ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

تین سال پہلے جس لڑکی کو بنایا تھا شکار، اس کے ساتھ پھر کیا گینگ ریپ

روہتک۔ تین سال پہلے کے گینگ ریپ کی شکار طالبہ نے سمجھوتہ نہیں کیا تو اغوا کر انہی ملزمان نے پھر سے اس کا گینگ ریپ کر دیا۔

  • IBN Khabar
  • Last Updated: Jul 18, 2016 01:49 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
تین سال پہلے جس لڑکی کو بنایا تھا شکار، اس کے ساتھ پھر کیا گینگ ریپ
روہتک۔ تین سال پہلے کے گینگ ریپ کی شکار طالبہ نے سمجھوتہ نہیں کیا تو اغوا کر انہی ملزمان نے پھر سے اس کا گینگ ریپ کر دیا۔

روہتک۔ تین سال پہلے کے گینگ ریپ کی شکار طالبہ نے سمجھوتہ نہیں کیا تو اغوا کر انہی ملزمان نے پھر سے اس کا گینگ ریپ کر دیا۔ طالبہ نے الزام لگایا کہ کالج سے نکلتے ہی کار میں سوار 5 نوجوانوں نے اس کا اغوا کیا اور ویران جگہ پر لے جاکر اس کے ساتھ گینگ ریپ کیا۔ طالبہ کو بیہوشی کی حالت میں روہتک کے ایک اسپتال میں بھرتی کروایا گیا جہاں سے اسے پی جی آئی روہتک ریفر کر دیا گیا۔


رپورٹس کے مطابق، گینگ ریپ کے 3 سال پرانے معاملے میں 50 لاکھ روپے میں سمجھوتہ نہیں کرنا متاثرہ طالبہ کو مہنگا پڑ گیا۔ بدھ کو کار سوار 5 ملزمان نے متاثرہ طالبہ کا اس کے کالج کے پاس سے ہی اغوا کر لیا اور نشہ آور مادہ پلا کر کار میں ڈال کر اسے ویران جگہ پر لے گئے۔ گینگ ریپ کے بعد ملزم بیہوش طالبہ کو سكھ پورا چوک واقع پاور ہاؤس کے قریب جھاڑیوں میں پھینک کر فرار ہو گئے۔


بھوانی کی متاثرہ طالبہ نے جمعرات کو ہوش میں آنے پر پولیس کو بیان دے کر یہ انکشاف کیا ہے۔ اس نے پہلے گینگ ریپ کرنے والے 5 نوجوانوں پر یہ الزام لگایا ہے اور ان کے خلاف خواتین تھانہ پولیس کو تحریری شکایت دی گئی ہے۔ پولیس کا کہنا ہے کہ ابھی طالبہ پی جی آئی روہتک میں بھرتی  ہے جہاں اس کا علاج چل رہا ہے۔


لڑکی کے بیان کی بنیاد پر بھوانی کے 5 نوجوانوں کے خلاف پولیس نے مقدمہ درج کر لیا ہے۔ ملزمان کی گرفتاری کے لئے ٹیمیں تشکیل دے دی گئی ہیں لیکن ابھی تک کوئی بھی ملزم گرفتار نہیں ہو پایا ہے۔ ان تمام ملزمان نے 2013 میں لڑکی کی آبروریزی کی تھی۔
First published: Jul 18, 2016 01:40 PM IST