உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    راجناتھ کی قیادت میں کل جماعتی وفد پہنچا کشمیر، متعلقین کے ساتھ بات چیت شروع

    مرکزی وزیر داخلہ راجناتھ سنگھ کی قیادت میں اتوار کو 30 رکنی کل جماعتی وفد گرمائی دارالحکومت سری نگر پہنچا۔ یہ وفد وادی میں گذشتہ 57 روز سے جاری کشیدگی کو ختم کرنے کے لئے مختلف طبقہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والے افراد بالخصوص مختلف تنظیموں کے نمائندوں سے ملاقات کرے گا۔

    مرکزی وزیر داخلہ راجناتھ سنگھ کی قیادت میں اتوار کو 30 رکنی کل جماعتی وفد گرمائی دارالحکومت سری نگر پہنچا۔ یہ وفد وادی میں گذشتہ 57 روز سے جاری کشیدگی کو ختم کرنے کے لئے مختلف طبقہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والے افراد بالخصوص مختلف تنظیموں کے نمائندوں سے ملاقات کرے گا۔

    مرکزی وزیر داخلہ راجناتھ سنگھ کی قیادت میں اتوار کو 30 رکنی کل جماعتی وفد گرمائی دارالحکومت سری نگر پہنچا۔ یہ وفد وادی میں گذشتہ 57 روز سے جاری کشیدگی کو ختم کرنے کے لئے مختلف طبقہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والے افراد بالخصوص مختلف تنظیموں کے نمائندوں سے ملاقات کرے گا۔

    • UNI
    • Last Updated :
    • Share this:
      سری نگر : مرکزی وزیر داخلہ راجناتھ سنگھ کی قیادت میں اتوار کو 30 رکنی کل جماعتی وفد گرمائی دارالحکومت سری نگر پہنچا۔ یہ وفد وادی میں گذشتہ 57 روز سے جاری کشیدگی کو ختم کرنے کے لئے مختلف طبقہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والے افراد بالخصوص مختلف تنظیموں کے نمائندوں سے ملاقات کرے گا۔ اس وفد میں 20 سے زائد سیاسی جماعتوں کے 30 اراکین اور بعض سینئر سرکاری افسران بھی شامل ہیں۔
      وفد نے سب سے پہلے ریاستی وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی کے ساتھ ملاقات کرکے وادی کی موجودہ صورتحال کے باری میں جانکاری حاصل کی۔ نوڈل ایجنسی کی جانب سے جاری کردہ شیڈول کے مطابق کل جماعتی وفد شہرہ آفاق ڈل جھیل کے کناروں پر واقع شیر کشمیر انٹرنیشنل کنونشن کمپلیکس (ایس کے آئی سی سی) میں صبح گیارہ بجے سے سہ پہر ساڑھے چار بجے تک اور 5 ستمبر کو صبح نو بجے سے صبح ساڑھے گیارہ بجے تک مختلف سیاسی جماعتوں کے نمائندوں اور افراد سے ملاقات کرے گا۔
      وفد کل جموں جاکر وہاں سیاسی جماعتوں کے نمائندوں اور دیگر تنظیموں کے اراکین کے ساتھ ملاقات کرے گا۔ سری نگر روانہ ہوتے ہوئے وزیر داخلہ مسٹر راجناتھ نے اپنے ایک ٹویٹ میں کہا ’کل جماعتی وفد کے ساتھ سری نگر جارہا ہوں۔ ہم اُن افراد اور گروپوں کے ساتھ بات چیت کا ارادہ رکھتے ہیں جو وادی کشمیر میں امن اور معمول کے حالات چاہتے ہیں‘۔
      وفد میں شامل اراکین میں وزیر خزانہ ارون جیٹلی، امور صارفین و عوامی تقسیم کاری کے وزیر رام ولاس پاسوان ، ڈاکٹر جتیندر سنگھ ، سینئر کانگریس لیڈران غلام نبی آزاد، ملک ارجن کھرگے، امبیکا سونی، آل انڈیا مجلس اتحاد المسلمین کے سربراہ اسد الدین اویسی، سی پی آئی ایم کے جنرل سکریٹری سیتا رام یچوری ، سی پی آئی لیڈر ڈی راجا اور جے ڈی یو لیڈر شرد یادیو کے نام قابل ذکر ہیں۔
      اگرچہ کل جماعتی وفد کی آمد کا مقصد کشمیر میں امن وامان کی بحالی کے لئے یہاں مختلف طبقہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والے افراد بالخصوص مختلف تنظیموں کے نمائندوں سے ملاقات کرکے تجاویزات حاصل کرنا ہے، تاہم مبصرین کے مطابق اہم متعلقین بشمول حریت کانفرنس اور تجارتی انجمنوں کی جانب سے وفد کا بائیکاٹ کرنے کے اعلان کے بعد دورے کے ثمرآور ثابت ہونے کے امکانات مخدوش ہوگئے ہیں۔
      کشمیر میں سب سے بااثر مانے جانے والے علیحدگی پسند راہنما سید علی گیلانی نے کل جماعتی وفد سے ملاقات کے بائیکاٹ کی اپیل جاری کرتے ہوئے کہا ہے ’ایسی وفود کے پاس نہ کوئی منڈیٹ حاصل ہوتا ہے اور نہ مسئلہ جموں وکشمیر کو حل کرنے کی کوئی نیت ہوتی ہے‘۔ ریاستی وزیر اعلیٰ محترمہ مفتی نے گذشتہ شام بحیثیت پیپلز ڈیموکریٹک پارٹی صدر علیحدگی پسند رہنماؤں اور کچھ مذہبی تنظیموں کے نام ایک کھلا خط لکھ کر اُن سے کل جماعتی وفد کے ساتھ ملاقات کرنے کی گذارش کی۔
      First published: