ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

مسلمان کسی قیمت پر دستبردارنہیں ہوگا ، یروشلم کو اسرائیلی راجدھانی قرار دینا سراسر نا انصافی : فلسطینی سفیر

فلسطین کی صورت حال کو دھماکہ خیز قرار دیتے ہوئے فلسطین کے سفیر عدنان محمدجابر ابوالحئی نے کہاکہ امریکی صدر مسٹر ڈونالڈ ٹرمپ کا یروشلم کو اسرائیل کی راجدھانی قرار دینا فلسطین کے ساتھ سراسر ناانصافی ہے

  • UNI
  • Last Updated: Jan 18, 2018 06:15 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
مسلمان کسی قیمت پر دستبردارنہیں ہوگا ، یروشلم کو اسرائیلی راجدھانی قرار دینا سراسر نا انصافی : فلسطینی سفیر
آل انڈیا تنظیم علمائے حق کے زیر اہتمام عالمی امن کانفرنس کا انعقاد ۔ فوٹو : یو این آئی ۔

نئی دہلی : فلسطین کی صورت حال کو دھماکہ خیز قرار دیتے ہوئے فلسطین کے سفیر عدنان محمدجابر ابوالحئی نے کہاکہ امریکی صدر مسٹر ڈونالڈ ٹرمپ کا یروشلم کو اسرائیل کی راجدھانی قرار دینا فلسطین کے ساتھ سراسر ناانصافی ہے۔ یہ بات انہوں نے آج یہاںآل انڈیا تنظیم علمائے حق کے زیر اہتمام منعقدہ عالمی امن کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔ انہوں نے مسجد اقصی سے مسلمانوں کی وابستگی کا اعادہ کرتے ہوئے کہا کہ مسلمان کسی قیمت پر اس سے دستبردار نہیں ہوں گے اور یہ ان کا حق ہے گرچہ اسرائیلی وزیر اعظم بنیامن نیتن یاہو نے اس سلسلے میں اپنی ترجیحات کا اعلان کردیا ہے۔

انہوں نے ہندوستان کی تعریف کرتے ہوئے کہاکہ اس نے قدس کے معاملے میں ہماری حمایت کی ہے اور اس کے لئے ہم ان کے شکرگزار ہیں۔ انہوں نے امید ظاہر کی ہندوستانی حکومت ہماری حمایت جاری رکھے گی۔ انہوں نے عالم اسلام کی بے حسی کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہاکہ مضبوط طور پر یہ معاملہ نہ اٹھانے کی وجہ سے اب تک یہ مسئلہ حل نہیں ہوا ہے اور عالم اسلام نے اس سلسلے صرف اپنی سرگرمی کالم نویسی اور خبر شائع کرنے تک محدود رکھی ہے۔ انہوں نے کہاکہ وقت آگیا ہے کہ عالم اس سلسلے میں متحدہ طور پر اپنا مضبوط کردار ادا کرے۔

اس موقع پر تنظیم علماء حق کے قومی صدر مولانا محمد اعجاز عرفی قاسمی نے پروگرام کی صدارت کرتے ہوئے کہا کہ آج دنیا کو سب سے زیادہ ضرورت امن کی ہے اور پوری دنیا میں انتشار انارکی ظلم اور تشدد کا بازار گرم ہے،ایسا محسوس ہوتا ہے کہ جیسے کائنات کا بڑا حصہ خوف کے حصار میں گرفتار ہے۔ انھوں نے کہا کہ خوف ایک ایسی منفی صورت ہے جس کی وجہ سے انسانی ارتقاء کی ساری راہیں بند ہوجاتی ہیں،تہذیب اور انسانیت کی بقا کی راہ میں خوف ایک بڑی دیواربن جاتی ہے اور اسی خوف کی وجہ سے ملکوں اور قوموں کے درمیان غلط فہمیاں جنم لیتی ہیں اور پھر انہی غلط فہمیوں سے ذہنوں میں جنگ کی کیفیت پیدا ہوتی ہے اور ذہن کی یہ جنگ حقیقی جنگ بن کر انسانی بستیوں کو تباہ وتاراج کردیتی ہے۔

First published: Jan 18, 2018 06:15 PM IST