ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

مستقبل کا بھارت کے بعد ذہنی و فکری ہم آہنگی ، کیا آر ایس ایس مٹا پائے گا سماجی دوریاں 

آر ایس ایس کو امید ہے کہ اس کتاب کے ذریعہ وہ غلط فہمیوں کو دور کرنے میں کافی حد تک کامیاب ہوگی ۔ دراصل ڈاکٹر خواجہ افتخار کی تصنیف کردہ کتاب ذہنی و فکری ہم آہنگی کو چار جولائی کو لانچ کیا جائے گا ۔ خاص بات یہ ہے کہ اس کتاب کارسم اجرا آر ایس ایس سربراہ موہن بھاگوت کریں گے اور یہ تقریب آن لائن منعقد ہوگی ۔

  • Share this:
مستقبل کا بھارت کے بعد ذہنی و فکری ہم آہنگی ، کیا آر ایس ایس مٹا پائے گا سماجی دوریاں 
مستقبل کا بھارت کے بعد ذہنی و فکری ہم آہنگی ، کیا آر ایس ایس مٹا پائے گا سماجی دوریاں 

نئی دہلی : ملک کی اقلیت اور خاص طور سے مسلمانوں کا ہندوستان میں اعتماد جیتنے اور اپنی جگہ بنانے کے لئے آر ایس ایس کی جانب سے اقدامات و کوششیں ہوتی رہی ہیں اور اسی کڑی میں سر سنگھ چالک یعنی آر ایس ایس سربراہ موہن بھاگوت کی کتاب مستقبل کا بھارت کے بعد ایک اور کتاب لائی جارہی ہے  ۔ آر ایس ایس کو امید ہے کہ اس کتاب کے ذریعہ وہ غلط فہمیوں کو دور کرنے میں کافی حد تک کامیاب ہوگی ۔ دراصل ڈاکٹر خواجہ افتخار کی تصنیف کردہ کتاب ذہنی و فکری ہم آہنگی کو چار جولائی کو لانچ کیا جائے گا ۔


خاص بات یہ ہے کہ اس کتاب کارسم اجرا آر ایس ایس سربراہ موہن بھاگوت کریں گے اور یہ تقریب آن لائن منعقد ہوگی ۔ غورطلب ہے کہ ہندوستان میں آر ایس ایس اور ہندتو کو لے کر مسلمانوں میں خاص طورپر ناراضگی پائی جاتی ہے اور آر ایس ایس نے مسلم راشٹریہ منچ بناکر اس دوری کو کم کرنے کی پوری کوشش کی ہے ۔ یہاں تک کہ بابری مسجد کی جگہ رام مندر کی تعمیر کے لئے زمین دینے کے لئے مسلم راشٹریہ منچ آگے آکر بولتی رہی ہے ، جس کی وجہ سے آر ایس ایس اور اقلیتوں خاص طورپر عام مسلم سماج آر ایس ایس کو پسند نہیں کرتا یا دوسرے لفظوں میں کہا جاسکتا ہے کہ دونوں میں فکری طورپر کافی زیادہ دوری ہے ۔


تاہم خواجہ افتخار کی کتاب ووٹ بینک کی سیاست سے لے کر ہندوستان میں مسلمانوں کی سوچ اور آر ایس ایس کی سوچ پر گفتگو کی کی گئی ۔ کتاب کو لے کر آر ایس ایس پرچارک اندریش کمار نے بتایا کہ کتاب اردو ، ہندی اور انگریزی تینوں میں زبانوں میں لائی گئی ہے اور چار جولائی کو شام پانچ بجے رسم اجرا کی تقریب ہوگی ، جس کی صدارت آر ایس ایس سربراہ موہن بھاگوت کریں گے ۔ اندریش کمارنے امید ظاہر کی ہے کہ اس کتاب کے ذریعہ سے دوریاں ختم ہوں گی اور باہمی مذاکرات و گفتگو کا آغاز ہوگی ۔


جبکہ حال ہی میں بھوشیہ کا بھارت موہن بھاگوت کی کتاب کا اردو زبان میں مستقبل کا ہندستان کے نام سے ترجمہ کرنے والے اور قومی اردو کونسل کے ڈائریکٹر شیخ عقیل احمد نے کتاب کو اہم بتایا ہے ۔ شیخ عقیل احمد نے کہا کہ یہ کتاب اہم ہے کیونکہ آر ایس ایس اور حکومت ہند غلط فہمیوں اور دوریوں کا ازالہ کرنے کیلئے پیہم کوشاں ہیں ۔ عقیل احمد نے امید ظاہر کی کہ کتاب ہند و مسلم سماج کی دوریاں ختم کرنے میں معاون ثابت ہوگی اور سب مل کر ملک کی ترقی میں اہم کردار ادا کریں گے ۔

اس کتاب کے بارے میں عام لوگوں میں کافی جوش و خروش پایا جارہا ہے اورکتاب کو آن لائن کافی خریدار مل رہے ہیں ۔ 4 جولائی کو شام 5 بجے سرسنگھ چالک موہن بھاگوت کے آن لائن ریلیز کے بعد کتاب اور بھی مقبول ہوسکتی ہے ۔ تاہم کتاب معاشرے کی غلط فہمیوں کو کتنی مٹا پائے گی یہ توآنے والا وقت بتائے گا کہ کیا یہ ممکن ہوگا یا نہیں ، لیکن کتاب کا آنا ایک اچھی کوشش سمجھی جارہا ہے ۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Jul 02, 2021 11:53 PM IST