ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

کورونا وائرس کے وقت بھی فرقہ واریت اور نفرت کا وائرس پھیلا رہی ہے بی جے پی: سونیا گاندھی

کانگریس کی عبوری صدر سونیا گاندھی نے الزام لگایا کہ جب ملک میں کورونا وائرس کے خلاف سبھی کو متحد ہونے کی ضرورت ہے تو بھارتیہ جنتا پارٹی فرقہ وارانہ تعصب اور نفرت کا وائرس پھیلانے میں لگی ہوئی ہے۔

  • Share this:
کورونا وائرس کے وقت بھی فرقہ واریت اور نفرت کا وائرس پھیلا رہی ہے بی جے پی: سونیا گاندھی
سونیا گاندھی

نئی دہلی۔ کانگریس (Congress) کی عبوری صدر سونیا گاندھی (Sonia Gandhi) نے جمعرات کو الزام لگایا کہ جب ملک میں کورونا وائرس (Coronavirus) کے خلاف سبھی کو متحد ہونے کی ضرورت ہے تو بھارتیہ جنتا پارٹی فرقہ وارانہ تعصب اور نفرت کا وائرس پھیلانے میں لگی ہوئی ہے۔


بی جے پی پر نشانہ سادھتے ہوئے انہوں نے کہا ’’ میں آپ لوگوں کے ساتھ وہ بات ساجھا کرنا چاہتی ہوں جس کو لے کر ہم سبھی ہندوستانی شہریوں کو فکر کرنی چاہئے۔ جب ہمیں کورونا وائرس کا متحد ہو کر مقابلہ کرنا چاہئے تو بی جے پی فرقہ وارانہ تعصب اور نفرت کا وائرس پھیلانے میں لگی ہوئی ہے‘‘۔ انہوں نے کہا ’ ہماری سماجی ہم آہنگی کو بڑا نقصان پہنچایا جا رہا ہے۔ ہماری پارٹی کو اور ہمیں اس نقصان کی تلافی کے لئے کڑی محنت کرنی ہو گی‘۔



سونیا گاندھی نے کہا کہ مکمل لاک ڈاؤن ضروری ہے لیکن یہ اس بیماری سے نجات کا محض ایک طریقہ ہے۔ اصل لڑائی ٹیسٹ اور طبی سہولت بڑھانے سے ہی لڑی جانی ہے۔ اس بارے میں وہ حکومت کو مسلسل مشورہ دیتی رہی ہیں لیکن ان کی تجاویز کو اہمیت نہیں دی گئی جس کی وجہ سے صورت حال مزید خراب ہو رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ کورونا کی وجہ سے ملک کی معیشت بری طرح متاثر ہورہی ہے اور لاک ڈاؤن کے پہلے مرحلے میں ہی 12 کروڑ سے زیادہ لوگوں کے سامنے روزی روٹی کا بحران پیدا ہو گیا تھا۔ ملک میں تقریباً 11 کروڑ چھوٹی، بہت چھوٹی اور درمیانی درجے کی صنعتیں بند ہو چکی ہیں اور انہیں بچانے کے لئے سخت اقدامات کرنے کی ضرورت ہے۔ ان صنعتوں کو بند ہونے سے مجموعی گھریلو پیداوار(جی ڈی پی) کی شرح کو بہت بڑا خسارہ ہوگا۔



سونیا گاندھی نے کہا کہ مکمل لاک ڈاؤن کی وجہ سے کسانوں کو سنگین مسائل کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ کسانوں کی پیداوار کے تعلق سے حکومت کی پالیسی واضح نہیں ہے جس کی وجہ سے سپلائی چین کے بری طرح متاثر ہونے کے خدشے میں اضافہ ہوگیا ہے جس پر فوری طور پر توجہ دینے کی ضرورت ہے۔ کسان کو خریف کی فصل میں کسی طرح کا نقصان نہ اٹھانا پڑے اس کے لئے حکومت کو ان کے مسائل کو سلجھانا ضروری ہے۔

غریبوں کے کھاتے میں حکومت بھیجے  7500 روپئے

دوسری ریاستوں کے محنت کشوں کے مسائل کا ذکر کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ان کے مسئلہ پر توجہ نہیں دی جا رہی ہے اور لاک ڈاؤن کی وجہ سے کام نہ ملنے کی وجہ سے انہیں کافی ساری پریشانیوں کا سامنا کرنا پڑرہا ہے اور وہ اپنے گھروں کو لوٹنا چاہتے ہیں۔ ان کے سامنے غذائی بحران بڑھ گیا ہے لہذا حکومت کو ان کے لئے کھانے کا بندوبست کرنے کے ساتھ ہی انہیں مالی مدد بھی دینی چاہئے۔ اس سلسلے میں حکومت کو تمام غریبوں کے کھاتوں میں فوری طور پر 7500 روپے ڈالنے چاہئں۔

کانگریس لیڈر نے اس بیماری سے بچاؤ کے ضروری آلات کی کمی کے باوجود بھی لوگوں کی خدمت کر رہے میڈیکل اسٹاف کے تئیں اظہار تشکر کیا اور کہا کہ ان کی وجہ سے ہی ہم کورونا کے خلاف لڑائی کو مضبوطی سے لڑ پا رہے ہیں۔ انہوں نے بحران کی اس گھڑی میں رضاکار تنظیموں اور معاشرے کے دیگر طبقات کا شکریہ ادا کیا جو متاثرین کو راحت پہنچانے کے لئے دن رات ایک کئے ہوئے ہیں۔

یو این آئی، اردو کے ان پٹ کے ساتھ
First published: Apr 23, 2020 04:01 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading