உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    مبینہ ہجومی تشدد معاملہ: یونائٹیڈ اگینسٹ ہیٹ کرے گی آفتاب کے اہل خانہ کی قانونی مدد

    مبینہ ہجومی تشدد معاملہ: یونائٹیڈ اگینسٹ ہیٹ کرے گی آفتاب کے اہل خانہ کی قانونی مدد

    مبینہ ہجومی تشدد معاملہ: یونائٹیڈ اگینسٹ ہیٹ کرے گی آفتاب کے اہل خانہ کی قانونی مدد

    گزشتہ اتوار کے دن دہلی کی ترلوک پوری میں رہنے والے ڈرائیورکو بلند شہر سے دہلی کے راستہ میں قتل کرنے کا خوفناک معاملہ سامنے آیا تھا۔ اس معاملہ میں بادل پور تھانہ، ضلع گوتم بدھ نگر ،گریٹر نوئیڈا میں مقدمہ درج کرلیا گیا ہے۔اس معاملہ میں متاثرہ خاندان کی مدد کے لئے سماجی تنظیم یونائٹیڈ اگینسٹ ہیٹ سامنے آئی ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Share this:
    نئی دہلی۔ گزشتہ اتوار کے دن دہلی کی ترلوک پوری میں رہنے والے ڈرائیورکو بلند شہر سے دہلی کے راستہ میں قتل کرنے کا خوفناک معاملہ سامنے آیا تھا۔ اس معاملہ میں بادل پور تھانہ، ضلع گوتم بدھ نگر ،گریٹر نوئیڈا میں مقدمہ درج کرلیا گیا ہے۔اس معاملہ میں متاثرہ خاندان کی مدد کے لئے سماجی تنظیم یونائٹیڈ اگینسٹ ہیٹ سامنے آئی ہے۔ یو ایم ایف کی دو رکنی ٹیم نے متاثرہ خاندان سے ملاقات کی اور انھیں مدد کی یقین دہانی کرائی۔ خاص طور پر قانونی مدد کی پیشکش کی۔

    اس معاملہ میں بادل پور تھانہ میں قتل اور ڈکیتی کی دفعات 394 اور 302کے تحت مقدمہ درج کیا گیا ہے اور پولیس قاتلوں کی تلاش کر رہی ہے۔ تاہم اب اہل خانہ کو اندیشہ ہے کہ کیس کو بلند شہر ضلع ہونے کے باعث منتقل کیا جاسکتا ہے۔ اس معاملہ میں آفتاب کے بیٹے صابر آفتاب کی حاضر دماغی کو بھی دیکھا جانا چاہیے کیونکہ جب آفتاب کو اپنے ساتھ گڑبڑی ہونے کا شک ہوا تھا تو انھوں نے صابرکو فون کال کیا تھا اورموبائل اپنی جیب میں رکھ لیا تھا جس کو صابر نے ریکارڈ کرلیا ۔موقع پر ہونے والی گفتگو ریکارڈ ہوتی رہی اور 41منٹ کی ریکارڈنگ ہوئی۔ صابر کا کہنا ہے کہ ان کے والد آفتاب کو نہ صرف شراب پلانے کی کوشش کی گئی بلکہ جے شری رام کا نعرہ لگانے کے لئے کہا گیا جس سے انکار کرنے پر انھیں قتل کردیا گیا۔

    میور وہار تھانہ میں دی گئی تحریر کے مطابق آفتاب اتوار کے دن بلند شہر سے دہلی واپس آرہے تھے۔ راستہ میں چار لوگوں نے ان سے لفٹ لیا اور راستہ میں نفرت بھری باتیں کرنے لگے ۔مسلم طبقہ کو برا بھلا کہنے لگے۔ رات میں تقریبا پونے آٹھ بجے آفتاب نے بیٹے صابرکو فون کیا جس کے بعد ساری باتیں ریکارڈ ہوتی رہیں۔ یہ پوری ریکارڈنگ بادل پور پولیس کو دے دی گئی ہے۔ صابر کی بروقت شکایت کی وجہ سے موقع سے موبائل لوکیشن کی بنیاد پر لاش کو ڈھونڈ لیا گیا اور بعدمیں آفتاب کی تدفین کردی گئی۔

    صابر آفتاب بننا چاہتے ہیں ڈاکٹر

    آفتاب کے اہل خانہ میں آفتاب کی والدہ نجم النساء، بیٹے صابر آفتاب ، ساجد آفتاب ، شاہد آفتاب اور اہلیہ ریحانہ خاتون ہیں۔ تاہم بڑے بیٹے صابر آفتاب پڑھنے لکھنے میں کافی ہونہار ہیں۔ وہ میڈیکل کے مقابلہ جاتی امتحان نیٹ کی تیاری کررہے ہیں۔ ان کے تعلیمی ریکارڈ میں صابر گریجویشن مکمل کرنے والے ہیں جبکہ ایک بیٹا گریجویشن میں ہے۔ بارہویں میں صابر نے 92فیصد نمبرات حاصل کئے ہیں۔ اہل خانہ بتاتے ہیں کہ آفتاب بچوں کی بہت حوصلہ افزائی کرتے تھے۔ اخبار لاتے تھے اور حوصلہ افزائی کرنے والی اسٹوری سنایا کرتے تھے۔
    Published by:Nadeem Ahmad
    First published: