ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

علی گڑھ مسلم یونیورسیٹی اقلیتی ادارہ نہیں، یونیورسیٹی ریزرویشن کی پالیسی پر عمل کرے: آر ایس ایس

نئی دہلی۔ آر ایس ایس نے علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کے اقلیتی ادارہ نہ ہونے کی بات پر زور دیتے ہوئے کہا کہ یونیورسٹی درج فہرست ذات، درج فہرست قبائل اور دیگر پسماندہ طبقوں کے لیے ریزرویشن کی پالیسی نافذ نہ کر ایک 'بڑا جرم' کر رہی ہے۔

  • IBN Khabar
  • Last Updated: Jun 19, 2016 10:19 AM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
علی گڑھ مسلم یونیورسیٹی اقلیتی ادارہ نہیں، یونیورسیٹی ریزرویشن کی پالیسی پر عمل کرے: آر ایس ایس
نئی دہلی۔ آر ایس ایس نے علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کے اقلیتی ادارہ نہ ہونے کی بات پر زور دیتے ہوئے کہا کہ یونیورسٹی درج فہرست ذات، درج فہرست قبائل اور دیگر پسماندہ طبقوں کے لیے ریزرویشن کی پالیسی نافذ نہ کر ایک 'بڑا جرم' کر رہی ہے۔

نئی دہلی۔ آر ایس ایس نے علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کے اقلیتی ادارہ نہ ہونے کی بات پر زور دیتے ہوئے کہا کہ یونیورسٹی درج فہرست ذات، درج فہرست قبائل اور دیگر پسماندہ طبقوں کے لیے ریزرویشن کی پالیسی نافذ نہ کر ایک 'بڑا جرم' کر رہی ہے۔


آر ایس ایس کے جوائنٹ سیکرٹری جنرل کرشن گوپال نے کہا کہ اے ایم یو کے اقلیتی ادارہ کے درجے پر این ڈی اے حکومت کا رخ یو پی اے حکومت کو چھوڑ کر باقی پیشرو حکومتوں کے موقف اور 1968 میں آئے سپریم کورٹ کے ایک حکم کے مطابق ہے۔


این ڈی اے حکومت نے اس سال اپریل میں سپریم کورٹ سے کہا تھا کہ وہ اے ایم یو کو غیر اقلیتی ادارہ قرار دینے کے الہ آباد ہائی کورٹ کے فیصلے کو چیلنج کرنے کے لئے پیشرو یو پی اے حکومت کی طرف سے دائر پٹیشن واپس لے گی۔


گوپال نے کہا کہ مرکز کا رخ وہی ہے جو مولانا آزاد، (اس وقت انسانی وسائل کی ترقی کے وزیر) ایم سی چھاگلا اور نورالحسن کا رخ تھا۔ اس وقت تینوں (اس وقت) وزیر اعظم جواہر لال نہرو، لال بہادر شاستری اور اندرا گاندھی بھی وہاں تھے۔ ہمارا رخ سپریم کورٹ کے فیصلے جیسا ہے۔ ہم نے فیصلے کو نہیں بدلا، یو پی اے نے 2005 میں ایسا کیا تھا۔

انہوں نے کہا کہ اس وجہ سے موجودہ مرکزی حکومت نے کوئی نیا فیصلہ نہیں لیا ہے۔ انہوں نے وہی فیصلہ لیا جو 1968 میں سپریم کورٹ کے پانچ ججوں کی ایک بنچ نے دیا تھا۔ ایسا ہی فیصلہ آئین ساز اسمبلی نے لیا تھا جس میں ڈاکٹر بابا صاحب امبیڈکر، مولانا آزاد اور کئی مسلم رہنما شامل تھے۔ گوپال 'قومی ریزرویشن پالیسی اور علی گڑھ مسلم یونیورسٹی' کے موضوع پر منعقد ایک ورکشاپ میں بول رہے تھے جس میں بی جے پی کے کئی رہنما اور رکن اسمبلی موجود تھے۔
First published: Jun 19, 2016 10:12 AM IST