உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    چنئی میں بارش اور سیلاب سے ہوئی تباہی کا آگرہ کی جوتا صنعت بھی پر گہرا اثر

    آگرہ : چنئی میں بارش اور سیلاب سے ہوئی تباہی کا اثر آگرہ کی جوتا صنعت پر بھی پڑا ہے۔ محض گزشتہ کچھ دنوں میں شہر کی جوتا صنعت کو 20 سے 30 فیصد تک کا نقصان ہو چکا ہے۔ اس کی سب سے بڑی وجہ چنئی سے چمڑے کی سپلائی ٹھپ ہونا ہے۔ آگرہ کا ہر چھوٹا بڑا جوتا کاروباری اس نقصان کو جھیل رہا ہے۔

    آگرہ : چنئی میں بارش اور سیلاب سے ہوئی تباہی کا اثر آگرہ کی جوتا صنعت پر بھی پڑا ہے۔ محض گزشتہ کچھ دنوں میں شہر کی جوتا صنعت کو 20 سے 30 فیصد تک کا نقصان ہو چکا ہے۔ اس کی سب سے بڑی وجہ چنئی سے چمڑے کی سپلائی ٹھپ ہونا ہے۔ آگرہ کا ہر چھوٹا بڑا جوتا کاروباری اس نقصان کو جھیل رہا ہے۔

    آگرہ : چنئی میں بارش اور سیلاب سے ہوئی تباہی کا اثر آگرہ کی جوتا صنعت پر بھی پڑا ہے۔ محض گزشتہ کچھ دنوں میں شہر کی جوتا صنعت کو 20 سے 30 فیصد تک کا نقصان ہو چکا ہے۔ اس کی سب سے بڑی وجہ چنئی سے چمڑے کی سپلائی ٹھپ ہونا ہے۔ آگرہ کا ہر چھوٹا بڑا جوتا کاروباری اس نقصان کو جھیل رہا ہے۔

    • ETV
    • Last Updated :
    • Share this:

      جمال برنی


      آگرہ : چنئی میں بارش اور سیلاب سے ہوئی تباہی کا اثر آگرہ کی جوتا صنعت پر بھی پڑا ہے۔ محض گزشتہ کچھ دنوں میں شہر کی جوتا صنعت کو 20 سے 30 فیصد تک کا نقصان ہو چکا ہے۔ اس کی سب سے بڑی وجہ چنئی سے چمڑے کی سپلائی ٹھپ ہونا ہے۔ آگرہ کا ہر چھوٹا بڑا جوتا کاروباری اس نقصان کو جھیل رہا ہے۔


      آگرہ میں تقریبا 150بڑی ایسی کمپنیاں ہیں ، جو جوتے تیار کرکے دنیا کے مختلف ممالک میں ایکسپورٹ کرتی ہیں ۔اس کے علاوہ پورے آگرہ میں 10 ہزار سے زیادہ چھوٹی صنعتیں ہیں، جہاں جوتے بنائے جاتے ہیں ۔آگرہ میں یہ کاروبار گزشتہ کئی دہائیوں سے چل رہا ہے۔ یہاں کی 40 فیصد آبادی کی روزی روٹی اسی صنعت سے وابستہ ہے۔لیکن اس تجارت پر آج کل مندی کا سایہ منڈرانے لگا ہے ۔


      چنئی میں بارش اور سیلاب کا سیدھا اثر اس صنعت پر پڑ رہا ہے۔ چنئی سے تمام طرح کا چمڑہ آتا ہے ، اس کے علاوہ ٹیکسن بھی وہیں سے منگوایا جاتا ہے۔جو سول اور اپر کے بیچ میں استعمال کیا جاتا ہے۔چمڑہ ہو یاجوتوں کی تیاری میں استعمال ہونے والے دیگر سامان کی آمد چنئی میں ٹرانسپورٹ ٹھپ ہونے سے پوری طرح سے رک گئی ہے۔


      جن کے پاس پہلے سے اسٹاک موجود ہیں ، وہ تو اپناکام چلا رہے ہیں ، لیکن جن کے پاس سامان کا اسٹاک نہیں ہے ،ان کے سامنے بڑی مشکل پیدا ہوگئی ہے۔ تاجر آڈر پورا نہیں کر پا رہے ہیں۔بڑے تاجر تو اپنا کام کسی طرح سے چلا لے رہے ہیں ، لیکن چھوٹے تاجروں کو تو نقصان کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔


      جوتا تاجر کپل اگروال نے بتایا کہ آگرہ کے جوتا تاجروں کے سامنےچمڑہ نہیں ملنے کی صورت میں کئی طرح کی پریشانیاں پیدا ہوگئی ہیں ۔تاجر آڈر پورا نہیں کر پا رہے ہیں۔بڑے تاجر تو اپنا کام کسی طرح سے پورا کر بھی رہے ہیں


      لیکن چھوٹے تاجروں کو تو نقصان کا سامنا ہے۔لیکن ان کو روزانہ کی مزدوری دینا ضروری ہو جاتا ہے۔ جوتے کے کام سے جڑے روزانہ کمانے والے افراد کو اور بھی مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے ۔سب کو انتظار ہے کہ جلد سے جلد چنئی کی صورت حال میں بہتری آئے ، تاکہ آگرہ میں جوتے کا کاروبار پھر سے پٹری پر لوٹ سکے ۔

      First published: