ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

مسلم سپاہی کو داڑھی رکھنے کی اجازت پر حتمی فیصلہ کریں گے ایس پی : الہ آباد ہائی کورٹ

الہ آباد ہائی کورٹ نے مسلم سپاہی کو پولیس کی ڈیوٹی میں رہتے ہوئے داڑھی رکھنے کے معاملے میں ایس پی بجنور کو 2 ماہ میں اصولوں کے مطابق فیصلے کرنے کی ہدایت دی ہے۔

  • Share this:
مسلم سپاہی کو داڑھی رکھنے کی اجازت پر حتمی فیصلہ کریں گے ایس پی : الہ آباد ہائی کورٹ
الہ آباد ہائی کورٹ نے مسلم سپاہی کو پولیس کی ڈیوٹی میں رہتے ہوئے داڑھی رکھنے کے معاملے میں ایس پی بجنور کو 2 ماہ میں اصولوں کے مطابق فیصلے کرنے کی ہدایت دی ہے۔

الہ آباد : الہ آباد ہائی کورٹ نے مسلم سپاہی کو پولیس کی ڈیوٹی میں رہتے ہوئے داڑھی رکھنے کے معاملے میں ایس پی بجنور کو 2 ماہ میں اصولوں کے مطابق فیصلے کرنے کی ہدایت دی ہے۔ درخواست گزار کے وکیل کا کہنا تھا کہ 10 اکتوبر 1985 کے سرکلر سے افسر کی اجازت سے مسلم ملازم کو داڑھی رکھنے کا حق ہے۔

قابل ذکر ہے کہ جسٹس پی کے ایسبگھیل نے پولیس لائن میں تعینات نعیم احمد کی درخواست کا ازالہ کرتے ہوئے یہ فیصلہ سنایا ۔ تاہم اس میں یوگی حکومت کوئی نیا قانون نہیں لا رہی ہے ، صرف پرانا قانون ہی نافذ کیا جا سکتا ہے۔

الہ آباد ہائی کورٹ نے آخری فیصلہ محکمہ پولیس کے افسران پر ہی چھوڑدیا ہے کہ وہ کس مسلمان سپاہی کو داڑھی رکھنے کی اجازت دیتے ہیںاور کسے نہیں ؟ یعنی کہ داڑھی رکھنے کی یہ ایک شرط ہے کہ داڑھی رکھنے کے لئے کپتان کی اجازت لینی ہو گی۔

First published: May 07, 2017 04:11 PM IST