ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند کا33واں کل ہند کانفرنس دہلی میں

نئی دہلی۔ مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند کا دو روزہ عظیم الشان ۳۳ویں آل انڈیا اہل حدیث کانفرنس بعنوان ’’انسانیت کے فروغ اور پر امن معاشرہ کی تشکیل میں ائمہ و خطباء کا کردار اور ان کے حقوق‘ ‘یہاں 12اور 13مارچ کو رام لیلا گراونڈ میں منعقد کیا جائے گا۔

  • UNI
  • Last Updated: Dec 04, 2015 09:17 AM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند کا33واں کل ہند کانفرنس دہلی میں
نئی دہلی۔ مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند کا دو روزہ عظیم الشان ۳۳ویں آل انڈیا اہل حدیث کانفرنس بعنوان ’’انسانیت کے فروغ اور پر امن معاشرہ کی تشکیل میں ائمہ و خطباء کا کردار اور ان کے حقوق‘ ‘یہاں 12اور 13مارچ کو رام لیلا گراونڈ میں منعقد کیا جائے گا۔

نئی دہلی۔  مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند کا دو روزہ عظیم الشان ۳۳ویں آل انڈیا اہل حدیث کانفرنس بعنوان ’’انسانیت کے فروغ اور پر امن معاشرہ کی تشکیل میں ائمہ و خطباء کا کردار اور ان کے حقوق‘ ‘یہاں 12اور 13مارچ کو رام لیلا گراونڈ میں منعقد کیا جائے گا۔


مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند کے ناظم عمومی مولانا اصغر علی امام مہدی سلفی نے یہ اطلاع دیتے ہوئے بتایا کہ اس کانفرنس میں ملک و بیرون ملک کے مشاہیر علماء کرام، مقررین ، مقالہ نگاران، شعرائے کرام اور اہم ملی و سماجی شخصیات شرکت فرمائیں گی۔  ناظم عمومی نے ۳۳ویں آل انڈیا اہل حدیث کانفرنس اور اس کے مرکزی عنوان کی اہمیت و ضرورت اور مقصد بیان کرتے ہوئے کہاکہ چونکہ ائمہ و خطباء مساجد اسلامی تاریخ کے ہر دور میں ملک و ملت اور انسانیت کی رہنمائی اور اپنی متنوع خدمات کی وجہ سے نمایاں رہے ہیں۔ انہوں نے ہی اللہ کے بندوں کو ایمان و انسانیت کا بھولا ہواسبق یاد دلانے کا کام انجام دیا ہے۔ مخلوق کا اپنے خالق سے رشتہ استوار رکھنے کی تلقین انہیں کے ذریعہ ہوتی رہی ہے اور انسانی حقوق وفرائض کو ادا کرنے کی تلقین و ترغیب بھی یہی دیتے رہے ہیں۔


ناظم عمومی نے کہا کہ اسلام میں ائمہ کی بڑی اہمیت ہے ، معاشرہ میں ان کی بہترین شناخت ہے، عوام کا ان پر بھر پور اعتماد ہے، وہ اپنی عظمت ومقام کو اگر صحیح طور پر سمجھ کر اپنا کردار ادا کرتے ہیں تو بلا تفریق ملک و ملت ان کی باتیں دل کے کانوں سے سنی جاتی ہیں۔ ملک و معاشرہ کی اصلاح و درستگی میں وہ اپنا اہم رول ادا کرتے ہیں اور امن وبھائی چارہ کو فروغ دینے اور پروان چڑھانے میں کلیدی کردار ادا کرتے ہیں ۔ لہذا ملک و معاشرہ کی اصلاح کے تئیں ان کی ذمہ داری ہمہ محسوس کرنی چاہئے۔ خاص طور سے ایسے وقت میں جب کہ ملک و ملت اور انسانیت کو نوع بنوع اخلاقی ومعاشرتی مسائل اور چیلنچز درپیش ہیں۔


First published: Dec 04, 2015 09:17 AM IST