویر چکر سے نوازا گیا۔

      مشہور 18 سکواڈرن انڈین ایئر فورس کا واحد پرم ویر چکر اسکواڈرن 2016 میں نمبر پلیٹڈ تھا اور بعد میں تیجس کے داخلے کے ساتھ دوبارہ اس کی خدمات حاصل کی گئی۔ اسکواڈرن نے 1971 کی جنگ میں شاندار کردار ادا کیا اور فلائنگ آفیسر نرمل جیت سنگھ سیکھون کو بعد از مرگ پرم ویر چکر سے نوازا گیا۔ اسی طرح 17 اسکواڈرن "گولڈن ایروز کو 10 ستمبر 2019 کو امبالا میں دوبارہ زندہ کیا گیا، جو پہلا رافیل سکواڈرن بن گیا۔ اسکواڈرن کو اصل میں 1 اکتوبر 1951 کو ایئر فورس اسٹیشن، امبالا میں پرواز کیا گیا تھا۔ 1955 میں یہ پہلے جیٹ فائٹر، افسانوی ڈی ہیولینڈ ویمپائر سے لیس تھا۔

      یہ بھی پڑھیں:


      یہ بھی پڑھیں: 

      1960 کی دہائی میں ہندوستانی فضائیہ میں شامل ہونے کے بعد سے متعدد حادثات کی وجہ سے مگ 21 کو اڑتا ہوا تابوت جیسے عرفی ناموں سے بھی پکارا جاتا ہے۔ پچھلے 60 سال میں 400 سے زیادہ MiG-21 طیارے گر کر تباہ ہو چکے ہیں، جن میں 200 سے زیادہ پائلٹ اور 60 عام شہری مارے گئے ہیں۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: