உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    مسلم Dead Body کو محفوظ رکھنے کے یہ طریقے کئے جا رہے ہیں استعمال

     ان کا کہنا ہے کہ ایک باڈی چلر تابوت پر تین لاکھ روئپے سے زیادہ کا خرچ آتا ہے۔ فی الحال تین باڈی چلر تابوت فراہم کئے جا رہے ہیں اور جلد ہی شہر کے قبرستانوں اور بڑی مساجد میں ڈیڈ باڈی چلرس مہیا کرا دئے جائیں گے۔

    ان کا کہنا ہے کہ ایک باڈی چلر تابوت پر تین لاکھ روئپے سے زیادہ کا خرچ آتا ہے۔ فی الحال تین باڈی چلر تابوت فراہم کئے جا رہے ہیں اور جلد ہی شہر کے قبرستانوں اور بڑی مساجد میں ڈیڈ باڈی چلرس مہیا کرا دئے جائیں گے۔

    ان کا کہنا ہے کہ ایک باڈی چلر تابوت پر تین لاکھ روئپے سے زیادہ کا خرچ آتا ہے۔ فی الحال تین باڈی چلر تابوت فراہم کئے جا رہے ہیں اور جلد ہی شہر کے قبرستانوں اور بڑی مساجد میں ڈیڈ باڈی چلرس مہیا کرا دئے جائیں گے۔

    • Share this:
    الہ آباد: مسلم گھروں میں ہونے والی اموات کے وقت سب سے بڑا مسئلہ یہ ہوتا ہے کہ دوردراز رہنے والے قریبی رشتہ داروں کے انتظار کی مدت میں میت کو خراب ہونے سے کس طرح بچایا جائے۔ ایسے تکلیف دہ موقع پر میت کے خراب ہونے کا خطرہ بنا رہتا ہے ۔ عام طور سے محلے کی مساجد میں میت کے لیے روایتی گہوارے ہوتے ہیں جو ڈیڈ باڈی کو دیر تک محفوظ رکھنے میں ناکافی ہوتے ہیں۔ الہ آباد کے قبرستانوں کی جدید کاری کی مہم چلانے والے روٹری کلب نے اب اس سلسلے میں ایک بڑا قدم اٹھایا ہے۔ روٹری کلب اکاڈمی نے قبرساتوں کو جدید ترین ڈیڈ باڈی چلرس تابوتوں کا عطیہ دیا ہے ۔

    الہ آباد میں منعقد ہونے والی ایک تقریب کے دوران ڈیڈ باڈی Dead Body چلرس مساجد کے ذمہ داران کو سونپے گئے ۔ ڈیڈ باڈی چلرس کی سہولیات مہیا ہونے سے دور دراز رہنے والے رشتہ دار میت کا آخری دیدار کر سکیں گے ۔ تقریب کے دوران روٹری کلب کے علاقائی صدر سمر راج گرگ نے کہا کہ شہر کے پرانے علاقوں میں ڈیڈ باڈی چلرس نہ ہونے کی وجہ سے میت کو زیادہ دیر تک محفوظ رکھنا ممکن نہیں ہوتا تھا جس کی وجہ سے میت کے رشتہ دار اس کا آخری دیدار نہیں کر پاتے تھے ۔ سمر راج گرگ کا کہنا تھا کہ جدید ترین تابوت مہیا ہونے کے بعد اب لوگوں کو اس طرح کی مشکلات کا سامنا نہیں کرنا پڑے گا۔

    یہ بھی پڑھئے: Pakistan: ہر ہفتے دلہن بن کر تیار ہوتی ہے یہ خاتون، 16سال سے چل رہا ہے عجیب و غریب سلسلہ!

    OMG! یہاں بچیوں کے باندھ دئے جاتے تھے پاؤں، بھیانک درد دیکر مردوں کو خوش کرنا تھی وجہ....


    الہ آباد روٹری اکاڈمی کے صدر طارق خان کا کہنا ہے کہ شہر کی تمام بڑی مساجد میں ڈیڈ باڈی چلر تابوت جلد ہی مہیا کرائے جائیں گے۔ ان کا کہنا ہے کہ ایک باڈی چلر تابوت پر تین لاکھ روئپے سے زیادہ کا خرچ آتا ہے۔ فی الحال تین باڈی چلر تابوت فراہم کئے جا رہے ہیں اور جلد ہی شہر کے قبرستانوں اور بڑی مساجد میں ڈیڈ باڈی چلرس مہیا کرا دئے جائیں گے۔
    Published by:Sana Naeem
    First published: