ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

کسانوں کے مظاہرے کے پیش نظر سنگھو اور ٹیکری سرحد ٹریفک کے لئے اب بھی بند

ٹریفک پولیس نے دہلی اور ہریانہ کے ان سبھی داخل ہونے والے راستوں کے سلسلے میں بھی معلومات دی ہے جو ٹریفک کے لئے کھلے رہیں گے۔ ان میں بڈوسرائے اور جھاٹیکرا پر صرف دوپہیہ گاڑیوں کی آمدو رفت کی اجازت دی گئی ہے۔

  • UNI
  • Last Updated: Dec 01, 2020 03:19 PM IST
  • Share this:
کسانوں کے مظاہرے کے پیش نظر سنگھو اور ٹیکری سرحد ٹریفک کے لئے اب بھی بند
زرعی قوانین کے خلاف سنگھو بارڈر پر کسان احتجاج کرتے ہوئے۔ فوٹو: پی ٹی آئی

نئی دہلی۔ زراعت سے متعلق تین نئے قوانین کے خلاف کسانوں کے مظاہرے کے پیش نظر دہلی کو ہریانہ سے جوڑنے والی سنگھو اور ٹیکری سرحد فی الحال بند رہیں گی۔ دہلی ٹریفک پولیس نے منگل کی صبح اس سلسلے میں نوٹیفکیشن جاری کرکے گاڑی ڈرائیوروں کو پریشانی سے بچنے کے لئے ان سرحدوں تک آنے والے راستوں کے بجائے دوسرے راستے اپنانے کی صلاح دی ہے۔


ٹریفک پولیس نے دہلی اور ہریانہ کے ان سبھی داخل ہونے والے راستوں کے سلسلے میں بھی معلومات دی ہے جو ٹریفک کے لئے کھلے رہیں گے۔ ان میں بڈوسرائے اور جھاٹیکرا پر صرف دوپہیہ گاڑیوں کی آمدو رفت کی اجازت دی گئی ہے۔ پولیس کے ذریعہ جاری نوٹیفکیشن کے مطابق جھرودا ،دھنسا ،دورالا،کاپس ہیڑا،رجوری شاہراہ نمبر 8 بجواسن / بجگھیڑٓ،پالم وہار اور ڈونڈا ہیڑا سرحد پر گاڑیوں کی آمدورفت جاری رہے گی۔



ٹریفک پولیس نے ٹویٹ کرے کہا،’’سنگھو سرحد اب بھی ٹریفک کے لئے دونوں طرف سے بند ہے۔ برائے مہربانی متبادل راستے چنیں۔ ٹریفک کو مکربا چوک اور جی ٹی کرنال روڈ کی طرف سے منتقل کیا گیا ہے۔ ٹریفک بہت زیادہ ہے۔ برائے مہربانی سگنیچر برج سے روہنی اور روہنی سے سگنیچر برج تک بیرونی رنگ روڈ، جی تی کرنال روڈ،این ایچ 44 اور سندھو سرحد تک جانے سے بچیں۔‘‘


ٹریفک پولسی نے ایک دیگر ٹویٹ میں کہا،’’ٹیکری بارڈر کسی بھی طرح کے ٹریفک کےلئے بند ہے۔ ہریانہ جانے اور ہریانہ سے آنے کے لئے جھروڈا ،دھنسا ،دورلا،جھٹکیرا،بڈو سرائے،کاپس ہیڑا ،راجوری این ایچ -8 ،بجواسن / باجگیرا،پالم وہار اور ڈونڈگیکا کی سرحدیں کھلی ہوئی ہیں۔ واضح رہے کہ زراعت سے متعلق نئے قوانین کے خلاف کسانوں کے مظاہرے کی وجہ سے سنگھو  اور ٹیکری بارڈر پر ٹریفک متاثر ہوا ہے۔
Published by: Nadeem Ahmad
First published: Dec 01, 2020 03:18 PM IST