ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

بابری مسجد کے بدلے دھنی پور میں ملی زمین پر مدینۃ العلوم کے نام سے بنائی جائے یونیورسٹی، آل انڈیا مائنارٹیز فورم فار ڈیموکریسی کا مطالبہ

بابری مسجد ، رام جنم بھومی کے تاریخی مقدمے کے فیصلے کے بعد مسجد کے عوض ایودھیاکے باہر دھنی پور میں ملنے والی پانچ ایکڑ زمین پر تعمیرات کو لے کر مختلف رائے سامنے آرہی ہیں۔

  • Share this:
بابری مسجد کے بدلے دھنی پور میں ملی زمین پر مدینۃ العلوم کے نام سے بنائی جائے یونیورسٹی، آل انڈیا مائنارٹیز فورم فار ڈیموکریسی کا مطالبہ
بابری مسجد ، رام جنم بھومی کے تاریخی مقدمے کے فیصلے کے بعد مسجد کے عوض ایودھیاکے باہر دھنی پور میں ملنے والی پانچ ایکڑ زمین پر تعمیرات کو لے کر مختلف رائے سامنے آرہی ہیں۔

لکھنئو۔ بابری مسجد ، رام جنم بھومی کے تاریخی مقدمے کے فیصلے کے بعد مسجد کے عوض ایودھیاکے باہر دھنی پور میں ملنے والی پانچ ایکڑ زمین پر تعمیرات کو لے کر مختلف رائے سامنے آرہی ہیں۔ حالانکہ سنی سنٹرل وقف بورڈ کی جانب سے بنائے گئے انڈو اسلامک کلچرل فاؤنڈیشن ٹرسٹ کی جانب سے یہ بات واضح کردی گئی ہے کہ مذکورہ زمین پر مسجد کے ساتھ ساتھ، اسپتال، لائبریری، میوزیم کمیونیٹی چکن اور انڈو اسلامک کلچرل ریسرچ سنٹر کی تعمیرات کا منصوبہ ہے۔


ٹرسٹ کے سکریٹری اطہر حسین کے مطابق اس منصوبے کو عملی جامہ پہنانے کے لئے مذکورہ عمارتوں کے طرزِ تعمیر کے سلسلے میں جامعہ کے معروف پروفیسر ماہرِ فنِ تعمیر پروفیسر ایس ایم اختر کی خدمات حاصل کی جارہی ہیں اور جلد ہی کام شروع ہونےکی بات بھی کی جارہی ہے۔ مائنارٹیز فورم فار ڈیموکریسی کے صدر معروف دانشور ڈاکٹر عمار رضوی نے کہا ہے کہ مسلمانوں کو عبادت گاہوں سے زیادہ تعلیمی اداروں کے ضرورت ہے لہٰذا صرف مسجد ہی نہیں ایک یونیورسٹی کا قیام بھی عمل میں آنا چاہیے۔


فورم کی جانب سے یہ تجویز بھی پیش کی گئی ہے کہ جس مقام پر یونیورسٹی مسجد اور دیگر عمارات تعمیر کی جائیں اس کا نام مدینۃ العلوم (city of knowledge)رکھا جائے یا اسے دارالامان ( centre of peace) کا نام دیا جائے۔ ڈاکٹر عمار رضوی نے یہ بھی کہا کہ کچھ لوگ جذباتی ہوکر یہ بھی کہ رہے ہیں کہ اس زمین کو قبول نہیں کرنا چاہئے ، چھوڑ دینا چاہئے۔ ہماری جمہوری ملک میں سب کو اپنی بات کہنے اور اپنا موقف رکھنے کا حق ہے تاہم جذبات کی رو میں کئے گئے فیصلے نقصان کی بنیاد رکھتے ہیں۔ ان سے بڑا خسارہ ہوتا ہے ،عدالت عظمیٰ نے جو فیصلہ کردیا اب اسی پر عمل کرتے ہوئے بہترین اور معنی خیز مستقبل کی تعمیرات کو یقینی بنانا چاہئے۔ انڈو اسلامک کلچرل ٹرسٹ کے سکربٹری نے امید ظاہر کی ہے کہ ضروری فنڈ کی فراہمی کے ساتھ ساتھ ہی جلد تعمیراتی کام شروع کردیا جائے گا۔

Published by: sana Naeem
First published: Sep 03, 2020 03:19 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading